ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جموں وکشمیر: لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے کہا- تشدد کا راستہ ترک کرنے والے نوجوانوں کو فراہم کریں گے ہرممکن مدد

جموں و کشمیر کے لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے بقول ان کے 'گمراہ نوجوانوں' سے قومی دائرے میں واپس آنے کی اپیل کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت انہیں ہر ممکن مدد فراہم کرنے کے لئے تیار ہے۔

  • UNI
  • Last Updated: Oct 02, 2020 09:06 PM IST
  • Share this:
جموں وکشمیر: لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے کہا- تشدد کا راستہ ترک کرنے والے نوجوانوں کو فراہم کریں گے ہرممکن مدد
لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے کہا ہے کہ تشدد کا راستہ ترک کرنے والے نوجوانوں کو ہر ممکن مدد فراہم کی جائے گی۔

سری نگر: جموں وکشمیر کے لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے بقول ان کے 'گمراہ نوجوانوں' سے قومی دائرے میں واپس آنے کی اپیل کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت انہیں ہر ممکن مدد فراہم کرنے کے لئے تیار ہے۔ انہوں نے کہا ہے کہ جموں و کشمیر کے لوگ بالخصوص نوجوان تعمیر و ترقی کے راستے پر گامزن ہونے کے متمنی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت، جموں وکشمیر یونین ٹریٹری کو تعمیر و ترقی کا ایک رول ماڈل بنانے کے لئے پُرعزم ہے اور نوجوانوں کو با اختیار بنایا جائے گا۔

منوج سنہا نے ان باتوں کا اظہار جنوبی ضلع شوپیاں کے شیر مال علاقے میں 'بیک ٹو ولیج' پروگرام کے تیسرے مرحلے کو لانچ کرنے کے دوران ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر انہوں نے یوتھ ریکریشنل سینٹر اور چلڈرنز لائبریری کا بھی افتتاح کیا۔ نیز زائد ازتین کروڑ روپئے کی لاگت سے بننے والے گرلز ہوسٹل کا سنگ بنیاد بھی رکھا۔ انہوں نے کہا: 'گمراہ نوجوانوں سے تشدد کا راستہ ترک کرنے کی اپیل کرتا ہوں وہ قوی دائرے میں واپس آئیں، حکومت ان کو روز گار اور تجارت کے مواقع فراہم کرنے میں مدد فراہم کرنے کے لئے تیار ہے'۔

جموں و کشمیر کے لیفٹیننٹ گورنر سنہا نے کہا کہ جموں وکشمیر میں بابائے قوم مہاتما گاندھی کے جنم دن کے موقع پر 'بیک ٹو ولیج' مرحلہ سوم کا آغاز کرنا انہیں خراج پیش کرنے کا بہترین ذریعہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم سب کو بابائے قوم کے اصولوں جیسے عدم تشدد، مساوات، آپسی بھائی چارہ وغیرہ پر چلنا چاہئے۔ انہوں  نے کہا کہ مہاتما گاندھی نے پنچایتی راج کی وکالت کی تھی اور جموں و کشمیر میں اسی نظام کے تحت لوگوں تک پہنچنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔

لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے تقریب کے حاشئے پر نامہ نگاروں کو بتایا کہ یہاں کے لوگ ترقی کے راستے پر چلنا چاہتے ہیں اور یہ امن پسند لوگ ہیں۔ ان کا مزید کہنا تھا: 'ہم کوشش کر رہے ہیں کہ ہر ایک شخص تک ترقی کی روشنی پہنچے۔ ہر ایک پنچایت کے پاس آج کم از کم 50 لاکھ روپئے ہے۔ ایسی بھی پنچایتیں ہیں، جن کے پاس ڈیڑھ کروڑ روپئے ہے۔ آج یہاں پر زائد از چار کروڑ روپئے کے پروجیکٹوں پر کام مکمل ہوچکا ہے جبکہ تین کروڑ روپئے مالیت کے پروجیکٹوں کا سنگ بنیاد رکھا ہے'۔ انہوں نے کہا: 'بہت سے پنچایتوں میں کئی کام ہوئے ہیں۔ آنے والے دنوں میں مزید کام ہوں گے۔ یہاں کے نوجوانوں کو روزگار اور پڑھائی کے اچھے مواقع ملے، اس کی ہم کوشش کر رہے ہیں'۔

Published by: Nisar Ahmad
First published: Oct 02, 2020 07:45 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading