உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    علمائے اکرام نے وادی کشمیر کے اسکولوں میں بھجن گانے اور سُوریہ نمسکار بند کرانے کا حکومت سے کیا مطالبہ

    وادی کشمیر کی تیس سے زیادہ اسلامی اور تعلیمی تنظیموں پر مشتمل اس تنظیم نے بقول اسکے یوگا اور مارننگ اسمبلی کے نام پر بچوں سے اسکولوں میں بھجن گانے اور وسُریہ نمسکار کرانے پر اپنی ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے اسے فوری طور بند کرنے کی سرکار سے مانگ کی ہے۔

    وادی کشمیر کی تیس سے زیادہ اسلامی اور تعلیمی تنظیموں پر مشتمل اس تنظیم نے بقول اسکے یوگا اور مارننگ اسمبلی کے نام پر بچوں سے اسکولوں میں بھجن گانے اور وسُریہ نمسکار کرانے پر اپنی ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے اسے فوری طور بند کرنے کی سرکار سے مانگ کی ہے۔

    وادی کشمیر کی تیس سے زیادہ اسلامی اور تعلیمی تنظیموں پر مشتمل اس تنظیم نے بقول اسکے یوگا اور مارننگ اسمبلی کے نام پر بچوں سے اسکولوں میں بھجن گانے اور وسُریہ نمسکار کرانے پر اپنی ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے اسے فوری طور بند کرنے کی سرکار سے مانگ کی ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Jammu and Kashmir, India
    • Share this:
      جموں: میر واعظ کشمیر مولوی محمد عمر فاروق کی سربراہی والے متحدہ مجلس علما نے وادی کشمیر کے اسکولوں میں بھجن گانے اور سُریہ نمسکار بند کرانے کی مانگ کی ہے۔ وادی کشمیر کی تیس سے زیادہ اسلامی اور تعلیمی تنظیموں پر مشتمل اس تنظیم نے بقول اسکے یوگا اور مارننگ اسمبلی کے نام پر بچوں سے اسکولوں میں بھجن گانے اور سُوریہ نمسکار کرانے پر اپنی ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے اسے فوری طور بند کرنے کی سرکار سے مانگ کی ہے۔ ایم ایم یو کی سرینگر میں ہوئی ایک میٹنگ میں کہا گیا کہ اس طرح کے اقدامات سے مسلمانوں کے مذہبی جزبا ت مجروح ہورہے ہیں جس سے اس برادری میں ناراضگی پائی جارہی ہے۔

      یہ معاملہ حال ہی میں کولگام کے ایک اسکول میں بچوں کی طرف سے رگھو پتی راگھو راجا رام گانے ایک ویڈیو وائرل ہونے کے بعد سامنے آیا ہے۔ ایم ایم یو نے میٹنگ میںالزام لگایا ہے کہ ایسی کوششیں وادی کی مسلم شناخت کو کمزور کرنےکے لئے کی جارہی ہیں جس کی وہ مخالفت کرتے ہیں۔ ایم ایم یو نے سرکار اور محکمہ تعلیم سے کہا ہے کہ ایسی کوششوں کو کبھی برداشت نہیں کیا جائے گا کیونکہ یہ مسلمانوں کے مذہبی عقیدے کے خلاف ہیں۔

      اسکولوں میں بچوں کے بھجن گانے پر اعتراض، بی جے پی پر جم کر بھڑکیں محبوبہ مفتی

      ایم ایم یو نے سرکار اور دیگر حکام کو ایسا فوری طور بند کرانے کی مانگ کرتے ہوئے والدین سے بھی کہا ہے کہ اگر اسکولوں میں یہ سلسلہ جاری رہا تو انہیں اپنے بچے سرکاری اسکولوں سے نکال کر نجی اسکولوں میں داخل کرنے چاہئیں۔ اس تنظیم نے مسلمان اساتذہ سے بھی کہا ہے کہ وہ بچوں کو اس قسم کی ترغیب دینا بند کریں۔ متحدہ مجلس علما نے میٹنگ کے دوران اس بات پر اطمینان کا اظہار کیا کہ سرکار اب سرینگر کی جامع مسجد میں پانچ وقت کی نماز کی اجازت دے رہی ہے اور لوگوں کو وہاں جمع ہونے سے روکا نہیں جارہا ہے۔

      پاکستان میں فوج کا ہیلی کاپٹر گر کر تباہ، 2 میجر سمیت 6 فوجیوں کی موت

      ایرانی پولیس کی مظاہرہ کرنے والی خواتین پر گولیوں کی بارش، اب تک 50 کی موت

      ان علما نے تنظیم کے سربراہ مولانا عمر فاروق کی نظر بندی فوری طور ختم کرنے کی بھی سرکار سے مانگ کی ہے۔ واضح رہے کہ پیوپلز ڈیموکریٹک پارٹی کی صدر محبوبہ مفتی نے بھی اسکولوں میں بقول ان کے بھجن گانے کے اس سلسلے پر ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے الزام لگایا ہے کہ بی جے پی اپنے ہندوتوا کے ایجنڈے کو وادی کشمیر میں لاگو کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔

      (رپورٹ: رمیش امباردار)
      Published by:Sana Naeem
      First published: