اپنا ضلع منتخب کریں۔

    این آئی اے نے جموں و کشمیر میں 18 مقامات پر چھاپے مارے ، ایک شخص کو کیا گرفتار، جانئے پورا معاملہ

    این آئی اے نے جموں و کشمیر میں 18 مقامات پر چھاپہ مارا ، ایک شخص کو کیا گرفتار ۔ فائل فوٹو ۔

    این آئی اے نے جموں و کشمیر میں 18 مقامات پر چھاپہ مارا ، ایک شخص کو کیا گرفتار ۔ فائل فوٹو ۔

    Jammu and Kashmir : این آئی اے نے منگل کے روز جموں و کشمیر کے یو ٹی کے راجوری، پونچھ، جموں، سری نگر، بانڈی پورہ، شوپیاں، پلوامہ اور بڈگام اضلاع میں 18 مقامات پر چھاپہ ماری کی۔ راجوری کے ایک شخص محمد امیر شمشی کو مجرمانہ سرگرمیوں سے متعلق کیس میں گرفتار کیا گیا۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Jammu and Kashmir | Jammu | Srinagar
    • Share this:
    جموں و کشمیر : این آئی اے نے منگل کے روز جموں و کشمیر کے یو ٹی کے راجوری، پونچھ، جموں، سری نگر، بانڈی پورہ، شوپیاں، پلوامہ اور بڈگام اضلاع میں 18 مقامات پر چھاپہ ماری کی۔ راجوری کے ایک شخص محمد امیر شمشی کو مجرمانہ سرگرمیوں سے متعلق کیس میں گرفتار کیا گیا۔ این آئی اے کے پریس ریلیز کے مطابق جماعت اسلامی جموں وکشمیر یو اے پی اے ایکٹ کے تحت 'غیر قانونی انجمن' قرار دیے جانے کے بعد اپنی فرنٹل تنظیموں کے ذریعے اپنی سرگرمیاں جاری رکھے ہوئے ہے۔ ان تنظیموں میں الہدیٰ ایجوکیشنل ٹرسٹ بھی شامل ہے۔ این آئی اے کے مطابق الہدیٰ ٹرسٹ راجوری کو مختلف طریقوں سے فنڈز اکٹھا کرتے ہوئے پایا گیا ہے، جن میں عطیات،حوالہ وغیرہ شامل ہیں، تاہم  وہ یہ رقومات جموں و کشمیر کے نوجوانوں کو غیر قانونی سرگرمیوں کے لیے اکسانے اور علاقائی سالمیت اور خودمختاری کو متاثر کرنے کے لیے استعمال کر رہاہے۔

    این آئی اے نے تین ستمبر کو اس معاملے کو لے کر مقدمہ درج کیا تھا۔ تحقیقات سے پتہ چلا ہے کہ گرفتار ملزم محمد امیر شمشی اے ایچ ای ٹی کا چیئرپرسن (نظام اعلیٰ) ہے اور ٹرسٹ کے چیف سرپرست کی ہدایت پر کام کرتا ہے۔ تحقیقات کے دوران وادی کشمیر میں کام کرنے والی دیگر این جی اوز اور ٹرسٹوں کے ساتھ مشتبہ روابط بھی سامنے آئے ہیں۔ تلاشی کے دوران کئی موبائل ڈیوائسز اور فنڈنگ سے متعلق دستاویزات وغیرہ ضبط کئے گئے ہیں۔

    دفاعی ماہرین نے ملک دشمن عناصر اور دہشت گردوں کے ہمدردوں کے خلاف این آئی اے کے کریک ڈاؤن کو سراہتے ہوئے کہا ہے کہ اس سے دہشت گردی کو روکنے میں مدد ملے گی۔ جموں وکشمیر کے سابق ڈی جی پی ایس پی وید کا کہنا ہے کہ دہشت گردی کے مالیاتی چینلز کو روکنے کے لیے اس طرح کے چھاپے ضروری ہیں۔ نیوز 18 سے بات کرتے ہوئے ایس پی وید نے کہا کہ ’’بہت سے ہندوستان مخالف گروپ جو ہندوستان کے باہر سے کام کررہے ہیں جو ہمارے ملک کو غیر مستحکم کرنا چاہتے ہیں۔ یہ گروپ دہشت گرد تنظیموں کو جموں و کشمیر اور ہندوستان کے دیگر حصوں میں اپنے مذموم عزائم کی تکمیل کے لیے استعمال کرتے ہیں۔"

     

    یہ بھی پڑھئے: کشمیری علیحدگی پسند رہنما الطاف احمد شاہ کاایمس دہلی میں انتقال، تہاڑ جیل میں 5 سال تھےقید


    سابق ڈی جی پی نےمزید کہا کہ " دہشت گردی کے ماڈیولز کو چالو کرنے اور دہشت گردانہ سرگرمیوں کو انجام دینے کے لیے انہیں رقومات کی ضرورت ہوتی ہے اور فنڈز کو مختلف ذرائع سے منتقل کیا جاتا ہے، دہشت گرد تنظیموں کی حمایت کرنے والے گروپ تعلیمی ٹرسٹ، غیر سرکاری تنظیموں (این جی اوز) کو منتقلی کے ایک ذریعہ کے طور پر استعمال کرتے ہیں۔ رقومات کی فراہمی کو روکنا نہایت ضروری ہے۔ این آئی اے اور ای ڈی مشتبہ افراد اور گروہوں پر چھاپے مار کر اچھا کام کر رہے ہیں تاکہ دہشت گردی کی مالی معاونت کرنے والے چینلز کو بند کیاجاسکے" ۔ انہوں نے کہا کہ این آئی اے کے ذریعہ کئے گئے ڈالے جارہے چھاپے جموں و کشمیر اور ہندوستان کے دیگر حصوں میں دہشت گردی کا مقابلہ کرنے میں کارآمد ثابت ہوں گے۔

     

    یہ بھی پڑھئے: جموں وکشمیر : وزیر اعظم نریندر مودی کی ہدایت پر عوامی رابطہ مہم کے تیسرے دور کا آغاز


    وہیں معروف دفاعی ماہر لیفٹیننٹ جنرل (ریٹائرڈ) راکیش شرما کا کہنا ہے کہ حوالا چینلز کو بند کرنے سے کشمیر میں ’’ہائبرڈ دہشت گردوں‘‘ کی تعداد کو کم کرنے میں بھی مدد ملے گی۔ انہوں نے کہا کہ ہائبرڈ دہشت گردوں کو پیسے دے کر دہشت گردی کی طرف راغب کیا جاتا ہے۔ اگر دہشت گرد تنظیموں کو فنڈز کی فراہمی روک دی جائے تو دہشت گرد گروہ نوجوانوں کو بندوق اٹھانے کی ترغیب نہیں دے سکیں گے۔ اس لیے ای ڈی اور این آئی اے کے چھاپوں سے ہائبرڈ دہشت گردوں کی تعداد میں بھی کمی آئے گی۔

    قابل ذکر بات یہ ہے کہ این آئی اے نے کچھ ماہ قبل سے مشتبہ افراد اور گروہوں کے خلاف چھاپے ماری میں تیزی لائی ہے۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: