ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جموں وکشمیر: بی جے پی کے تین کارکنوں کی ہلاکت کے الزام میں مشتبہ دہشت گردظہوراحمد گرفتار

انسپکٹر آف پولیس وجے کمار نے بتایا کہ پولیس ٹیم کو انٹلیجنس کی جانب سےخفیہ اطلاع موصول ہوا تھی کہ سامبا کے علاقے میں ایک دہشت گرد موجود ہے۔خفیہ اطلاعات کی بنیاد پر ، پولیس نے 12 اور 13 فروری کی رات کو اننت ناگ کے سمبا سے ٹی آر ایف کے دہشت گرد ظہور احمد راتھر کو گرفتار کرنے میں کامیابی حاصل کی ہے۔ ہم آپ کو بتادیں کہ ٹی آر ایف لشکر طیبہ کی تنظیم ہے ۔

  • Share this:
جموں وکشمیر: بی جے پی کے تین کارکنوں کی ہلاکت کے الزام میں مشتبہ دہشت گردظہوراحمد گرفتار
علامتی تصویر

سری نگر:جموں وکشمیر پولیس نے لشکرِ طیبہ کی تنظیم ٹی آر ایف (The Resistance Front) سے تعلق رکھنے والے دہشت گرد ظہور احمد عرف خالد عرف ساحل کو گرفتار کرلیاہے۔ جس نے کولگام ضلع میں گذشتہ سال تین بی جے پی کارکنوں کا قتل کیا تھا۔ جموں وکشمیر پولیس نے سامبا ضلع سے ٹی آر ایف دہشت گرد ظہور کو گرفتار کیا ہے۔ بی جے پی کارکنوں کے ساتھ مل کر اس دہشت گرد نے کولگام میں ایک پولیس اہلکار کو بھی ہلاک کردیا۔


انسپکٹر آف پولیس وجے کمار نے بتایا کہ پولیس ٹیم کو انٹلیجنس کی جانب سےخفیہ اطلاع موصول ہوا تھی کہ سامبا کے علاقے میں ایک دہشت گرد موجود ہے۔خفیہ اطلاعات کی بنیاد پر ، پولیس نے 12 اور 13 فروری کی رات کو اننت ناگ کے سمبا سے ٹی آر ایف کے دہشت گرد ظہور احمد راتھر کو گرفتار کرنے میں کامیابی حاصل کی ہے۔ ہم آپ کو بتادیں کہ ٹی آر ایف لشکر طیبہ کی تنظیم ہے ۔



وجے کمار نے کہا کہ ظہور نے گزشتہ سال کولگام میں بی جے پی کے تین کارکنوں کے ساتھ ساتھ جنوبی کشمیر کے ضلع میں ایک پولیس اہلکار کو بھی ہلاک کیا تھا۔ آپ کو بتادیں کہ گذشتہ سال 29 اکتوبر کو کولگام کے علاقے وائے کے پورہ میں بھارتیہ جنتا پارٹی کے تین کارکن ، فدا حسین ، عمر رشید اور عمر رمضان کا قتل کیاگیاتھا۔ ان تمام معاملوں میں ظہور احمد کے ملوث ہونے کا امکان ہے۔
Published by: Mirzaghani Baig
First published: Feb 13, 2021 10:49 AM IST