ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جموں وکشمیر: اراضی مالکانہ حقوق قوانین میں ترمیم سے متعلق محبوبہ مفتی نے کہی یہ بڑی بات

پی ڈی پی صدر اور سابق وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی نے کہا ہے کہ جموں وکشمیر میں زمینوں سے متعلق جاری نوٹیفکیشن حکومت ہند کی طرف سے جموں و کشمیر کے لوگوں کے اختیارات ختم کرنے، جمہوری حقوق سے محروم رکھنے اور وسائل پر قبضہ کرنے کے سلسلے کی ایک اور مذموم کوشش ہے۔

  • Share this:
جموں وکشمیر: اراضی مالکانہ حقوق قوانین میں ترمیم سے متعلق محبوبہ مفتی نے کہی یہ بڑی بات
جموں وکشمیر: اراضی مالکانہ حقوق قوانین میں ترمیم سے متعلق محبوبہ مفتی نے کہی یہ بڑی بات

سری نگر: پی ڈی پی صدر اور سابق وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی نے کہا ہے کہ جموں وکشمیر میں زمینوں سے متعلق جاری نوٹیفکیشن حکومت ہند کی طرف سے جموں و کشمیر کے لوگوں کے اختیارات ختم کرنے، جمہوری حقوق سے محروم رکھنے اور وسائل پر قبضہ کرنے کے سلسلے کی ایک اور مذموم کوشش ہے۔ انہوں نےکہا کہ دفعہ 370 کو منسوخ کرنے اور وسائل کی لوٹ مار کے بعد اب زمینوں کی کھلے عام فروخت کےلئے راہ ہموار کی گئی ہے۔ محبوبہ مفتی نے ان باتوں کا اظہار اپنی ایک ٹویٹ میں کیا ہے، جو انہوں نے مرکزی وزارت داخلہ کے جموں و کشمیر میں زمین کی خرید و فروخت سے متعلق تازہ احکامات سامنے آنے کے بعد کی ہے۔


محبوبہ مفتی نے لکھا ہے: 'زمینوں سے متعلق جاری نوٹیفکیشن حکومت ہند کی طرف سے جموں و کشمیرکے لوگوں کے اختیارات ختم کرنے، جمہوری حقوق سے محروم رکھنے اور وسائل پر قبضہ کرنے کے سلسلے کی ایک اور مذموم کوشش ہے۔ دفعہ 370 کو منسوخ کرنے اور وسائل کی لوٹ مار کے بعد اب زمینوں کی کھلے عام فروخت کے لئے راہ ہموار کی گئی'۔




واضح رہے کہ مرکزی وزارت داخلہ نے منگل کو جموں و کشمیر اور لداخ میں زمین سے متعلق قوانین نوٹیفائی کئے، جن کی رو سے ملک کا کوئی بھی شہری یہاں زمین خرید سکتا ہے۔ تاہم قوانین میں کہا گیا ہے کہ زرعی زمین صرف اور صرف زرعی مقاصد کے لئے ہی استعمال ہوگی۔

وہیں دوسری جانب نیشنل کانفرنس کے نائب صدر و سابق وزیر اعلیٰ عمر عبداللہ نے مرکزی حکومت کی طرف سے جموں و کشمیر اراضی مالکانہ حقوق قوانین میں ترمیم کو ناقابل قبول قرار دیتے ہوئے کہا ہےکہ جموں و کشمیر کی اراضی کو فروخت کیا جا رہا ہے اور جن لوگوں کے پاس تھوڑی بہت اراضی ہے وہ زیادہ متاثر ہونے والے ہیں۔ عمر عبداللہ نے اپنے ایک ٹوئٹ میں کہا: 'جموں و کشمیرکے اراضی مالکانہ حقوق قوانین میں ترمیم نا قابل قبول ہے، غیر زرعی اراضی اور زرعی اراضی کی منتقلی کو آسان بناکرڈومیسائل کو بھی ختم کیا گیا ہے۔ جموں وکشمیر سیل پر ہے، غریب لوگ جن کے پاس تھوڑی بہت زمین ہے زیادہ متاثر ہوں گے'۔ سابق وزیر اعلیٰ عمر عبداللہ نے اپنے ایک اور ٹویٹ میں کہا: 'دلچسپ بات یہ ہے کہ مرکزی حکومت نے اس حکم نامے کو جاری کرنے کے لئے لداخ خود مختار پہاڑی ترقیاتی کونسل لیہہ کے انتخابات کے ختم ہونےکا انتظارکیا اور بی جے پی نے بیشتر سیٹیں جیت کر لداخ کو سیل پر رکھ دیا۔ یہ لداخی عوام کو بی جے پر بھروسہ کرنےکا صلہ ہے'۔

نیوز ایجنسی یو این آئی اردو کے اِن پُٹ کے ساتھ۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Oct 27, 2020 06:57 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading