உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    سرحد پار پہنچی نظم،مقصد لے کر لوٹی۔۔۔ ملا دئیے 400 بچھڑے خاندان

    رومی کے سوشل میڈیا پیج 'اپنا پونچھی پریوار' پر 80 ہزار سے زیادہ لوگ جڑے ہوئے ہیں۔

    رومی کے سوشل میڈیا پیج 'اپنا پونچھی پریوار' پر 80 ہزار سے زیادہ لوگ جڑے ہوئے ہیں۔

    رومی کا کہنا ہے کہ شروع میں کچھ لوگوں نے انہیں خفیہ ایجنسی را کا ایجنٹ کہنا شروع کیا لیکن آہستہ آہستہ لوگ مقصد اور نیت دونوں کو سمجھ گئے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Jammu | Srinagar
    • Share this:
      قریب پانچ سال پہلے پونچھی زبان میں لکھی نظم کا ایک ویڈیو سوشل میڈیا پر شیئر ہوا۔ وائرل ہو کر ایل او سی پار پاکستان کے زیر قبضہ جموں و کشمیر (پی او کے) پہنچ گیا۔ اس پار پونچھی زبان لوگوں میں ویڈیو مشہور ہوگیا۔ اسی بیچ پی او کے کے ایک بزرگ نے ایک بچے سے ویڈیو پیغام بھجوایا کہ 1947 میں ان کی بہن اس پار آگئی تھی۔ اس کا نام جانکی تھا اور اس کی آنکھ کے نیچے کالا مسسا تھا۔ اس کا حال بتادیں تو مہربانی ہوگی۔

      ویڈیو شیئر کرنے والی رومی شرما نے جانکی کا خاندان ڈھونڈ نکالا۔ اس پہلے معاملے سے ملی خوشی نے رومی کو مقصد دیا۔ 2018 میں پی او جے کے کے پلندری میں گورا گاون واقعہ بللی سرگیل کے میرو بابا کا خاندان ملانے سے شروع ہوا سفر آج 400 خاندانوں تک پہنچ گیا ہے۔ نہ صرف جموں -کشمیر بلکہ دونوں ملکوں کی تقسیم سے بچھڑے دیگر ریاستوں سے کئی خاندان بھی دہائیوں بعد ایک دوسرے کے ساتھ رابطے میں آئے ہیں۔ 1947 میں راجستھان کے گنگانگر کے ایک خاندان سے بچھڑی بھججو بھی اپنے خاندان سے ملیں جو پاکستان جانے کے بعد سکینہ بن چکی تھی۔

      دادا-دادی کی زبانی جانا درد
      جموں میں گاڑی گڑھ رہنے کے بعد دلی شفٹ ہوئی رومی شرما ٹی وی ایکٹر اور رائٹر ہیں، جن کے دادا دادی 1947 میں پی او جے کے پلندری سے راتوں رات بھاگ آئے تھے۔ رومی شرما نے بتایا کہ دادا دادی ایل او سی کے اس طرف آنے پر اپنے پرانے گھر کو یاد کرتے تھے۔ پونچھ بولی میں گھر کا ذکر کرتے ہوئے وہ ایل او سی پار اپنی جڑوں سے جڑنے کی حسرت ب یان کرتے تھے۔ دادا دادی گزر گئے یکن بڑے ہونے پر ان کا یہ درد سمجھ میں آیا اور اب اُس پیڑھی کے بچھڑے لوگوں کو ملانا زندگی کا مقصد بن گیا ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      جموں و کشمیر کی خواتین ملک کی سرحدوں کی حفاظت کیلئے ہورہی ہیں تیار

      یہ بھی پڑھیں:
      ترک صدر رجب طیب اردوان نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے کیاخطاب، چھیڑا مسئلہ کشمیر

      رومی کے سوشل میڈیا پیج 'اپنا پونچھی پریوار' پر 80 ہزار سے زیادہ لوگ جڑے ہوئے ہیں۔ یہ پلیٹ فارم کنٹرول لائن کے دونوں طرف کے لوگوں کا پیغام ایک دوسرے تک پہنچاتا ہے۔ رومی کا کہنا ہے کہ شروع میں کچھ لوگوں نے انہیں خفیہ ایجنسی را کا ایجنٹ کہنا شروع کیا لیکن آہستہ آہستہ لوگ مقصد اور نیت دونوں کو سمجھ گئے۔ ان کا پلیٹ فارم عوامی ہے اس لیے انہیں کوئی خوف نہیں ہے۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: