ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جموں وکشمیر: کورونا کے بڑھتے ہوئے کیسزسے لوگ فکرمند، لاک ڈاون کی خبروں سے تشویش

جموں کشمیر میں بھی کورونا وائرس کے کیسوں میں ایک بار پھر اضافہ دیکھنے کو مل رہا ہے۔ اگر ہم پچھلے ایک مہینے کی بات کریں گے تو مسلسل کیسوں میں اضافہ دیکھنے کو مل رہا ہے۔

  • Share this:
جموں وکشمیر: کورونا کے بڑھتے ہوئے کیسزسے لوگ فکرمند، لاک ڈاون کی خبروں سے تشویش
کورونا کے بڑھتے ہوئے کیسز کے بعد جموں وکشمیر میں لوگ فکرمند، لاک ڈون لگانے کی خبروں سے تشویش

جموں: جموں کشمیر میں بھی کورونا وائرس کے کیسوں میں ایک بار پھر اضافہ دیکھنے کو مل رہا ہے۔ اگر ہم پچھلے ایک مہینے کی بات کریں گے تو مسلسل کیسوں میں  اضافہ دیکھنے کو مل رہا ہے۔ حالانکہ ایسا بھی تھا کہ پچھلے نومبر سے لے کر فروری کے اخر تک زیادہ کیس سامنے نہیں آرہے تھے، تاہم اب مارچ کے مہینے سے مسلسل کیسوں میں اضافے سے لوگوں میں تشویش کی لہر پھیل گئی ہے۔ دوسری جانب جموں میں بھی کورونا کیسوں میں لگاتار اضافے کی وجہ سے یہاں کے ٹریڈ، سیاحت، اور تاجر طبقے سے وابستہ لوگ کافی پریشان ہے۔


کچھ تاجروں نے نیوز 18 اردو کو بتایا کہ جموں ڈویژن میں 80 فیصد لوگ کاروبار سے وابستہ ہیں اور گزشتہ کئی سالوں سے نقصان اٹھارہے ہیں، جس کی وجہ کشمیر میں نا مساعد حالات اور پچھلے سال کے لاک ڈاون کی وجہ ہے۔ اکثر تاجر، سیاح، ٹیکسی آپریٹرس، ہوٹل مالکان موجودہ صورتحال سے کافی پریشان ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ لاک ڈاون کھلنے کے بعد جب انہوں کاروبار سنبھالا تھا اب دوسرے لاک ڈاون ہونے کے خدشے سے وہ کافی مایوس نظر آرہے ہیں۔


جموں کشمیر میں بھی کورونا وائرس کے کیسوں میں ایک بار پھر اضافہ دیکھنے کو مل رہا ہے۔ اگر ہم پچھلے ایک مہینے کی بات کریں گے تو مسلسل کیسوں میں اضافہ دیکھنے کو مل رہا ہے۔
جموں کشمیر میں بھی کورونا وائرس کے کیسوں میں ایک بار پھر اضافہ دیکھنے کو مل رہا ہے۔ اگر ہم پچھلے ایک مہینے کی بات کریں گے تو مسلسل کیسوں میں اضافہ دیکھنے کو مل رہا ہے۔


جموں ٹورسٹ ٹیکسی ایسوسی ایشن کے صدر راجیش شرما کا کہنا ہے کہ سال 2016 سے ہی وہ کشمیر میں نا مساعد حالات کے شکار ہوگئے ہیں۔ اس کے بعد لاک ڈاون نے ان کی کمر توڑ دی تھی، اب اس سال انہیں امید تھی کہ باہرسے یہاں سیاح آئیں گے اور ان کے کاروبار میں اضافہ ہو، لیکن کورونا کیسز کے  بڑھتے ہوئے اضافے کی وجہ سے وہ پریشان ہوگئے ہیں، وہ چاہتے ہیں کہ اب دوبارہ لاک ڈاون نہ ہو، ایک ہوٹل مالک روی مہاجن کا کہنا ہے کہ ان کے ہوٹل میں تقریباً 50  کمرے موجود ہیں، لیکن ان دنوں پانچ سے سات ہی کمرے بک ہوتے ہیں۔

راجیش شرما نےکہا کہ انہیں اب امرناتھ یاترا اور دوسری یاتروں جو یہاں آنے والی ہے، ان سے یہاں کے مشعیت میں اضافہ ہوگا، لیکن بڑھتے کورونا کیسز کے مدنظر وہ بھی پریشانی میں مبتلا ہیں۔ انہوں نے سرکار سے لاک ڈاون نافذ نہ کرنے کی اپیل کی ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا ہے کہ وہ سرکارکی جانب سے دی گئی ایس او پیزکا بھی خاص خیال رکھیں، لیکن لاک ڈاون نہ لگایا جائے۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Mar 31, 2021 11:52 PM IST