உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    گھروں کے اندر بھی اب اگائی جاسکتی ہے وادی کشمیر میں زعفران کی فصل

    وادی کشمیر میں اب زعفران کی پیداوار کو اپنے گھروں کے اندر بھی اگایا جاسکتا ہے جس کی مثال شار شالی پانپور کے رہنے والے ایک بزرگ کسان عبد المجید وانی نے دکھائی ہے۔

    وادی کشمیر میں اب زعفران کی پیداوار کو اپنے گھروں کے اندر بھی اگایا جاسکتا ہے جس کی مثال شار شالی پانپور کے رہنے والے ایک بزرگ کسان عبد المجید وانی نے دکھائی ہے۔

    وادی کشمیر میں اب زعفران کی پیداوار کو اپنے گھروں کے اندر بھی اگایا جاسکتا ہے جس کی مثال شار شالی پانپور کے رہنے والے ایک بزرگ کسان عبد المجید وانی نے دکھائی ہے۔

    • Share this:
    وادی کشمیر میں اب زعفران کی فصل کو اپنے گھروں کے اندر بھی اگایا جاسکتاتا ہے جس کو شار شالی کے پانپور کے ایک کسان نےکرکے دکھایا ہے۔ وادی کشمیر میں اب زعفران کی پیداوار کو اپنے گھروں کے اندر بھی اگایا جاسکتا ہے جس کی مثال شار شالی پانپور کے رہنے والے ایک بزرگ کسان عبد المجید وانی نے دکھائی ہے۔ جس کا افتتاح  آج محکمہ زراعت کے ڈائریکٹر محمد اقبال چودھری نے کیاہے عبدل مجید کا کہنا ہے یہ ٹیکونالجی زعفران رسرچ سینٹر پانپور کے ساینس دانوں نے انہیں فراہم کی جس کے بعد وہ اس مشن میں کامیاب ہوئے ہیں زعفران رسرچ سینٹر کے ساینس دان بشیر احمد کہتے ہیں۔

    انہوں نے اس کا پہلا ٹرائل رن دسو زعفران رسرچ سینٹر میں کیا ہے اور اب یہ ٹیکنالوجی کسانوں کو فراہم کی جارہی ہے تاکہ جو لوگ زعفران اگانے کو شوقین ہوں گے اور جن کے پاس زمین نہیں ہوگی وہ اس ٹیکنالوجی مدد سے زعفران کو اپنے گھروں کے اندر اگاسکتے ہیں۔ اگرچہ اسے پہلے ملک میں صرف کشمیر میں ہی کئی مخصوص جگہوں پر ہی زعفران کی کاشت کی جاتی تھی۔ تاہم اب وادی کے ہر علاقے میں ہر کوئی اپنے گھر کے اندر یہ قیمتی فصل اگا سکتا ہے اور ملک کے دیگر ریاستوں میں بھی اس ٹیکانوجی کو لے جا نے کی کوشش کی جارہی ہے۔



    حالانکہ پچھلے کئی سالوں سے زعفران کی پیداوار میں نمایاں کمی درج کی گئی ہے تاہم اس نئی ٹیکنالوجی کی بدولت اس صعنت کو کافی فروغ مل سکتا ہے۔ ناظم زراعت محمد اقبال چودری نے نیوز ایٹین اردو سے بات کرتے ہوئے کہا کہ محکمہ زراعت کسانوں کو انڈور سعفران اگانے ہر طرح کی مدد فراہم کرے گی۔
    Published by:Sana Naeem
    First published: