உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ہندستانی فوج کی بڑی کارروائی، 3 پاکستانی فوجی مار گرائے، 4 فارورڈ پوسٹ کئے تباہ

    ہندستانی فوج کی بڑی کارروائی، 3 پاکستانی فوجی مار گرائے

    ہندستانی فوج کی بڑی کارروائی، 3 پاکستانی فوجی مار گرائے

    بتا دیں کہ پاکستانی فوجیوں کی طرف سے ایل او سی پر جنگ بندی کی خلاف ورزی کرتے ہوئے مسلسل نوشیرا سیکٹر کو ٹارگٹ کیا جا رہا تھا۔ پاکستان کی طرف سے کئے جا رہے حملے کے جواب میں اتوار کو ہندستانی فوجیوں نے آج بڑی کارروائی کی اور پاکستان کے 3 فوجیوں کو مار گرایا۔

    • Share this:
      نئی دہلی۔ پاکستان (Pakistan) کی طرف سے کی گئی جنگ بندی کی خلاف ورزی (Ceasefire Violation) کے جواب میں ہندستانی فوج نے اتوار کو پاکستانی فوجیوں کو کرارا جواب دیا ہے۔ ہندستانی فوج نے کشمیر میں راجوری کے نوشیرا سیکٹر میں پاکستانی فوج کے خلاف جوابی کارروائی کرتے ہوئے 3 پاکستانی فوجیوں کو مار گرایا ہے جبکہ کئی پاکستانی فوجی زخمی بتائے جا رہے ہیں۔ ہندستانی فوج کی کارروائی میں پاکستانی فوج کی چار فارورڈ پوسٹ بھی تباہ ہو گئی ہیں۔

      بتا دیں کہ پاکستانی فوجیوں کی طرف سے ایل او سی پر جنگ بندی کی خلاف ورزی کرتے ہوئے مسلسل نوشیرا سیکٹر کو ٹارگٹ کیا جا رہا تھا۔ پاکستان کی طرف سے کئے جا رہے حملے کے جواب میں اتوار کو ہندستانی فوجیوں نے آج بڑی کارروائی کی اور پاکستان کے 3 فوجیوں کو مار گرایا۔ اس دوران کئی پاکستانی فوجی زخمی ہو گئے۔
      خبر ہے کہ اتوار کو پاکستان کی طرف سے ایک بڑی دراندازی کی سازش رچی جا رہی تھی۔ ہندستانی افواج نے دیکھا کہ راجوری کے نوشیرا سیکٹر میں ایل او سی پر کلسیا علاقے میں سرحد پار سے دہشت گردوں کی ایک ٹولی جس کو پاکستانی فوج کور فائر دے رہی تھی۔ دہشت گرد ہندستانی سرحد کے اندر گھسنے کی فراق میں تھے جسے ہندستانی فوج نے ناکام کر دیا اور پاکستان کو کرارا جواب دیا۔ فی الحال اس علاقے میں فائرنگ بند ہے۔

      پاکستان کی فوج نے تو دہشت گردوں کو دراندازی کرانے کے لئے جنگ بندی کی خلاف ورزی کے پچھلے 17 سال کا ریکارڈ توڑ دیا۔ 28 دسمبر تک کے اعداد وشمار پر نظر ڈالیں تو پاکستان نے پوری ایل او سی پر 4700 بار جنگ بندی کی خلاف ورزی کی اور اس خلاف ورزی کے لئے پاکستان نے چھوٹے ہتھیار کے ساتھ ساتھ بڑی توپوں کا بھی استعمال کیا اور ٹارگٹ کر کے ایل او سی کے پاس رہنے والے گاوں والوں کو نشانہ بنایا۔
      Published by:Nadeem Ahmad
      First published: