உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جموں و کشمیر: تین بچوں کی ماں سبرینہ خالق نے دسویں جماعت کے پرائیویٹ بورڈ امتحانات میں کیا ٹاپ

    جموں و کشمیر: تین بچوں کی ماں سبرینہ خالق نے دسویں جماعت کے پرائیویٹ بورڈ امتحانات میں کیا ٹاپ

    جموں و کشمیر: تین بچوں کی ماں سبرینہ خالق نے دسویں جماعت کے پرائیویٹ بورڈ امتحانات میں کیا ٹاپ

    Jammu and Kashmir : شمالی کشمیر کے کپواڑہ ضلع کے گلگام علاقے کی رہنے والی سبرینہ خالق نے دسویں جماعت کے پرائیویٹ بورڈ امتحانات میں ٹاپ کیا ہے ۔ تین بچوں کی ماں 10ویں جماعت کے سالانہ امتحان میں ٹاپ کر کے شادی شدہ خواتین کے لئے ایک تحریک بن گئی ہے

    • News18 Hindi
    • Last Updated :
    • Jammu and Kashmir | Jammu | Srinagar
    • Share this:
    جموں و کشمیر : شمالی کشمیر کے کپواڑہ ضلع کے گلگام علاقے کی رہنے والی سبرینہ خالق نے دسویں جماعت کے پرائیویٹ بورڈ امتحانات میں ٹاپ کیا ہے ۔  تین بچوں کی ماں 10ویں جماعت کے سالانہ امتحان میں ٹاپ کر کے شادی شدہ خواتین کے لئے ایک تحریک بن گئی ہے ۔ سبرینہ نے 500 میں سے 467 نمبرات حاصل کئے ہیں، جو پورے وادی کشمیر میں سب سے زیادہ 93.4 فیصد کے ساتھ اور اے ون گریڈ کے چار مضامین ریاضی، اردو، سائنس اور سوشل سائنس میں ہیں۔ سبرینہ نے 2012 میں 9ویں جماعت پاس کرنے کے بعد اگلے سال اس کی شادی ہوگئی اور وہ گھر کے کاموں میں مصروف رہیں ۔ سبرینہ کا کہنا ہے کہ میرے لئے پڑھائی کے لیے وقت نکالنا واقعی مشکل تھا، لیکن میں اپنی دو بڑی بیٹیوں کے اسکول جانے کے بعد پڑھائی کرتی تھی اور دن میں کچھ گھنٹے مطالعہ کرتی تھی اور مشکل سوالات کے لئے میں شام کے وقت ان کو سمجھنے کے لئے یوٹیوب کا استعمال کرتی تھی۔

     

    یہ بھی پڑھئے: جموں وکشمیر: غلام نبی آزاد نے کہا وزیر اعظم نریندر مودی یوں ہی کسی کے لئے آنسو نہیں بہاتے


    اپنے تین نابالغ بچوں کی دیکھ بھال کرتے ہوئے اپنی پڑھائی دوبارہ شروع کرنا کبھی بھی آسان نہیں تھا، لیکن میں نے اس سال 10ویں سالانہ امتحان میں شرکت کرنے کا ارادہ کر لیا تھا۔ ابتدائی طور پر میں جو پڑھ رہی تھی، اسے برقرار رکھنا آسان نہیں تھا، لیکن وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ میں چیزوں کو سمجھنے میں کامیاب ہوگئی۔ سبرینہ کا کہنا ہے کہ اپنے اسکول کے دنوں میں میں اپنی کلاس میں سب سے ذہین ہوا کرتی تھی، جس نے مجھے اچھے نمبرات حاصل کرنے کا حوصلہ دیا۔ مجھے پہلی پوزیشن حاصل کرنے کا یقین نہیں تھا، لیکن مجھے ٹاپرز میں شامل ہونے کا احساس تھا ۔

     

    یہ بھی پڑھئے: شمالی کشمیر: ضلع بارہمولہ پٹن کے معراج الدین خان نے پہلی ہی کوشش میں نیٹ کوالیفائی کیا


    سبرینہ کی دو بیٹیاں اور ایک بیٹا ہے۔ بڑی بیٹی آٹھ سال کی ہے اور کلاس 2 میں پڑھتی ہے ۔ سبرینہ نے نیوز18 سے بات کرتے ہوئے کہا کہ وہ دن گئے جب خواتین شادی کے بعد اپنی پڑھائی چھوڑ دیتی تھیں۔ اب منظر نامہ بدل گیا ہے اور میری کامیابی یقینی طور پر دیہی علاقوں میں رہنے والی خواتین کے لئے مشعل راہ ثابت ہوگی ۔ سبرینہ کے والد خالق احمد کا کہنا ہے کہ مجھے اپنی بیٹی پر فخر ہے کہ اس نے شادی کے بعد اپنی پڑھائی جاری رکھی اور آج اپنے ماں باپ کا نام روشن کردیا اور اس کے سسرال والوں کیلئے بھی فخر کی بات ہے کہ اس کے شوہر اور گھر والوں نے اسے پڑھنے کا وقت دیا ۔

    انہوں نے کہا کہ امید ہے کہ میری بیٹی دوسری لڑکیوں کیلئے ایک مشعل راہ ثابت ہوگی ۔ سبرینہ نے کہا کہ میرے شوہر کافی خوش ہیں اور وہ ہر وقت مجھے کتابیں پڑھنے کیلئے وقت فراہم کرتے تھے اور مجھے کوئی دباؤ یا پریشان نہیں کرتے ۔ سبرینہ نے کہا کہ مجھے اپنے سسرال والوں پر ناز ہے کہ انہوں نے مجھے پڑھائی کیلئے وقت دیا۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: