اپنا ضلع منتخب کریں۔

    ٹنگمرگ: چند اعلیٰ تعلیم یافتہ نوجوانوں نے بنائی اپنی نوعیت کی سب سے بڑی نرسری، جانئے ہوتی ہے کتنی موٹی کمائی

    ٹنگمرگ: چند اعلیٰ تعلیم یافتہ نوجوانوں نے بنائی اپنی نوعیت کی سب سے بڑی نرسری، جانئے ہوتی ہے کتنی موٹی کمائی

    ٹنگمرگ: چند اعلیٰ تعلیم یافتہ نوجوانوں نے بنائی اپنی نوعیت کی سب سے بڑی نرسری، جانئے ہوتی ہے کتنی موٹی کمائی

    Jammu and Kashmir : ارشد احمد نے نیوز18 کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ "ہم نے تعلیم حاصل کرنے کے بعد سوچا کہ وہ کچھ ایسا کریں گے، جس سے ایک تو انہیں خود روزگار حاصل ہوگا جبکہ دوسروں کو بھی روزگار کے مواقع فراہم ہوسکتے ہیں اور اس اقدام میں ہم کامیاب ہوئے ۔ یہاں اب ہم کافی تعداد میں بے روزگار لوگوں کو روزگار فراہم کرتے ہیں ۔ ہم کافی خوش ہیں"۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Jammu and Kashmir | Jammu | Srinagar
    • Share this:
    جموں و کشمیر : سرکار جہاں اعلی تعلیم یافتہ نوجوانوں کوروزگار کے وسائل فراہم  کرنے کیلئے فکر مند رہتی ہے تو وہیں  ایسے نوجوانوں کو اپنے پاوں پر کھڑا ہونے کے لئے مختلف میدانوں میں روزگار کے حصول کے لئے راستے بھی کھول دئے جاتے ہیں ۔ ایسے میں کچھ اعلیٰ تعلیم یافتہ نوجوان ایسا منفرد کام کرنے کی کوشش کرتے ہیں جو دوسروں کے لئے مشعل راہ بن جاتے ہیں ۔ ایسا ہی ٹنگمرگ کے چندی لورہ میں کچھ اعلیٰ تعلیم یافتہ نوجوانوں نے  کرکے دکھایا ہے ۔ ان نوجوانوں نے ایک سو بیس کنال پر مشتمل اراضی پر ایسی منفرد ہیریٹیج ایگرو نام سے نرسری تیار کی ہے، جو جموں و کشمیر میں نجی نرسریوں میں اپنی نوعیت کی سب سے بڑی نرسری مانی جاتی ہے۔ اس نرسری میں مختلف پھلوں کے ہائی برڈ درخت ، پھولوں کے پودے اور گرین ہاوسز میں مختلف سبزیاں اگائی جاتی ہیں ۔ ساتھ ہی دیگر ممالک کے پھلوں کے درخت بھی اگائے جاتے ہیں۔

    چیف ہاٹی کلچر افسر بارہمولہ ظہور احمد کا کہنا ہے کہ سرکار کی اسکیم کے تحت نجی سطح پر لوگوں کو نرسری بنانے کیلئے سبسڈی کے طور پیسہ واگزار کیا جاتا ہے۔ ایک اعلی تعلیم یافتہ نوجوان ارشد احمد نے نیوز18 کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ "ہم نے تعلیم حاصل کرنے کے بعد سوچا کہ وہ کچھ ایسا کریں گے، جس سے ایک تو انہیں خود روزگار حاصل ہوگا جبکہ دوسروں کو بھی روزگار کے مواقع فراہم ہوسکتے ہیں اور اس اقدام میں ہم کامیاب ہوئے ۔ یہاں اب ہم کافی تعداد میں بے روزگار لوگوں کو روزگار فراہم کرتے ہیں ۔ ہم کافی خوش ہیں"۔

    چیف ہاٹی کلچر افسر بارہمولہ ظہور احمد نے نیوز18 کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ روٹ اسٹاک جو غیر ممالک سے لاتے ہیں، اس میں خرچہ بہت زیادہ ہوتاہے اور بیماریوں کاخطرہ بھی لاحق رہتا ہے ۔ اب سرکار نے یہ قدم اٹھایا ہے  کہ یوروپ سے لانے والے روٹ اسٹاک کو کشمیر میں ہی اگائیں جائیں گے ۔ اس تناظر میں ٹنگمرگ کی اس نرسری میں یہ نوجوان ازخود گرافٹنگ کرتے ہیں اور پودے کو کاشتکار کے پاس جانے سے پہلے کئی برسوں تک اس کی دیکھ بھال کرتے ہیں ۔

    یہ بھی پڑھئے: ترقی کے کاموں میں جموں و کشمیر آخر کیوں پچھڑ رہا؟ وزیر دفاع راجناتھ سنگھ نے کہی یہ بات


    یہ بھی پڑھئے: جموں کشمیر:باندی پورہ میں فوجی گاڑی کو اڑانے کی سازش ناکام، دہشت گردوں کی تلاش میں چلی مہم


    ٹنگمرگ میں واقع اس نرسری سے نہ صرف ان تعلیم یافتہ نوجوانوں کو روزگار حاصل ہوتا ہے ۔ بلکہ یہ تیس سے زیادہ لوگوں کو روزگار فراہم کرتے ہیں اس نرسری میں روزانہ بنیادوں پر یہ لوگ کام کرتے ہیں اور انہیں اس کے عوض مزدوری ملتی ہے ۔ ان لوگوں کا کہنا ہے کہ اس سے پہلے انہیں مختلف جگہوں پر روزگار کے حصول کیلئے جانا پڑتا تھا، لیکن یہاں اب انہیں ایک ہی جگہ روزگار حاصل ہوتاہے۔ ان لوگوں نے اطمینان کا اظہار کیا۔

     

    ٹنگمرگ ہیریٹیج ایگرو نرسری کے یہ نوجوان بے روزگار اعلیٰ تعلیم یافتہ نوجوانوں کو صلاح دیتے ہیں کہ وہ اس طرح کے یونٹس قائم کرکے اپناروزگارخود حاصل کرسکتے ہیں۔ سرکارمختلف اسکیموں کے تحت سرکاری اور نجی سطح پر لوگوں کو نرسری بنانے کیلئے سبسڈی کے طور پیسہ واگزار کرتے ہیں ۔ اسی طرح ہائی ٹیک نرسری کیلئے بھی کروڑوں روپے دئے جاتے ہیں ۔ لوگوں کو چاہے کہ وہ سرکار کی متعارف کردہ اسکیموں سے فائدہ اٹھائیں۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: