உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کشمیر میں لشکر کےٹاپ دہشت گرد اور اس کے ساتھی کی موت کی وجہ بنا فٹبال میچ، جانیں کیسے

    کشمیر میں لشکر کےٹاپ دہشت گرد اور اس کے ساتھی کی موت کی وجہ بنا فٹبال میچ، جانیں کیسے

    کشمیر میں لشکر کےٹاپ دہشت گرد اور اس کے ساتھی کی موت کی وجہ بنا فٹبال میچ، جانیں کیسے

    دہشت گردوں کو ختم کرنے کے آپریشن کو خفیہ رکھا گیا تھا اور صرف مٹھی بھر افسران کو اطلاع تھی۔ آپریشن کو انجام دینے والی ٹیم کو سینئر افسران نے منتخب کیا تھا۔

    • Share this:
      سری نگر: جموں وکشمیر پولیس (Jammu and Kashmir Police) نے پیر کے روز ایک بے حد خفیہ مہم میں لشکر طیبہ (Lashkar-e-Taiba) کی ذیلی تنظیم ’دی ریسسٹنس فورس (TRF)‘ کے دو اعلیٰ کمانڈروں کو مار گرایا۔ یہ شہر میں کئی لوگوں کا قتل اور نوجوانوں کو ہتھیار اٹھانے کے لئے گمراہ کرنے میں شامل تھے۔ سب سے لمبے وقت تک سرگرم دہشت گردوں میں سے ایک اور ٹی آر ایس کا سربراہ عباس شیخ (Abbas Sheikh) اور اس کا معاون (ڈپٹی) ثاقب منظور (Saqib Manzoor) شہر کے الوچی باغ علاقے میں پولیس کے ساتھ تصادم میں مارے گئے۔

      ذرائع نے اطلاع دی کہ دہشت گردوں کو ختم کرنے کے آپریشن کو خفیہ رکھا گیا تھا اور صرف مٹھی بھر افسران کو اطلاع تھی۔ آپریشن کو انجام دینے والی ٹیم کو سینئر افسران نے منتخب کیا تھا۔ انہوں نے منصوبہ بنایا اور آپریشن کو انجام دیا۔ ذرائع نے کہا کہ پولیس گزشتہ کچھ دنوں سے دونوں دہشت گردوں کی سرگرمیوں پر نظر رکھ رہی تھی۔ اس دوران انہیں پتہ چلا کہ دونوں مقامی ٹیموں کے درمیان کھیلے جانے والے فٹبال میچ دیکھنے کے لئے الوچی باغ کے کھاد فیکٹری گراونڈ آئیں گے۔

      ذرائع نے یہ بھی کہا کہ آپریشن کا منصوبہ بنانے اور اسے انجام دینے سے قبل یہ یقینی بنایا گیا تھا کہ کوئی اور نقصان نہ ہو۔ اس کے ساتھ ہی دہشت گردوں کو گھیرنے کے بعد انہیں خود سپردگی کا موقع دیا جائے۔

      کشمیر زون کے ڈی جی پی نے بتائی کامیابی کی وجہ

      کشمیر زون کے پولیس جنرل ڈائریکٹر وجے کمار نے بتایا، ’ہمیں علاقے میں ان کی موجودگی کی جانکاری تھی۔ سادی وردی میں پولیس کے جوانوں نے فوراً علاقے کو گھیر لیا اور دہشت گردوں کو للکارا، جنہوں نے ان پر گولیاں چلانی شروع کردی۔ پولیس نے جوابی کارروائی میں گولیاں چلائی اور یہ دونوں مارے گئے‘۔ انہوں نے بتایا کہ عباس شیخ اور منظور کے مارے جانے سے سیکورٹی اہلکاروں کو بڑی کامیابی ملی ہے۔ وجے کمار نے بتایا، ’عباس شیخ کے اشارے پر ثاقب منظور نے کئی قتل کئے۔ انہوں نے علاقے مین دہشت مچا رکھا تھا‘۔ علاقے کے لوگ ان سے پریشان ہوچکے تھے کیونکہ یہ دونوں نوجوانوں کو ہتھیار اٹھانے کے لئے گمراہ کر رہے تھے۔

      وجے کمار نے بتایا کہ ’ہم نے لوگوں سے اپیل کی ہے کہ وہ اپنے بچوں کو دہشت گردوں کےساتھ جانے سے روکیں۔ اگر وہ دہشت گرد تنظیم میں شامل ہوچکے ہیں تو برائے مہربانی انہیں میں اسٹریم میں واپس لائیں۔ ہم ان کا استقبال کریں گے‘۔ عباس شیخ پہلے حزب المجاہدین کے ساتھ تھا، لیکن دو سال پہلے ٹی آر ایف میں شامل ہوگیا۔ سیکورٹی افسران کے مطابق، عباس شیخ گزشتہ ایک سال میں اس تنظیم کے ذریعہ کئے گئے قتل کا سازش کرنے والا تھا۔ ثاقب منظور گزشتہ سال ٹی آر ایف میں شامل ہوا تھا اور اس وقت وہ ماسٹرز کا طالب علم تھا۔ وہ تیزی سے دہشت گرد تنظیم میں اوپر چڑھنے لگا اور ایسا مانا جاتا ہے کہ اس نے عباس شیخ کے اشارے پر سری نگر اور آس پاس کے علاقوں میں کچھ قتل کو انجام دیا۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: