உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    شمالی کشمیر: سعودی عرب میں 25 سالہ نوجوان محمد یونس سڑک حادثے میں ہلاک، لاش واپس لانے کے لئے حکومت سے اپیل

    شمالی کشمیر: سعودی عرب میں 25 سالہ نوجوان محمد یونس سڑک حادثے میں ہلاک

    شمالی کشمیر: سعودی عرب میں 25 سالہ نوجوان محمد یونس سڑک حادثے میں ہلاک

    سعودی عرب میں شمالی کشمیر کے ضلع بارہمولہ کےگوئیگام کنزر سے تعلق رکھنے پچیس سالہ نوجوان محمد یونس کی  ایک سڑک حادثے میں موت ہوگئی ہے۔

    • Share this:
    کشمیر: سعودی عرب میں شمالی کشمیر کے ضلع بارہمولہ کےگوئیگام کنزر سے تعلق رکھنے والے 25 سالہ نوجوان محمد یونس کی آج صبح ایک سڑک حادثے میں موت واقع ہوئی۔ یونس کے موت کی خبر سنتے ہی گوئیگام کنزر میں صف ماتم بچھ گئی۔ یونس کے گاؤں میں ہر ایک کی آنکھ نم ہے۔ یونس محمد سعودی عرب کے شہر گیزان میں قائم الامان کمپنی میں گزشتہ پانچ سالوں سے کام کر رہے تھے۔

    واضح رہے کہ یونس محمد کی شادی عید الفطر کے بعد ہونے والی تھی، جس کی تیاریاں گھر والوں نے مکمل کر رکھی تھی اور یونس محمد کو عید کے بعد اپنے گھر واپس لوٹنا تھا، لیکن خدا کو کچھ اور ہی منظور تھا۔ یونس محمد کے لواحقین اور علاقے کے لوگوں نے مرکزی وزیر خارجہ اور لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا سے اپیل کی کہ ان کی لاش کو سعودی عرب سے کشمیر واپس لانے میں مدد کی جائے تاکہ ان کے گھر میں ہی ان کی تجہیز وتکفین ہوسکے۔

    یونس کے موت کی خبر سنتے ہی گوئیگام کنزر میں صف ماتم بچھ گئی۔
    یونس کے موت کی خبر سنتے ہی گوئیگام کنزر میں صف ماتم بچھ گئی۔


    محمد یونس کی پھوپھی نے نیوز 18 اردو کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ یونس کا نکاح ہوا ہے اور عید کے بعد ان کی شادی ہونے والی تھی، لیکن وہ ارمان اب ہمارے دل میں ہی رہ گیا۔ انہوں نے کہا،"میرے اس لخت کی شادی عید کے بعد ہونے تھی، اب کیا کریں ہم اب ہم صرف سرکار سے اپیل کرتے ہیں کہ یونس کی لاش گھر واپس پہنچائی جائے تاکہ ہم اس کا آخری دیدار کرسکیں۔"

    یہ بھی پڑھیں۔

    آرٹیکل 370 کی سنوائی کو لے کر جموں وکشمیر کے دونوں سابق وزرائے اعلیٰ پر امید

    یونس محمد کے بھائی نے نیوز18اردو کے ساتھ بات چیت کرتے کہا،" یونس محمد گزشتہ پانچ سالوں سے سعودی عرب میں ایک نجی کمپنی میں کام کر رہے تھے، آج صبح جب ان کے سڑک حادثے کی خبر موصول ہوئی تو گھر میں کیا پورے گاؤں میں صف ماتم بچھ گئی۔ یونس کے ماں باپ غم سے نڈھال ہوگئے۔ اب ہم گورنر اور مرکزی وزیر خارجہ سے اپیل کرتے ہیں کہ ہمارے بھائی کی لاش واپس لانے میں مدد کی جائے۔تاکہ ان کی گھر میں ہی تجہیز وتکفین ہوسکے۔"

    طارق احمد جو یونس محمد کے عزیز دوست ہیں، نے نیوز 18 اردو کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ ان کا دل پھٹ گیا، جب انہوں نے اپنے بھائی کی موت کی خبر سنی۔ انہوں نے کہا،"میں نے جب اپنے دوست کے موت کی خبر سنی تو مجھے یقین نہیں آرہا تھا کہ ایسا ہوا ہوگا۔ میں نے جلد سعودی عرب سے پتہ کیا تو جب وہاں سے تصدیق ہوئی تو میری کمر ٹوٹ گئی۔ میں نے بہت آنسو بہائے۔ سوچتا تھا کہ اب یونس کی شادی تھی میں ان کے انتظار میں تھا کہ اب یونس آئے گا اور ہمیں شادی کی تیاری کرنی ہے، لیکن اب میں ہاتھ پہ ہاتھ درے بیٹھا ہوں۔" اب ضرورت اس بات کی اس نوجوان کی لاش کو کشمیر لانے کی کوششیں کی جانی چاہئے۔
    Published by:Nisar Ahmad
    First published: