ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جموں وکشمیر میں این آئی اے کی چھاپہ مار کارروائی، 6 افراد کو این آئی اے نےکیا گرفتار

این آئی اے نے اتوارکی صبح جنوبی کشمیر کے ضلع اننت ناگ کے مختلف علاقوں میں تازہ چھاپہ مارکارروائی کو انجام دیا ہے، جس کے تحت تین علیحدہ مقامات پر این آئی اے نے جموں وکشمیر پولیس اور سی آر پی ایف کے تعاون سے یہ چھاپہ مار کارروائی انجام دی۔

  • Share this:
جموں وکشمیر میں این آئی اے کی چھاپہ مار کارروائی، 6 افراد کو این آئی اے نےکیا گرفتار
این آئی اے نے اتوارکی صبح جنوبی کشمیر کے ضلع اننت ناگ کے مختلف علاقوں میں تازہ چھاپہ مارکارروائی کو انجام دیا ہے، جس کے تحت تین علیحدہ مقامات پر این آئی اے نے جموں وکشمیر پولیس اور سی آر پی ایف کے تعاون سے یہ چھاپہ مار کارروائی انجام دی۔

جموں کشمیر: قومی تحقیقاتی ایجنسی (این آئی اے) نے اتوار کی صبح جنوبی کشمیر کے ضلع اننت ناگ کے مختلف علاقوں میں تازہ چھاپہ مارکارروائی کو انجام دیا ہے، جس کے تحت تین علیحدہ مقامات پر این آئی اے نے جموں وکشمیر پولیس اور سی آر پی ایف کے تعاون سے یہ چھاپہ مار کارروائی انجام دی۔ اس دوران اچھہ بل، سنسمہ اور پشرو جو کہ تینوں علاقے شانگس حلقہ انتخاب سے منسلک ہیں، میں این آئی اے نے کئی رہائشی گھروں پر ریڈ ڈالی اور گھروں کی باریک بینی سے تلاشی لی۔


اس دوران مکینوں سے بھی پوچھ تاچھ کی گئی اور اچھہ بل کے دو بھائیوں عمر بٹ اور اویس بٹ سمیت پانچ افراد کو گرفتار کرلیا۔ گرفتار کئے گئے دیگر افراد کی پہچان تنویر بٹ، جاوید میر اور ذیشان ملک کے طور پر ہوئی ہے۔ چھاپہ ماری کے دوران این آئی اے نے کچھ موبائل فون، لیپ ٹاپ، آدھار کارڈ اور دستاویزات بھی ان گھروں سے ضبط کئے ہیں۔ ذرائع کے مطابق، این آئی اے نے سری نگر  میں قائم ایک دارالعلوم پر بھی چھاپہ مارا ہے اور وہاں سے بھی دستاویزات اور لیپ ٹاپ کو ضبط کرکے گرفتاری عمل میں لائی گئی ہے۔


تین علیحدہ مقامات پر این آئی اے نے جموں وکشمیر پولیس اور سی آر پی ایف کے تعاون سے یہ چھاپہ مار کارروائی انجام دی۔
تین علیحدہ مقامات پر این آئی اے نے جموں وکشمیر پولیس اور سی آر پی ایف کے تعاون سے یہ چھاپہ مار کارروائی انجام دی۔


اگرچہ این آئی اے کی جانب سے ابھی تک ان الگ الگ ریڈس کے حوالے سے کوئی بھی بیان سامنے نہیں آیا ہے، لیکن ذرائع کے مطابق یہ چھاپہ ماری ٹیرر فنڈنگ معاملات سے منسلک ہو سکتی ہے۔ جبکہ این آئی اے ہر زاویے سے گرفتار کئے گئے افراد کی ہسٹری یا پھر روابط کی جانچ کر رہی ہے اور سرکار نے بھی جس طرح اب اس حوالے سے سخت رخ اپنایا ہے، اس سے یہ بات عیاں ہوتی ہے کہ ٹیرر فنڈنگ معاملات کی تحقیقات میں مزید سرعت لائی جائے گی۔  اسی ضمن میں آج اس چھاپہ ماری کو انجام دیا گیا ہے۔

اس سے قبل گزشتہ روز حکومت نے تقریباً 11 ایسے سرکاری ملازمین کو نوکریوں سے برطرف کیا، جو قوم مخالف سرگرمیوں میں ملوث پائے گئے ہیں۔ برطرف کئے گئے ملازمین میں حزب المجاہدین کے سپریم کمانڈر سید صلاح الدین کے دو فرزند بھی شامل ہیں، جن کو مبینہ طور پر ملک مخالف سرگرمیوں میں ملوث پانے کے بعد نوکریوں سے ہٹا دیا گیا ہے۔
واضح رہے کہ گزشتہ روز ہی شانگس علاقے میں سیکورٹی فورسز کے ساتھ انکاؤنٹر میں لشکرِ طیبہ سے وابستہ تین ملیٹینوں کو مارا گیا تھا۔ پولیس کے مطابق یہ ملیٹینٹ فوجی اہلکار منظور بیگ، سرپنچ رفیع احمد شاہ اور ایک اگریکلچر افسر ظہور احمد شیخ کے قتل میں ملوث تھے۔ جبکہ حال ہی میں بجبہاڑہ میں دو عام شہریوں سنجید احمد پرے اور شاہ نواز احمد بٹ کے قتل کے اصل مجرم بھی پولیس نے انہی ملیٹینٹوں کو ٹھہرایا ہے۔ ایسے میں سیکورٹی فورسز کی جانب سے کشمیر میں کامیاب انکاؤنٹر کے بعد ٹیرر فنڈنگ معاملات میں این آئی اے کی کارروائی کو کافی اہم تصور کیا جا رہا ہے۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Jul 11, 2021 01:00 PM IST