ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جموں و کشمیر : اننت ناگ میں سامنے آیا طبی عملہ کی بڑی لاپروائی کا معاملہ ، مچا ہنگامہ ، جانئے کیا ہے اصل معاملہ

سب ڈسٹرکٹ اسپتال بجبہاڑہ میں ایک حاملہ خاتون کی زچگی کیلئے اس کی جراحی عمل میں لائی گئی ، لیکن معاملہ اس وقت سنگین نوعیت اختیار کر گیا جب مذکورہ خاتون کے زچگی کے بعد ٹیسٹ رپورٹ مثبت آئی ۔ تاہم زچگی سے قبل خاتون کو اسپتال انتظامیہ کی جانب سے مبینہ طور پر ایک کورونا منفی کی رپورٹ جاری کی گئی تھی ۔

  • Share this:
جموں و کشمیر : اننت ناگ میں سامنے آیا طبی عملہ کی بڑی لاپروائی کا معاملہ ، مچا ہنگامہ ، جانئے کیا ہے اصل معاملہ
ریسرچ کرنے والوں کا دعوی ہے کہ اس دوا کے استعمال سے وینٹی لیٹر پر رکھے گئے مریضوں کی موت کے جوکھم میں ایک تہائی کی کٹوتی ہوئی ہے ۔ جو آکسیجن پر ہیں ، ان لوگوں کی اموات میں پانچ فیصد کی کمی ہوئی ہے ۔

جموں و کشمیر کے ضلع اننت ناگ میں طبی عملہ کی جانب سے ایک اور لاپروائی کا معاملہ سامنے آیا ہے ۔ سب ڈسٹرکٹ اسپتال بجبہاڑہ میں کورونا سے متاثرہ ایک حاملہ خاتون کی زچگی کےلئے اس کی جراحی عمل میں لائی گئی ، لیکن معاملہ اس وقت سنگین نوعیت اختیار کر گیا ، جب مذکورہ خاتون کے زچگی کے بعد ٹیسٹ رپورٹ مثبت آئی ۔ تاہم زچگی سے قبل خاتون کو اسپتال انتظامیہ کی جانب سے مبینہ طور پر ایک سرٹیفیکیٹ جاری کیا گیا تھا ، جس میں خاتون کو منفی دکھا کر معمول کے مطابق اس کی جراحی کیلئے راہیں ہموار کی گئیں ۔


تفصیلات کے مطابق کورونا سے متاثرہ ضلع اننت ناگ کی ایک خاتون کو کچھ روز قبل بجبہاڑہ میں کے کورونا مریضوں کیلئے مخصوص اسپتال میں بھرتی کیا گیا تھا اور اسی اسپتال میں اس کی زچگی کرانی مطلوب تھی ۔ لیکن اس کو عام اسپتال میں منتقل کرنے کی غرض سے مبینہ طور اسے کورونا منفی دکھایا گیا اور اس سلسلہ میں ایک سرٹیفیکیٹ بھی جاری کیا گیا۔




نیوز18 کو حاصل اس سرٹیفیکیٹ میں انچارج میڈیکل سپرنٹینڈنٹ کے دستخط بھی موجود ہیں ۔ تاہم میڈیکل سپرنٹینڈنٹ ڈاکٹر شوکت کا کہنا ہے کہ یہ سرٹیفیکیٹ ان کی جانب سے جاری نہیں کیا گیا ہے اور نہ ہی انہوں نے اس پر دستخط کئے ہیں ۔ لیکن سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ آخر یہ سرٹیفیکیٹ کہاں سے آیا ، جس کی بنیاد پر کورونا متاثرہ خاتون کی زچگی کیلئے اس کا آپریشن عمل میں لایا گیا۔

ذرائع کے مطابق خاتون کی جراحی معمول کے مطابق کی گئی جبکہ کورونا متاثرہ افراد کیلئے باضابطہ طور پر مرتب شدہ پروٹوکول کو فالو کرنا لازمی ہے ۔ تاہم ڈاکٹر شوکت کا کہنا ہے کہ خاتون کی جراحی کے وقت اس کی کورونا منفی سرٹیفیکیٹ کے باجود بھی مرتب شدہ قواعد و ضوابط کے عین مطابق عمل میں لائی گئی ۔

ادھر اننت ناگ کے چیف میڈیکل افسر ڈاکٹر مختار احمد شاہ کا کہنا ہے کہ ان الزامات کی بنیاد پر محکمہ صحت نے ایک جانچ کمیٹی تشکیل دی ہے اور کمیٹی کو محض 3 دنوں میں اندر رپوٹ پیش کرنے کی ہدایت دی گئی ہے ۔ ڈاکٹر مختار کا مزید کہنا ہے کہ حقائق منظرعام پر آنے کے بعد ہی واقعہ کی اصل حقیقت معلوم ہوگی اور اگر طبی عملے کا کوئی اہلکار اس میں ملوث ہوگا ، تو اس کے خلاف ضابطے کے تحت کارروائی کی جائے گی ۔
First published: Jun 12, 2020 10:29 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading