உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    آر آئی ایم ٹی کالج کے بی ایس سی ریڈیالوجی کے طالب علم عمر احمد کی لاش کو پہنچایا گیا آبائی گھر، علاقے میں بچھا صف ماتم

    آر آئی ایم ٹی کالج لدھیانہ پنجاب میں وسطی کشمیر کے ضلع بڈگام کے چیو ڈارہ بیروہ سے تعلق رکھنے بی ایس سی ریڈیالوجی کے طالب علم عمر احمد دیو نے خود کشی کرنے سے پہلے ایک نوٹ چھوڑا ہے جس میں انہوں نے اپنے ذہنی دباؤ میں آکر خودکشی سے متعلق لکھا ہے۔

    آر آئی ایم ٹی کالج لدھیانہ پنجاب میں وسطی کشمیر کے ضلع بڈگام کے چیو ڈارہ بیروہ سے تعلق رکھنے بی ایس سی ریڈیالوجی کے طالب علم عمر احمد دیو نے خود کشی کرنے سے پہلے ایک نوٹ چھوڑا ہے جس میں انہوں نے اپنے ذہنی دباؤ میں آکر خودکشی سے متعلق لکھا ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Share this:
    آر آئی ایم ٹی کالج لدھیانہ پنجاب میں وسطی کشمیر کے ضلع بڈگام کے چیو ڈارہ بیروہ سے تعلق رکھنے بی ایس سی ریڈیالوجی کے طالب علم عمر احمد دیو دو روز قبل کالج ہاسٹل کی چھت پر سولر پلانٹ سے لٹکا ہوا پایا گیاتھا۔ عمر احمد دیو کی لاش پنجاب سے اپنے آبائی گھر بیروہ پہنچائی گئی جوں ہی ان کی لاش چیو ڈارہ بیروہ پہنچی تویہاں صف ماتم بچھ گئی۔ عمر کے مرنے پر پورے علاقے میں ماتم کی لہر دوڑ گئی۔ عمر کے بھائی اور ان کے رشتہ داروں نے پنجاب کے وزیر اعلی کے میڈیا انچارج روین ٹھکرال کے اس ٹویٹ کو مسترد کیا جس میں روین ٹھکرال نے لکھا ہے کہ ڈی جی پی پنجاب پولیس نے انہیں اطلاع دی کہ عمر احمد دیو ڈپریشن کے شکار تھے۔

    انہوں نے ایک خود کشی کرنے سے پہلے ایک نوٹ چھوڑا ہے جس میں انہوں نے اپنے ذہنی دباؤ میں آکر خودکشی سے متعلق لکھا ہے ٹویٹ میں لکھا گیا کہ عمر احمد دیو کے بھائی شوکت احمد پنجاب میں ایف جی ایس پہنچ گئے یہاں عمر کا پوسٹ مارٹم کیاگیا۔ ٹویٹ میں یہ بھی لکھا گیاہے کہ پنجاب پولیس کی طرف سے کی گئی تحقیقات سے عمر کے بھائی شوکت اور ان کا خاندان مطمئن ہے۔ عمر کے بھائی شوکت نے نیوز18 اردو کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ وہ صرف وہاں کی پولیس سے اس وقت تک مطمئن ہیں جہاں تک انہوں نے اپنی کاروائی بخوبی انجام دی۔
    شوکت نے کہاکہ پوسٹ مارٹم اور دوسرے لوازمات کے سلسلے میں پنجاب پولیس نے بھرپور تعاون پیش کیا جس پر وہ ان کے شکر گزار ہیں۔انہوں نے پنجاب کے وزیر اعلیٰ کے میڈیا انچارج کے ٹویٹ پر اس افسوس کا اظہار کیا جس میں انہوں نے شوکت کےاقرار نامے کی بات کہی شوکت نے کہا کہ لاش کو اپنے گھر واپس لینے کے سلسلے میں جو کاغذات لوازمات ہونے تھے صرف اس پر انہوں نے دستخط کئے ہیں، نہ دیگر معاملات پر۔ شوکت نے مکمل تحقیقات کرنے کا مطالبہ کیا۔

    عمر کے چچیرے بھائی الطاف نے نیوز18اردو کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے کہاکہ کل تک پولیس نے جو کاروائی انجام دی اس پر وہ مطمئن ہیں لیکن ابھی پوسٹ مارٹم، ہینڈ رائٹنگ کی رپورٹ آنی باقی ہے اور خاص کر کالج میں جن لڑکوں کے ساتھ عمر کی لڑائی ہوئی تھی اس کی تحقیقات بھی ابھی نہیں ہوئی ہے۔انہوں نے پنجاب پولیس اور جموں وکشمیر گورنر انتظامیہ سے اپیل کی اس معاملے کی باریک بینی سے جانچ ہونی چاہے۔
    Published by:Sana Naeem
    First published: