ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جموں کے جگتی مائگریشن کیمپ میں کشمیری پنڈتوں کا احتجاج گزشتہ دو سو دن سے جاری ، جانئے کیا ہے وجہ

Jammu News : احتجاجی دھرنے پر بیٹھے کشمیری پنڈت مطالبہ کر رہے ہیں کہ ان کے ماہانہ ریلیف میں اضافہ کیا جائے ، ان کی گھر واپسی کیلئے ایک ایکشن پلان ترتیب دیا جائے اور ہر گھر کے ایک فرد کو سرکاری نوکری فراہم کی جائے ۔

  • Share this:
جموں کے جگتی مائگریشن کیمپ میں کشمیری پنڈتوں کا احتجاج گزشتہ دو سو دن سے جاری ، جانئے کیا ہے وجہ
جموں کے جگتی مائگریشن کیمپ میں کشمیری پنڈتوں کا احتجاج گزشتہ دو سو دن سے جاری ، جانئے کیا ہے وجہ

جموں : جموں کے جگتی مائیگریشن کیمپ میں کشمیری پنڈتوں کا احتجاج لگاتار جاری ہے اور اپنی مانگوں کو لے کر یہ کشمیری پنڈت دو سو دنوں سے احتجاج پر ہیں ۔ تیس سال پہلے اپنا گھر بار چھوڑنے کے بعد یہ کشمیری پنڈت ملک کے کئی حصوں میں کسمپرسی کی حالت میں جلاوطنی کے دن گزار رہے ہیں ۔ ایک جانب ان کشمیری پنڈتوں کو جلاوطنی کا درد کافی لمبے وقت سے ستا رہا ہے ۔ وہیں ان کشمیری پنڈتوں کو مائیگرینٹوں کے لئے بنائے گئے کیمپوں میں شدید مشکلات کا سامنا ہے ۔ اس بات میں بھی کوئی شک نہیں کہ ان مائیگرینٹ کیمپوں میں بنیادی سہولیات کا بھی فقدان ہے ۔


احتجاجی دھرنے پر بیٹھے کشمیری پنڈت مطالبہ کر رہے ہیں کہ ان کے ماہانہ ریلیف میں اضافہ کیا جائے ، ان کی گھر واپسی کیلئے ایک ایکشن پلان ترتیب دیا جائے اور ہر گھر کے ایک فرد کو سرکاری نوکری فراہم کی جائے ۔ قابل ذکر بات یہ ہے کہ جب سال دو ہزار چودہ میں مودی سرکاری بر سر اقتدار آئی تھی ، اس وقت ان کشمیری پنڈتوں کو یہ امید تھی کہ مودی سرکار ترجیحی بنیادوں پر ان کے تمام مسائل حل کرے گی ، لیکن تلخ حقیقت یہی ہے کہ ان کشمیری پنڈتوں کے ہاتھ آج تک صرف مایوسی لگی ۔ کشمیری پنڈتوں کا ایک گروپ شادی لال پنڈتا کی قیادت میں لگاتار سرکار سے یہ مطالبہ کر رہا ہے کہ ان کی گھر واپسی اور باز آبادکاری کے لئے ایک ٹھوس منصوبہ بنایا جائے ۔


شادی لال پنڈت کے مطابق آج کے مہنگائی کے دور میں ایک کنبے کو تیرہ ہزار روپے ماہانہ ملتے ہیں اور اتنی قلیل رقم میں ان کا گزارا نہیں ہوتا ۔ شادی لال کے مطابق انہیں مودی حکومت سے کافی ساری امیدیں وابستہ تھیں ، لیکن آج تک ان کے ہاتھ کچھ نہیں لگا ۔ شادی لال پنڈتا کو اس بات کی بھی ناراضگی ہے کہ ایک جانب ان کے احتجاج کے دو سو دن پورے  ہوگئے ، لیکن آج تک کوئی حکومتی نمائندہ ان سے ملنے نہیں آیا ۔


شادی لال پنڈتا کا کہنا تھا کہ اب وقت آگیا ہے کہ حکومت محض کاغذی گھوڑے دوڑانے کی بجائے ان کے مطالبات پر سنجیدگی سے غور و خوض کرے ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Apr 01, 2021 08:54 PM IST