اپنا ضلع منتخب کریں۔

    Jammu and Kashmir: جموں خطے کے سرحدی علاقوں کے عوام نے پُرامن ماحول میں منائی گئی ہولی

    جموں خطے کے پونچھ ضلع میں کنٹرول لائن کے قریب رہائش پذیر پنکج کمار نے آج کئی برسوں کے بعد پونچھ ضلع کے دگوار سیکٹر میں ہولی کی خوشیاں منائیں۔ پچیس برس کی عمر کے پنکج نے علاقے کے دیگر درجنوں نوجوانوں کے ساتھ کنٹرول لائن کے قریب رنگوں کا تہوار دھوم دھام سے منایا۔ ڈھول کی تھاپوں پر ناچتے گاتے مقامی نوجوانوں نے فوجی جوانوں پر گلال لگا کر انہیں ہولی کی مبارک باد دی۔

    جموں خطے کے پونچھ ضلع میں کنٹرول لائن کے قریب رہائش پذیر پنکج کمار نے آج کئی برسوں کے بعد پونچھ ضلع کے دگوار سیکٹر میں ہولی کی خوشیاں منائیں۔ پچیس برس کی عمر کے پنکج نے علاقے کے دیگر درجنوں نوجوانوں کے ساتھ کنٹرول لائن کے قریب رنگوں کا تہوار دھوم دھام سے منایا۔ ڈھول کی تھاپوں پر ناچتے گاتے مقامی نوجوانوں نے فوجی جوانوں پر گلال لگا کر انہیں ہولی کی مبارک باد دی۔

    جموں خطے کے پونچھ ضلع میں کنٹرول لائن کے قریب رہائش پذیر پنکج کمار نے آج کئی برسوں کے بعد پونچھ ضلع کے دگوار سیکٹر میں ہولی کی خوشیاں منائیں۔ پچیس برس کی عمر کے پنکج نے علاقے کے دیگر درجنوں نوجوانوں کے ساتھ کنٹرول لائن کے قریب رنگوں کا تہوار دھوم دھام سے منایا۔ ڈھول کی تھاپوں پر ناچتے گاتے مقامی نوجوانوں نے فوجی جوانوں پر گلال لگا کر انہیں ہولی کی مبارک باد دی۔

    • Share this:
    جموں وکشمیر: جموں خطے کے پونچھ ضلع میں کنٹرول لائن کے قریب رہائش پذیر پنکج کمار نے آج کئی برسوں کے بعد پونچھ ضلع کے دگوار سیکٹر میں ہولی کی خوشیاں منائیں۔ پچیس برس کی عمر کے پنکج نے علاقے کے دیگر درجنوں نوجوانوں کے ساتھ کنٹرول لائن کے قریب رنگوں کا تہوار دھوم دھام سے منایا۔ ڈھول کی تھاپوں پر ناچتے گاتے مقامی نوجوانوں نے فوجی جوانوں پر گلال لگا کر انہیں ہولی کی مبارک باد دی۔ کنٹرول لائن کے نہایت قریب اس علاقے میں کئی برسوں کے بعد ہولی کا جشن اتنی دھوم دھام سے منایا گیا کیونکہ یہ علاقہ ماضی میں پاکستان کی بلا اشتعال گولہ بھاری سے متاثر رہا ہے۔ تاہم رواں برس ہندوستان اور پاکستان کے مابین گزشتہ ایک برس سے زیادہ عرصے سے جنگ بندی معاہدے پر مکمل عمل آوری سے اب اس علاقے میں سکون کے حالات ہیں اور عام لوگ بلا کسی خوف وخطر کے رنگوں کا تہوار دھوم دھام سے منا پارہے ہیں۔

    نیوز 18 اردو کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے پنکج کمار نے کہا،"گزشتہ کئی برسوں سے اس علاقے میں پاکستان کی بلا اشتعال گولہ بھاری سے لوگ سہم کر رہ جاتے تھے۔ گولہ بھاری کی وجہ سے یہاں زندگی کا ہر شعبہ متاثر ہوجاتا تھا۔ لوگ اکثرو بیشترگولہ بھاری ہونے کے باعث اپنے ہی گھروں میں رہنے کو ترجیح دیتے تھے۔ اب جبکہ دونوں ممالک کے درمیان گزشتہ 13 ماہ سے جنگ بندی معاہدے پر سختی سے عمل کیا جارہا ہے، لوگوں نے راحت کی سانس لی ہے۔ جنگ بندی کی وجہ سے ہی میں آج اپنے دوستوں کے ہمراہ اپنے فوجی بھائیوں کے ساتھ ہولی منانے آیا ہوں اور یہ میرے لئےخوشی کا لمحہ ہے"۔

    کنٹرول لائن کے نہایت قریب اس علاقے میں کئی برسوں کے بعد ہولی کا جشن اتنی دھوم دھام سے منایا گیا کیونکہ یہ علاقہ ماضی میں پاکستان کی بلا اشتعال گولہ بھاری سے متاثر رہا ہے۔
    کنٹرول لائن کے نہایت قریب اس علاقے میں کئی برسوں کے بعد ہولی کا جشن اتنی دھوم دھام سے منایا گیا کیونکہ یہ علاقہ ماضی میں پاکستان کی بلا اشتعال گولہ بھاری سے متاثر رہا ہے۔


    ایک اور مقامی نوجوان اکشے شرما کا کہنا ہے کہ فوجی بھائیوں کے ساتھ رنگوں کا تہوار منانا ایک منفرد تجربہ ہے۔ نیوز 18 اردو کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہا،"کنٹرول لائن سے متصل علاقوں میں تقریباً 13 ماہ سے ماحول پُرسکون ہے اور ہم یہاں بلا کسی خوف وخطر کے آج ہولی کا تہوار منا سکے ہیں۔ رنگوں کے تہوار ہولی کو اس سال علاقے کے عوام نے مذہبی عقیدت اور دھوم دھام سے منایا۔ مجھے اس بات کی خوشی ہے کہ میں نے اپنے آبائی وطن سے دور ملک کی سرحدوں کی نگہبانی کرنے والے فوجی بھائیوں کے ساتھ یہ تہوار منایا"۔ ہولی کے اس جشن میں ایک اور مقامی نوجوان سمیر نے کہا کہ بھارت اور پاکستان کے مابین گولہ بھاری بند ہوجانے سے علاقے کے لوگ کئی برسوں کے بعد آج پرامن ماحول میں ہولی کے رنگوں میں رنگ چکے ہیں۔

    یہ بھی پڑھیں۔

    جموں وکشمیر: Lashkar-e-Taiba کے نئے ماڈیول کا انکشاف، دہشت گردوں کے 6 مشتبہ معاونین گرفتار

    انہوں نے کہا، "ہم چاہتے ہیں کہ دونوں ممالک جنگ بندی معاہدے پر مستقبل میں بھی جنگ بندی معاہدے پر سختی سے کار بند رہیں تاکہ کنٹرول لائن سے متصل علاقوں میں رہائش پذیر عوام ہولی سمیت دیگر تمام تہوار پُر امن ماحول میں منا سکیں"۔ مقامی نوجوانوں کے ساتھ ہولی منانے والے فوجی جوان بھی ہولی کی دھوم سے پر مسرت دکھائی دے رہے تھے۔

     

    واضح رہے کہ گزشتہ برس 25 فروری کو ہندوستان اور پاکستان کے ڈی جی ایم اوز نے ایک مشترکہ اعلانیہ جاری کرکے دونوں ممالک کے درمیان لگنے والی بین الاقوامی سرحد اور کنٹرول لائن پر جنگ بندی معاہدے پر دوبارہ عمل پیرا رہنے کا اعلان کیا تھا، جس کے بعد جموں وکشمیر میں بھی سرحدوں اور کنٹرول لائن پر گولہ بھاری رک چکی ہیں۔
    Published by:Nisar Ahmad
    First published: