உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جموں وکشمیر: سجاد غنی لون نےکہا- پانچ اگست 2019 کے فیصلوں کے خلاف کشمیر میں غیر معمولی غم و غصہ

    جموں وکشمیر: سجاد غنی لون نےکہا- پانچ اگست 2019 کے فیصلوں کے خلاف کشمیر میں غیر معمولی غم و غصہ

    جموں وکشمیر: سجاد غنی لون نےکہا- پانچ اگست 2019 کے فیصلوں کے خلاف کشمیر میں غیر معمولی غم و غصہ

    جموں و کشمیر پیپلز کانفرنس کے چیئرمین سجاد غنی لون نے کہا کہ پانچ اگست 2019 کے فیصلوں کے خلاف وادی کشمیر میں غیر معمولی نوعیت کا غم و غصہ ہے۔

    • Share this:

      سری نگر: جموں و کشمیر پیپلز کانفرنس کے چیئرمین سجاد غنی لون نے کہا کہ پانچ اگست 2019 کے فیصلوں کے خلاف وادی کشمیر میں غیر معمولی نوعیت کا غم و غصہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ نئی دہلی اور سری نگر کے درمیان کیمونی کیشن گیپ پیدا نہیں ہونا چاہیے اور خیالات کا تبادلہ جاری رہنا انتہائی ضروری اور لازمی ہے۔
      سجاد غنی لون نے اتوارکو یہاں نامہ نگاروں سے گفتگو میں کہا: 'چیزیں ایک جیسی نہیں رہتیں۔ حالات بدلتے رہتے ہیں۔ پانچ اگست 2019 کے بعدکشمیرکی سیاست بیک فٹ پر چلے گئی ہے۔ تاریخ گواہ ہے کہ کوئی بھی قوم ہمیشہ کےلئے بیک فٹ پر نہیں رہتی'۔




      سجاد غنی لون نے کہا کہ پانچ اگست 2019 کے فیصلوں کے خلاف وادی میں جو غم و غصہ پایا جا رہا ہے وہ معمولی نوعیت کا نہیں ہے۔
      سجاد غنی لون نے کہا کہ پانچ اگست 2019 کے فیصلوں کے خلاف وادی میں جو غم و غصہ پایا جا رہا ہے وہ معمولی نوعیت کا نہیں ہے۔

      سجاد غنی لون کا مزید کہنا تھا: 'ہمارا بھی فرنٹ فٹ پرکھیلنے کا وقت آئے گا۔ لیڈرشپ ایسے کام نہیں کر سکتی، جس کی وجہ سے اس کی قوم کو نقصان پہنچے۔ لیڈرشپ کی سب سے بڑی صلاحیت اپنے نوجوانوں اور قوم کو بچانا ہونی چاہیے'۔
      جموں و کشمیر پیپلز کانفرنس کے چیئرمین سجاد غنی لون نے کہا کہ پانچ اگست 2019 کے فیصلوں کے خلاف وادی میں جو غم و غصہ پایا جا رہا ہے وہ معمولی نوعیت کا نہیں ہے۔ تاہم ان کا ساتھ ہی کہنا تھا: 'دلی اور سری نگر کے درمیان کیمونی کیشن گیپ پیدا نہیں ہونا چاہئے۔ خیالات کا تبادلہ جاری رہنا انتہائی ضروری اور لازمی ہے'۔


      نیوز ایجنسی یو این آئی اردو کے اِن پُٹ کے ساتھ

      Published by:Nisar Ahmad
      First published: