ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

ایل جی منوج سنہا بولے، یوٹی کیلئے پیش کیا گیا بجٹ روزگار کے مواقع اور جموں۔کشمیر کے مستقبل کو تحفظ فراہم کرے گا

جموں و کشمیر کے لیفٹننٹ گورنر منوج سنہا ( LG of Jammu and Kashmir Manoj Sinha) کا کہنا ہے کہ یو ٹی کے لئے حال ہی میں پارلیمنٹ میں پاس کیا گیا بجٹ یو ٹی کی از سر نو تعمیر، روزگار کے مواقع پیدا کرنے اور جموں و کشمیر کے مستقبل کو تحفظ فراہم کرنے والا بجٹ ہے۔

  • Share this:
ایل جی منوج سنہا بولے، یوٹی کیلئے پیش کیا گیا بجٹ روزگار کے مواقع اور جموں۔کشمیر کے مستقبل کو تحفظ فراہم کرے گا
جموں و کشمیر کے لیفٹننٹ گورنر منوج سنہا

جموں و کشمیر کے لیفٹننٹ گورنر منوج سنہا ( LG of Jammu and Kashmir Manoj Sinha) کا کہنا ہے کہ یو ٹی کے لئے حال ہی میں پارلیمنٹ میں پاس کیا گیا بجٹ یو ٹی کی از سر نو تعمیر، روزگار کے مواقع پیدا کرنے اور جموں و کشمیر کے مستقبل کو تحفظ فراہم کرنے والا بجٹ ہے۔ جموں و کشمیر سے متعلق رواں برس کے ایک لاکھ آٹھ ہزار کروڑ روپئےکے سالانہ بجٹ پر پہلا سرکاری رد عمل ظاہر کرتے ہوئے یو ٹی کے لیفٹننٹ گورنر منوج سنہا نے اسے عوام دوست بجٹ قرار دیا ہے۔ ان کاکہنا ہے کہ گزشتہ برس کے مقابلے میں اس سال کا اضافی بجٹ اسبات کا عکاس ہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی جموں و کشمیر کا مستقبل محفوظ کرنے اور یہاں کی ترقی کو یقینی بنانے کو ترجیح دے رہے ہیں۔ اعداد و شمار کا زکر کرتے ہوئے لیفٹننٹ گورنر نے کہا کہ گزشتہ سال کے مقابلے مین اس سال آٹھ ہزار کروڑ روپئیے سے زاید کی اضافی رقومات واگزار کی جارہی ہیں۔ مختلف شعبوں کے لئے جاری کئے جانے والی رقومات کی تفصیلات بیان کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ جموں و کشمیر کے ہر ایک سیکٹر کی طرف دھیان دیا گیا ہے۔ اس سال کے بجٹ میں کس شعبے کے لئے کتنی اضافی رقم مخصوص رکھی گئی ہے اسکی تفصیل سطرح ہے۔

محکمہ زراعت:۔ 2008 کروڑ روپئے۔۔۔۔۔۔695 کروڑ روپئے کا اضافہ۔

محکمہ دیہی ترقیات:۔ 4817 کروڑ روپئے۔۔۔۔۔۔۔342کروڑ روپئے کا اضافہ۔

محکمہ سیاحت:۔ 786 کروڑ روپئیے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔509 کروڑ روپئے کا اضافہ۔

محکمہ صحت:۔ 1456کروڑ روپئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔190 کروڑ روپئے کا اضافہ۔

محکمہ بجلی:۔ 2728 کروڑ روپئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔120 کروڑ روپئے کا اضافہ۔
محکمہ شہری ترقیات:۔ 2710 کروڑ روپئے۔۔۔۔۔۔1432 کروڑ روپئے کا اضافہ۔
محکمہ جل شکتی:۔6346 کروڑ روپئے۔۔۔۔۔۔۔۔5102 کروڑ روپئے کا اضافہ۔
محکمہ تعلیم:۔ 1873 کروڑ روپئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔523 کروڑ روپئے کا اضافہ۔
محکمہ آر اینڈ بی:۔4089 کروڑ روپئے۔۔۔۔۔۔۔500 کروڑ روپئے کا اضافہ۔
محکمہ انڈسٹریز اینڈ کامرس:۔ 648 کروڑ روپئے۔۔۔۔۔291 کروڑ روپئے کا اضافہ۔

منوج سنہا نے کہا کہ پنچایت راج اداروں بشمول بی ڈی سی ، ڈی ڈی سی اور پنچایتوں کے لئے بھی معقول رقومات مُختص کی گئی ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ کشمیری مائیگرنٹوں کی بحالی اور باز آبادکاری کے لئے بھی وافر رقومات مختص رکھی گئی ہیں۔انہوں نے کہا کہ اس اضافی رقم سے جموں و کشمیر میں ترقیاتی عمل کو آگے بڑھانے میں مزید مدد ملے گی۔انہوں نے کہا " مُجھے لگتا ہے کہ یہ صرف اعداد و شمار نہیں ہیں بلکہ اسکے پیچھے وزیر اعظم نریندر مودی کا جموں و کشمیر کے تئیں ترقی کا اٹوٹ وشواس ہے جسکی وجہ سے یہ اضافہ ہو پایا ہے۔ ایک جملے میں کہوں تو یہ بجٹ جموں و کشمیرکی اقتصادیات کو فروغ دینے ، یہاں روزگار کے مواقع پیدا کرنے اور یو ٹی کے مستقبل کو محفوظ کرنے میں مدد گار ثابت ہوگا۔"

لیفٹننٹ گورنر نے کہا کہ مرکزی سرکار کی طرفسےماضی میں بھی جموں و کشمیر کے لئے کافی فنڈس واگزار کئے جاتے رہے ہیں تاہم اسکا پورا فایدہ عام عوام تک نہیں پہنچ پایا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مُختص کی گئی رقومات اپریل کے مہینے میں ہی جاری کی جائیں گی تاکہ ترقیاتی پروجیکٹوں کی عمل آوری جلد سے جلد شروع کی جاسکے۔ منوج سنہا نے کہا کہ رقومات کا صیح اور بروقت استعمال یقینی بنانے کے لئے شفافیت سے کام لیا جائے گا۔ واضح رہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی نے جموں و کشمیر کے تنظیم نو کے موقع پر کہا تھا کہ جموں و کشمیر کی ترقی میں حائیل تمام رکاوٹیں دور ہونے کے بعد اب جموں و کشمیر میں ترقی کا ایک نیا دور شروع ہوگا۔ ماہرین کا ماننا ہے کہ اس سال کے بجٹ میں اضافہ اسی سلسلے کی ایک کڑی ہے۔
Published by: Sana Naeem
First published: Mar 25, 2021 06:29 PM IST