ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جموں وکشمیر: سرخیوں میں ہیں عالیہ میر، بن گئیں پہلی خاتون

سینیک لیڈی کے نام سے مشہور عالیہ میر نے اپنی ایک غیر سرکاری تنظیم تشکیل دی ہے، جو جنگلی حیاتیات سے متعلق محکمہ کے ساتھ تعاون کرکے جنگلی جانوروں کے تحفظ کا کام انجام دے رہی ہے۔

  • Share this:
جموں وکشمیر: سرخیوں میں ہیں عالیہ میر، بن گئیں پہلی خاتون
جموں وکشمیر: سرخیوں میں ہیں عالیہ میر، بن گئیں پہلی خاتون

سری نگرکی عالیہ میر ان دنوں کافی سُرخیوں میں ہیں۔ وہ جموں وکشمیرکی پہلی ایسی خاتون ہیں، جو جنگلی جانوروں جیسے سانپ اور بھالو کو بچانے کے لئے کام کر رہی ہیں۔ سینیک لیڈی کے نام سے مشہور عالیہ میر نے اپنی ایک غیر سرکاری تنظیم تشکیل دی ہے، جو جنگلی حیاتیات سے متعلق محکمہ کے ساتھ تعاون کرکے جنگلی جانوروں کے تحفظ کا کام انجام دے رہی ہے۔ اس ٹیم نے ابھی تک کئی زہریلے سانپوں سمیت 60 سانپ بچالئے ہیں۔


عالیہ میر پہلے اس وقت سُرخیوں میں آئی تھیں، جب انہوں نے جموں وکشمیرکے سابق وزیر اعلیٰ عمر عبداللہ کے سرکاری گھر سے ایک سانپ کو بحفاظت نکال کر اس کی جان بچائی تھی۔ اس واقع کےچند دنوں بعد ہی عالیہ میر نے محبوبہ مفتی کے گھرسے بھی ایک سانپ کو زندہ پکڑلیا تھا۔ عالیہ میرکا کہنا ہے کہ جانورون کو زندہ رہنے کے حقوق ہیں اور ان کی حفاظت کرنا ہربشرکا فرض ہے۔ عالیہ میرجانوروں کے تحفظ سے متعلق عام لوگوں خاص طور پر نوجوانوں میں بیداری پیدا کرنے کے لئے وقتاً فوقتاً سیمنار اور دیگرجانکاری سے متعلق پروگرام منعقد کر رہی ہیں۔


عالیہ میرکا کہنا ہے کہ جنگلی جانوروں کا بستیوں کا رُخ کرنے کے لئے بھی انسان کی جنگلات میں مداخلت ہی ذمہ دار ہے۔ ان کا ماننا ہے کہ جنگلوں کے بے دریخ کٹاو کی وجہ سے جنگلی جانوروں نے بستیوں کی طرف آنا شروع کیا ہے۔ وہ عوام سے اپیل کرتی ہیں کہ وہ جنگلی جانوروں کی بستیوں میں موجودگی کی اطلاع متعلقہ محکمہ کو فراہم کریں تاکہ ان جنگلی جانوروں کی جان بچائی جاسکے۔




واضح رہے کہ 2014 کے تباہ کن سیلاب کے بعد سری نگر شہرمیں سانپوں کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے۔ ایسے میں عالیہ میر اور اس کی ٹیم کی کوششیں نہ صرف انسانی جانوں کو بچانے میں معاون ثابت ہو رہی ہیں، بلکہ جنگلی جانوروں کو بحفاظت واپس جنگلوں میں ڈالنے میں بھی مدد مل رہی ہے۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Mar 19, 2021 11:59 PM IST