உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پونچھ انکاؤنٹر میں دہشت گردوں کے ساتھ ہندستانی سکیورٹی فورسز سے لڑ رہے ہیں پاکستانی کمانڈوز! رپورٹ میں دعویٰ

    جموں و کشمیر :

    جموں و کشمیر :

    Jammu and Kashmir Poonch Encounter:لائن آف کنٹرول (LOC) کے قریب پونچھ Poonch کے علاقے ڈیرا والی گلی میں 10 اکتوبر کی رات ان دہشت گردوں سے پہلے انکاؤنٹر میں ایک جے سی او سمیت پانچ فوجی شہید ہوگئے تھے۔

    • Share this:
      (Jammu Kashmir): جموں و کشمیر کے ضلع پونچھ کے جنگلات میں سکیورٹی فورسز اور دہشت گردوں کے درمیان تقریبا آٹھ دنوں سے انکاؤنٹر جاری ہے۔ این ڈی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق اس تناظر میں فوج اور پولیس کے ذرائع نے بتایا کہ دہشت گردوں نے جس شدت سے تصادم کیا ہے  اس سے لگتا ہے کہ انہیں پاکستان کے کمانڈوز نے تربیت دی تھی۔ بتادیں کہ دو فوجیوں کی شہادت کے ساتھ پونچھ کے سورنکوٹ جنگل میں پیر سے شروع ہونے والے آپریشن میں اب تک نو فوجی شہید ہوچکے ہیں۔ بعد میں یہ مہم پونچھ میں مینڈھر اور راجوری میں تھانہ مندی تک پھیل گئی۔ خبر لکھنے تک یہ بھی واضح نہیں  ہے کہ کوئی دہشت گرد مارا گیا ہے یا نہیں  کیونکہ ابھی تک کوئی لاش نہیں ملی ہے۔ بڑے پیمانے پر سرچ آپریشن ، سخت محاصرے اور بھاری گولہ باری کے باوجود  گھنے جنگل کے 8 سے 9 کلومیٹر طویل علاقے میں انکاؤنٹر جاری ہے۔

      لائن آف کنٹرول (LOC) کے قریب پونچھ Poonch  کے علاقے ڈیرا والی گلی میں 10 اکتوبر کی رات ان دہشت گردوں سے  پہلے انکاؤنٹر میں ایک جے سی او سمیت پانچ فوجی شہید ہوگئے تھے۔ اس کے بعد جمعرات کو فوج کی ایک ٹیم نے دہشت گردوں کی تلاش میں نر خاص کے جنگلات میں گھات لگا کر حملہ کیا۔ اس میں دو فوجی شہید اور ایک جے سی او سمیت دو دیگر لاپتہ ہو گئے۔ ایک بھاری آپریشن کے بعد دو دن بعد ان کی لاشیں برآمد ہوئیں۔



      ذرائع نے اس خدشے کا کیا اظہار
      فوج اور مقامی پولیس کے ذرائع کا کہنا ہے کہ یہ حقیقت ہے کہ دہشت گرد آٹھ دنوں  سے ہزاروں سکیورٹی فورسز سے بچتے ہوئے لڑ رہے ہیں۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ انہیں پاک فوج کے ایلیٹ کمانڈوز نے ٹریننگ دی تھی۔ ایک پاکستانی عہدیدار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر کہا ، "پاکستانی کمانڈوز بھی دہشت گردوں کے گروپ میں شامل ہو سکتے ہیں  لیکن ہمیںیقینی طور پر تبھی معلوم ہوگا جب ہم انہیں مار  گرائیں گے۔"

      سکیورٹی فورسز سے کہا گیا ہے کہ وہ احتیاط سے آگے بڑھیں۔ اس کے ساتھ ہی یہ ہدایت بھی دی گئی ہے کہ اگر آپریشن ختم ہو جائے تو بھی اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ مزید جانی نقصان نہ ہو۔ ذرائع نے بتایا کہ دہشت گردوں کو ایک علاقے میں گھیر لیا گیا ہے۔ فوج کے پیرا کمانڈوز اور ہیلی کاپٹروں کی مدد سے سکیورٹی فورسز کو امید ہے کہ یہ انکاؤنٹر جلد از جلد ختم ہو جائے گا۔

       

      وہیں جموں و کشمیر میں فوج کی کارروائی سے بوکھلائے دہشت گردوں نے اتوار کے روز ضلع کولگام میں دو غیر مقامی مزدوروں کو گولی مار کر ہلاک اور ایک کو زخمی کردیا۔ تینوں مزدور بہار کے رہنے والے ہیں۔ اس دہشت گردانہ حملے میں راجہ ریشی دیو اور جوگندر ریشی دیو کی موت ہو گئی جبکہ ایک مزدور شدید طور پر زخمی ہوا ہے۔ قابل ذکر ہے کہ جموں و کشمیر میں تقریبا 24 گھنٹوں سے بھی کم وقت میں غیر مقامی مزدوروں پر یہ تیسرا حملہ ہے۔ بہار سے تعلق رکھنے والے گلی کوچوں کے دکاندار اروند کمار اور اترپردیش کے بڑھئی صغیر احمد کا سنیچر کی شام دہشت گردوں نے گولی مار کر قتل کردیا۔
      دہشت گردوں نے غیر مقامی مزدوروں پر اندھا دھند کی فائرنگ
      کشمیر زون پولیس Kashmir Zone Police نے اپنے ٹویٹر ہینڈل پر کہا ، "دہشت گردوں نے کولگام کے وانپوہ علاقے میں غیر مقامی مزدوروں پر اندھا دھند فائرنگ کی۔ دہشت گردی کے اس واقعے (Terrorist Attack) میں دو غیر مقامی افراد ہلاک اور ایک زخمی ہوا۔ انہوں نے بتایا کہ پولیس اور سکیورٹی فورسز نے علاقے کا محاصرہ کرلیا ہے۔ افسران کے مطابق دہشت گرد مزدوروں کے کرائے کے مکان میں داخل ہوئے اور ان پر اندھا دھند گولیاں برسائیں۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: