اپنا ضلع منتخب کریں۔

    ایل جی منوج سنہا نے ملک کی دفاع کیلئے اپنی جانیں نچھاور کرنے والے شہیدوں کو خراج عقیدت پیش کیا

    امر جوان شوریہ ستھل کا افتتاح کرنےکے موقع پر ایل جی نے ملک کی دفاع کے لئے اپنی جانیں نچھاور کرنے والے شہیدوں کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ قوم ایسے جوانوں کی قربانیوں کا مرہون منت ہے جنہوں نے اپنی جانوں کی پرواہ کئے بغیر قومی سلامتی کا تحفظ یقینی بنایا۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Jammu and Kashmir, India
    • Share this:
      رمیش امباردار:
      جموں و کشمیر یو ٹی کے ایل جی منوج سنہا کا کہنا ہے کہ دفعہ تین سو ستر ختم کئےجانے کے بعد دہشت گردی کے ڈھانچے کو مسمار کر دیا گیا ہے۔ پونی ریاسی میں امر جوان شوریہ استھل کا افتتاح کرنےکے موقع پر ایل جی نے ملک کی دفاع کے لئے اپنی جانیں نچھاور کرنے والے شہیدوں کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ قوم ایسے جوانوں کی قربانیوں کا مرہون منت ہے جنہوں نے اپنی جانوں کی پرواہ کئے بغیر قومی سلامتی کا تحفظ یقینی بنایا۔

      اس موقع پر انہوں نے کہا کہ اقتصادی ترقی یو ٹی کی بنیادی ضرورت ہے اور اس سے پاکر ہی یہاں کے لوگ خوشحال زندگی گزارسکیں گے۔ انہوں نے کہا کہ امن کے ماحول میں ہی جموں و کشمیر ترقی کی راہ پر گامزن رہ سکتا ہے اور امن کے قیام کی اور اس سرکار نے نمایاں پیش رفت کی ہے۔ ایل جی نے کہا کہ گزشتہ تین برس کے دوران جموں و کشمیر بہت آگے نکل چکا ہے اور ہر طبقے کی ترقی کو یقینی بنانے کے لئے اقدامات کئے جارہے ہیں۔

      انہوں نے کہا کہ ایسے اقدامات کئے جارہے ہیں کہ کوئی بھی طبقہ ترقی سے محروم نہ رہے اور خاصکر نوجوانوں کا مستقبل تابناک بن پائے۔ انہوں نے کہا کہ انکی انتظامیہ کی کوششوں کی بدولت آج جموں و کشمیر کے دیہی علاقوں کا نقشہ ہی بدل رہا ہے اور ان علاقوں کی ترقی ممکن بن پارہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ بنیادی عوامی نمائیندوں کو بااختیار بنا نے سے ہی دیہی علاقوں کے لوگ ترقیاتی عمل میں شریک ہوپائے ہیں اور وہ اب اپنی ضروریات کے مطابق کاموں کو انجام دینے کے مجاز بن گئے ہیں۔

      شاہ رخ خان کا اپ کمنگ فلموں کو لیکر بڑا انکشاف، جانئے کیا کچھ کہا؟

      IND W vs AUS W: آسٹریلیا کےخلاف ٹی20 سیریز کیلئے ٹیم انڈیا کا ہوااعلان، پوجا وستراکر باہر

      انہوں نے کہا کہ پنچایتی راج اداروں کی وساطت سے ہیلتھ، تعلیم اور دیگر لازمی سیکٹروں کی ترقی ممکن ہو پائی ہے اور سرکار کی یہ کوشش ہے کہ جموں وکشمیر کے دور دراز اور پسماندہ علاقوں کے لوگوں کو تمام تر بنیادی سہولیات نزدیکی طور پر میسر ہوں۔ انہوں نے کہا کہ بیک ٹو ولیج پروگرام کے چوتھے مرحلے کے دوران ہر پنچایت کے پندرہ نوجوانوں کو خود روزگار کمانے کے لائیق بنانے کے لئے اقدامات کئے گئے اور ان نوجوانوں کی بھر پور مالی مدد کی جارہی ہے تاکہ وہ اپنے اور دوسروں کے لئے روزگار کے مواقع پیدا کر سکیں۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: