ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جموں و کشمیر: سال رواں کے دوران 75 آپریشنز میں 180 دہشت گرد مارے گئے: پولیس سربراہ دلباغ سنگھ کا دعویٰ

جموں و کشمیر پولیس کے سربراہ دلباغ سنگھ نے کہا ہے کہ جموں وکشمیر میں سال رواں کے دوران اب تک 75 دہشت گردانہ مخالف آپریشنز میں 180 دہشت گرد مارے جا چکے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس کے علاوہ 138 دہشت گردوں اور دہشت گرد اعانت کاروں کو گرفتار بھی کیا گیا ہے۔

  • UNI
  • Last Updated: Oct 12, 2020 05:09 PM IST
  • Share this:
جموں و کشمیر: سال رواں کے دوران 75 آپریشنز میں 180 دہشت گرد مارے گئے: پولیس سربراہ دلباغ سنگھ کا دعویٰ
جموں و کشمیر: سال رواں کے دوران 75 آپریشنز میں 180 دہشت گرد مارے گئے: پولیس سربراہ دلباغ سنگھ کا دعویٰ

سری نگر: جموں و کشمیر پولیس کے سربراہ دلباغ سنگھ نے کہا ہے کہ جموں وکشمیر میں سال رواں کے دوران اب تک 75 دہشت گردانہ مخالف آپریشنز میں 180 دہشت گرد مارے جا چکے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس کے علاوہ 138 دہشت گردوں اور دہشت گرد اعانت کاروں کو گرفتار بھی کیا گیا ہے۔ دلباغ سنگھ نے پیر کے روز یہاں پولیس کنٹرول روم میں منعقدہ ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا: 'جموں و کشمیر میں اس سال اب تک 75 کامیاب آپریشنز ہوچکے ہیں جن میں 180 دہشت گرد مارے گئے ہیں۔ اس کے علاوہ 138 دہشت گردوں اور دہشت گرد اعانت کاروں کو بھی گرفتار کیا جا چکا ہے'۔

جموں و کشمیر پولیس کے سربراہ دلباغ سنگھ نے کہا کہ پچھلے سال کے مقابلے میں سال رواں کے دوران دہشت گردوں کی ہلاکتوں اور گرفتاریوں کی تعداد زیادہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ سال رواں کے دوران الگ الگ دہشت گرد مخالف آپریشنز کے دوران پولیس کے تقریباً 19، سی آر پی ایف کے 21 اور فوج کے 15 اہلکار بھی مارے گئے۔ انہوں نے کہا کہ سال رواں کے دوران اب تک 26 نوجوانوں نے دہشت گرد تنظیموں کی صفوں سے علاحدگی اختیار کی ہے۔ پولیس سربراہ نے کہا کہ دو روز قبل ہی ایک دہشت گرد نے کولگام میں ایک تصادم کے دوران سرینڈر کیا۔



جموں و کشمیر پولیس کے سربراہ دلباغ سنگھ نے کہا: 'دو روز قبل ہی ضلع ڈوڈہ سے تعلق رکھنے والے فردوس احمد نامی ایک دہشت گرد نے کولگام میں تصادم کے دوران سرینڈر کیا جو اس وقت پولیس حراست میں ہے اور اس کی پوچھ گچھ جاری ہے'۔ دلباغ سنگھ نےکہا کہ سال رواں کے دوران ہونے والے 75 دہشت گردانہ مخالف آپریشنز کے دوران بتہ مالو آپریشن کے دوران ایک خاتون کی موت کے بجز باقی کسی بھی آپریشن میں کسی عام شہری کی موت واقع نہیں ہوئی۔

Published by: Nisar Ahmad
First published: Oct 12, 2020 05:09 PM IST