உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    سرینگر میں دو اساتذہ کے قتل سے گرمائی سیاست، اٹھی پاکستان پر فضائی حملے کی مانگ

    Youtube Video

    Jammu-Kashmir Terrorist Attack: شیو سینا کی جموں و کشمیر یونٹ کے صدر منیش ساہنی نے کہا ہے کہ کشمیری پنڈتوں کو منتخب طور پر نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ ہندستانی فوج کی جانب سے کئے گئے آپریشن آل آؤٹ کی وجہ سے دہشت گرد بوکھلائے ہوئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ 'پاکستان اس کے پیچھے ہے اور پی ایم مودی سے ہماری اپیل ہے کہ آپ اس پر مسلسل ایئر اسٹرائک کریں۔'

    • Share this:
      سری نگر۔ جموں و کشمیر کی راجدھانی سری نگر  (Srinagar) میں جمعرات کو دہشت گردوں کے ذریعے دو اساتذہ کے قتل (Teachers Killed)  پر سیاسی جماعتوں نے غم و غصے کا اظہار کیا ہے۔ یہی نہیں ، مرکزی حکومت سے پاکستان پر فضائی حملہ (Air Strike)  کرنے کا مطالبہ بھی کیا جا رہا ہے۔ جمعرات کے واقعہ پر ایک مقامی پولیس افسر نے بتایا کہ یہ کام دہشت گردوں کی جانب سے پاکستان (Pakistan) میں بیٹھے ہینڈلرز کے اشارے پر کیا جا رہا ہے۔ فوج کی جانب سے چلائے جانے والے آپریشن سے دہشت گرد بوکھلا گئے ہیں۔

      اس واقعے پر رد عمل ظاہر کرتے ہوئے جموں و کشمیر کے ڈی جی پی دلباغ سنگھ نے کہا ، "شہریوں کو نشانہ بنانے والے یہ واقعات قابل نفرت ہیں۔ یہ دہشت پھیلانے اور کشمیری برادری کو تقسیم کرنے کی کوشش ہے۔ ہم ان واقعات کی تحقیقات کر رہے ہیں۔ ہمیں یقین ہے کہ جلد ہی دہشت گردی کے ان واقعات کو بے نقاب کیا جائے گا۔ یہ جلد ہو جائے گا۔ یہ سب سرحد پار بیٹھے پاکستانی ہینڈلرز کے کہنے پر کیا جا رہا ہے۔

      شیو سینا کی جموں و کشمیر یونٹ کے صدر منیش ساہنی نے کہا ہے کہ کشمیری پنڈتوں کو منتخب طور پر نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت وادی میں کشمیری پنڈتوں کو آباد کرنے کے لیے کام کر رہی ہے۔ ہندستانی فوج کی جانب سے کئے گئے آپریشن آل آؤٹ کی وجہ سے دہشت گرد بوکھلائے ہوئے ہیں اور یہی وجہ ہے کہ لوگوں کو منتخب طور پر نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ 'پاکستان اس کے پیچھے ہے اور پی ایم مودی سے ہماری اپیل ہے کہ آپ اس پر مسلسل ایئر اسٹرائک کریں۔'

      بھارتیہ جنتا پارٹی کے جموں و کشمیر کے صدر رویندر رائنا نے کہا کہ بزدل پاکستانی دہشت گردوں نے وادی کشمیر کو خون آلود کردیا ہے۔ ان بزدل پاکستانیوں کو اس گھنونے جرم کی بھاری قیمت چکانی پڑے گی جبکہ کانگریس کے سابق وزیر رمن بھلا نے حکومت پر سوال اٹھائے ہیں۔

      انہوں نے کہا کہ کشمیر میں مسلسل دو دنوں میں جو قتل و غارت ہوا ہےحکومت  مکمل طور پر ناکام رہی ہے، کیونکہ پہلے کشمیر میں ایک مندر کو مسمار کرنا اور پھر کشمیری پنڈتوں پر مسلسل حملے ، ظاہر کرتا ہے کہ حکومت لوگوں کو تحفظ دینے میں ناکام رہی ہے اور آج بھی دو اساتذہ کو قتل کیا جا چکا ہے جو کہ قابل مذمت ہے۔ انہوں نے اس بات کا اعادہ کیا کہ حکومت عوام کو تحفظ فراہم کرنے میں مکمل طور پر ناکام ہوچکی ہے۔

      واضح ہو کہ سری نگر۔ ایک بار پھر عام شہری جموں و کشمیر میں دہشت گردوں کی گولیوں کا نشانہ بن گئے ہیں۔ بتایا گیا ہے کہ فائرنگ سری نگر کے عیدگاہ علاقے میں ہوئی ،جس میں دو اساتذہ کی موت ہوگئی ہے۔ صفا کدل میں نامعلوم حملہ آوروں نے اسکول کی پرنسپل اور ایک خاتون ٹیچر کو گولی مار کر قتل کر دیا۔ خدشہ ہے کہ حملہ آور دہشت گرد ہو سکتے ہیں۔ ستیندر کور اور دیپک کور ، جو اس حملے میں مارے گئے ہیں، آلوچی باغ کے رہائشی تھے۔

      جمعرات کو سری نگر میں دن کی روشنی میں دہشت گردوں نے دو اساتذہ کا قتل کر دیا۔ دونوں سکھ اور کشمیری پنڈت اساتذہ کی شناخت ستیندر کور اور دیپک چند کے طور پر کی گئی ہے۔ بتایا جا رہا ہے کہ دونوں صفا کدل کے الوچی باغ کے رہنے والے تھے۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: