உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جموں وکشمیر: این آئی اے کی مختلف مقامات پر چھاپہ ماری، نصف درجن افراد حراست میں، تحقیقات جاری

    جموں وکشمیر: این آئی اے کی مختلف مقامات پر چھاپہ ماری

    جموں وکشمیر: این آئی اے کی مختلف مقامات پر چھاپہ ماری

    قومی تحقیقاتی ایجنسی (این آئی اے) کی جانب سے اتوار کے روز کشمیر کے 18 الگ الگ مقامات پر تازہ چھاپہ ماری عمل میں لائی گئی۔ اس دوران سری نگر سمیت جنوبی کشمیر میں مختلف رہائشی مکانات پر ریڈ ڈالے گئے اور وہاں پر تلاشی کارروائیاں انجام دی گئیں۔

    • Share this:
    سری نگر: قومی تحقیقاتی ایجنسی (این آئی اے) کی جانب سے اتوار کے روز کشمیر کے 18 الگ الگ مقامات پر تازہ چھاپہ ماری عمل میں لائی گئی۔ اس دوران سری نگر سمیت جنوبی کشمیر میں مختلف رہائشی مکانات پر ریڈ ڈالے گئے اور وہاں پر تلاشی کارروائیاں انجام دی گئیں۔ سری نگر کے سولنہ، این آئی اے نے جموں وکشمیر پولیس اور سی آر پی ایف کے اشتراک سے یہ تازہ چھاپہ ماری انجام دی اور تقریباً نصف درجن کے قریب افراد کو فی الحال پوچھ گچھ کے لئے حراست میں لے لیا گیا۔

    اس دوران این آئی اے نے موبائل فون، لیپ ٹاپ و دیگر میٹیریل بھی برآمد کر کے ضبط کرلئے۔ گرفتار شدگان میں اعجاز احمد ٹاک، مدثر احمد آہنگر، نصیر منظور میر، جنید حسن خان اور شبیر احمد خان شامل ہیں۔ ذرائع کے مطابق وائس آف ہند نامی پروپیگنڈہ میگزین اور آئی ایس آئی ایس اور ٹی آر ایف کے حوالے سے تحقیقات کے پیش نظر این آئی اے نے کشمیر میں یہ تازہ کاروائیاں انجام دیں۔ جبکہ بھٹنڈی جموں میں آئی ای ڈی کی برآمدگی کے حوالے سے بھی کئی مقامات پر چھاپہ ماری کی گئی۔

    این آئی اے نے موبائل فون، لیپ ٹاپ و دیگر میٹیریل بھی برآمد کر کے ضبط کرلئے۔ گرفتار شدگان میں اعجاز احمد ٹاک، مدثر احمد آہنگر، نصیر منظور میر، جنید حسن خان اور شبیر احمد خان شامل ہیں۔

    سری نگر کے سولنہ، آری پورہ زیون، چھتہ بل، پانزتھ قاضی گنڈ اور اچھہ بل میں چھاپہ ماری کے دوران این آئی اے نے کئی دستاویزات بھی برآمد کئے ہیں اور کچھ اہم مواد بھی تحویل میں لے لیا ہے۔ دوسری جانب گرفتار کئے گئے افراد کے اہل خانہ سے بھی موقع پر ہی پوچھ گچھ کی گئی۔دوسری جانب کچھ روز قبل سری نگر کے اسکول میں پرنسپل سپیندر کور اور ایک استاد دیپک چند کے علاوہ معروف شخصیت ایم ایل بندرو کے قتل کے معاملوں کی تحقیقات کے حوالے سے بھی این آئی اے نے تحقیقات میں شدت لائ ہے۔

    اس دوران تدریسی عملے کے تقریباً 40 افراد سے پوچھ گچھ کی گئی ہے۔ جبکہ کشمیرکے مختلف تھانوں میں درج ایف آئی آر کے تحت مطلوب سینکڑوں افراد سے بھی پوچھ گچھ جاری ہے۔ قتل کی تحقیقات کے سلسلے میں پہلے ہی لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے زیرو ٹا لیرینس کا اعادہ کیا ہے اور کہا ہے کہ کم سے لم وقت میں مجرموں کو بے نقاب کیا جائے گا اور انصاف کی رسائی کو ممکن بنایا جائے گا۔
    Published by:Nisar Ahmad
    First published: