உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    اننت ناگ کے مشتاق احمد ڈار کے سر ہے اپنے نام کے 3 Patents کی کامیابی کا سہرا

    Youtube Video

    مشتاق کا بنایا ہوا یہ pole climber اب دُنیا بھر میں بِکتا ہے۔ گجرات کی ایک کمپنی اسے بناتی ہے لیکن اصل میں مشتاق نے اسے پہلے بنایا اور اس کا پیٹنٹ بھی مشتاق احمد کے نام ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Jammu and Kashmir, India
    • Share this:
      صرف مڈل پاس لیکن تین پیٹنٹ ہیں انکے نام۔ جی ہاں یہ کہانی ہے اننت ناگ کے مشتاق احمد ڈار کی۔ جنہوں نے اپنے والد کے انتقال کے بعد نہ صرف گھر کی ذمہ داری سنبھالی بلکہ بڑی بڑی سائنسی ڈگریاں رکھنے والے لوگوں کو مات دی۔ اننت ناگ کے مشتاق احمد ڈار کے لئے یہ پہلا اعزاز نہیں ہے۔ مشتاق صرف میڈل پاس ہے لیکن اس کا شمار ہندوستان کے مشہور انوویٹرس میں ہوتا ہے۔ مشتاق کا بنایا ہوا یہ pole climber اب دُنیا بھر میں بِکتا ہے۔ گجرات کی ایک کمپنی اسے بناتی ہے لیکن اصل میں مشتاق نے اسے پہلے بنایا اور اس کا پیٹنٹ بھی مشتاق احمد کے نام ہے۔

      اننت ناگ کے ایک چھوٹے گاؤں میں رہنے والے مشتاق ڈار کو تعلیم نویں جماعت میں چھوڑنی پڑی جب انکے والد کا انتقال ہوا۔ اسکول چھوٹا لیکن علم نہیں۔ ہمیشہ مشینوں سے دلچسپی رکھنے والے مشتاق احمد نےپہلے چھوٹی چھوٹی چیزیں بنانی شروع کیں۔ اور آج تین پیٹنٹ انکے نام ہیں جو یہاں بڑے محققین کے پا س بھی نہیں۔ پہلا پیٹنٹ اسے نٹ کریکر یعنی اخروٹ توڑنے میں کام آنے والی مشین پر ملا۔ اس کے بعد انھوں نے pole climber بنایا پھر سبز اخروٹ سے چھلکا اُتارنے کی یہ مشین جسے وال نٹ پِیلر (Walnut Peeler) کہتے ہیں۔ آج مشتاق کا اپنا کارخانہ ہے جہاں پر یہ وال نٹ پیلر بناتے ہیں۔ انھوں نے walnut gradder بھی تیار کیا ہے۔ مشتاق احمد کا کہنا ہے کہ اسکی دلچسپی ایسی مشینیں بنانے میں ہئے جن سے عام لوگوں کی پریشانیوں کا ازالہ ہو۔

      سرینگر میں شوگر کے سب سے زیادہ مریض، لوگ صحت مند طرز زندگی نہیں اپنا رہے ہیں

      شخص نے چھٹکارا پانے کیلئے گرل فرینڈ کا کیا قتل، لاش کو بوری میں باندھ کر نالے میں بہایا

       

      مشتاق احمد کا تعلق ایک کسان گھرانے سے ہئے لیکن خوش قسمتی اتنی رہی کہ گھر والوں نے روک ٹوک نہیں کی لیکن ایک بار والد صاحب کی گھڑی توڑنے پر پڑی ڈانٹ انھیں خوب یاد ہے۔  جب بالی ووڈ فلم , پیڈ مین بنائی گئی تو ہندوستان کے ٹاپ 16 انویٹرس کو ممبئی بلایا گیا تھا جن میں سے کشمیر کے دو انویٹر مشتاق ڈار اور رفیق آہنگر شامل تھے۔ سادگی اور محنت کا نمونہ ہیں یہ اختراع کار اور صحیح معنوں میں ہمارے ہیرو ہیں۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: