ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جموں وکشمیر :تنخواہوں میں 12فیصدی اضافہ کے بعدNHMملازمین میں خوشی کی لہر

این ایچ ایم ملازمین کی تنخواہوں میں اضافے کے طور پر تقریبا 12 فیصد اضافی اضافے کی منظوری دی گئی ہے۔ اس ضمن میں انفرادی اضافے کےلئے فائنانشل کمشنر ، محکمہ صحت اور میڈیکل ایجوکیشن ، اٹل ڈلو کی سربراہی میں اسٹیٹ ہیلتھ سوسائٹی کی ایگزیکٹو کمیٹی کے ذریعہ جانکاری فراہم کی گئی ہے۔

  • Share this:
جموں وکشمیر :تنخواہوں میں 12فیصدی اضافہ کے بعدNHMملازمین میں خوشی کی لہر
این ایچ ایم ملازمین کی تنخواہوں میں12فیصد کا اضافہ

جموں و کشمیر میں تنخواہوں میں اضافہ کے بعد این ایچ ایم ملازمین میں خوشی کی لہر دیکھی جارہی ہے۔ سرکار نے این ایچ ایم ملازمین کے لئے تنخواہ میں اضافے کی منظوری دی ہے۔ ایک اہم فیصلے میں ، حکومت نے جموں و کشمیر کے وسطی علاقوں میں قومی صحت مشن کے تحت کام کرنے والے ملازمین کی تنخواہوں میں خاطر خواہ اضافے کی منظوری دی ہے۔اس سلسلے میں ، فیصلہ جموں و کشمیر حکومت کی جانب سے پیش کردہ مالی سال 2021-22 کے پروگرام پر عمل درآمد کے منصوبے کے لئے موصولہ منظوری کے تحت ، مرکزی خطے کو دیا گیا ہے۔مرکزی وزارت صحت اور خاندانی بہبود کی منظور شدہ منظوری کے مطابق ، پہلی بار 5 فیصد کے سالانہ انکریمنٹ بجٹ کے علاوہ ، تنظیم نو کے ذریعے این ایچ ایم ملازمین کی تنخواہوں میں اضافے کے طور پر تقریبا 12 فیصد اضافی اضافے کی منظوری دی گئی ہے۔ اس ضمن میں انفرادی اضافے کےلئے فائنانشل کمشنر ، محکمہ صحت اور میڈیکل ایجوکیشن ، اٹل ڈلو کی سربراہی میں اسٹیٹ ہیلتھ سوسائٹی کی ایگزیکٹو کمیٹی کے ذریعہ جانکاری فراہم کی گئی ہے۔ فائنانشل کمشنر اٹل ڈلو نے این ایچ ایم ملازمین کی فرائض انجام دہی کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کی اس کوشش کا مقصد ملازمین کے حوصلے بلند کرنا ہے اور کوویڈ ۔19 کو روکنے میں انکے انتھک کام کرنے کی تصدیق کرنا ہے ۔ انہوں نے کہا ، "حکومت کی جانب سے یہ نذرانہ ہمیشہ ان لوگوں کی خدمات کو تسلیم کرنے کے لئے دیا جاتا ہے جو انسانیت کے مفاد کے لئے اپنی بے لوث خدمات کو پیش کرتے ہیں اور دوسروں کے لئے بھی تقلید کی مثال بناتے ہیں۔


قومی صحت مشن کے تحت کام کرنے والے ملازمین کی تنخواہوں میں خاطر خواہ اضافے کی منظوری
قومی صحت مشن کے تحت کام کرنے والے ملازمین کی تنخواہوں میں خاطر خواہ اضافے کی منظوری


" ڈائریکٹر این ایچ ایم ، محمد یاسین چودھری نے کہا کہ تنخواہوں میں اضافے ، خاص طور پر تنخواہ میں نظر ثانی ، یونین ٹیریٹریری میں کام کرنے والے این ایچ ایم ملازمین کے طویل التوا کا مطالبہ ہے۔ اس پر حکومت کے سامنے یہ مسئلہ زیر غور تھا اور مرکزی وزارت کے ساتھ 2021-22 کے قومی پروگرام رابطہ کمیٹی کے اجلاس میں یو ٹی انتظامیہ نے فعال طور پر پیروی کی تھی۔انہوں نے لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا کے مشیر ، راجیو رائے بھٹناگر اور فائنانشل کمشنر اٹل ڈلو کا شکریہ ادا کیا کہ ان کی خدمات کو تسلیم کرنے کے لئے این ایچ ایم ملازمین کے حق میں اس اضافے کی منظوری کو یقینی بنایا گیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ وبائی مرض کے ان مشکل اوقات میں این ایچ ایم ملازمین سمیت محکمہ صحت اور میڈیکل ایجوکیشن کے "کوویڈ ویرئیرس" اس چیلنج کی طرف بڑھ گئے ہیں اور وہ کورونا وائرس کے پھیلاؤ کا مقابلہ کرنے اور متاثرہ افراد کے علاج کے لئے بے لوث طور پر مکمل طبی نظام کی دیکھ بھال کی خدمات فراہم کر رہے ہیں۔ یہ بات قابل ذکر ہے کہ جموں وکشمیر حکومت نے اپنے ملازم دوستانہ اقدامات کے تحت حال ہی میں مالی سال 2020-21 کے لئے قومی صحت مشن (این ایچ ایم) کے عملے کے لئے لائلٹی بونس دینے کا اعلان کیا تھا۔


ادھر نیشنل ہیلتھ مشن ملازمین نے سرکار کے اس فیصلے کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا کہ تنخواہوں میں تفاوت دور کرنا انکا دیرینہ مسئلہ تھاتاہم ابھی تک یہ بات واضح نہیں ہے کہ ملازمین کی تنخواہوں میں 12 فی صدی اضافہ کس بنیاد پر کیا جائےگا۔ شبیر احمد نامی این ایچ ایم کے ایک ملازم کے مطابق یہ بات واضح نہیں کی گئی کہ تنخواہوں میں اضافہ بیسک سلیری پر ہوگا یا پھر ریشنیلائزیشن کی بنیادوں پر۔ پنکی نامی ایک ملازمہ کا کہنا ہے کہ وہ عرصہ دراز سے نوکریوں کی مستقلی کے ساتھ ساتھ ایکول ورک ایکول پے کا مطالبہ کر رہے تھے۔ لیکن ابھی تک اس مطالبے کو تسلیم نہیں کیا گیا۔ تاہم پنکی کا کہنا ہے کہ اگر موجودہ صورتحال میں اب سرکار نے 12 فی صدی اضافے کا حکم دیا ہے تو اسکے لئے وہ سرکار کے شکر گزار ہیں۔ لیکن انہیں امید ہے کہ سرکار آئیندہ وقت میں انکے مزید مطالبات کو بھی پورا کریگی۔
Published by: Mirzaghani Baig
First published: May 31, 2021 11:25 PM IST