உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    سری نگر دہشت گردانہ حملہ: جیش کے کشمیر ٹائیگر نے لی ذمہ داری، جموں وکشمیر پولیس نے کہا- جلد مار گرائیں گے

    Srinagar Terror Attack: سری نگر کے باہری علاقے میں پیر کو جموں وکشمیر مسلح پولیس اہلکاروں کو لے جارہی بس پر ہوئے دہشت گردانہ حملے میں دو پولیس اہلکار شہید ہوگئے، جبکہ 12 دیگر زخمی ہیں۔

    Srinagar Terror Attack: سری نگر کے باہری علاقے میں پیر کو جموں وکشمیر مسلح پولیس اہلکاروں کو لے جارہی بس پر ہوئے دہشت گردانہ حملے میں دو پولیس اہلکار شہید ہوگئے، جبکہ 12 دیگر زخمی ہیں۔

    Srinagar Terror Attack: سری نگر کے باہری علاقے میں پیر کو جموں وکشمیر مسلح پولیس اہلکاروں کو لے جارہی بس پر ہوئے دہشت گردانہ حملے میں دو پولیس اہلکار شہید ہوگئے، جبکہ 12 دیگر زخمی ہیں۔

    • Share this:

      سری نگر: جموں وکشمیر کے باہری علاقے میں پیرکو جموں وکشمیر کے مسلح پولیس اہلکاروں کو لے جارہی بس پر ہوئے دہشت گردانہ حملے میں دو پولیس اہلکار شہید ہوگئے، جبکہ 12 دیگر زخمی ہیں۔ ایک پولیس افسر نے یہ جانکاری دی۔ پولیس نے معاملہ درج کرکے دہشت گردوں کی تلاش شروع کردی ہے۔


       سری نگر دہشت گردانہ حملے پر کشمیر کے انسپکٹر جنرل آف پولیس (آئی جی پی) وجے کمار نے کہا، ’آج شام کو ڈیوٹی ختم ہونے کے بعد ہمارے 25 پولیس اہلکار ایک بس میں سری نگر سے جیون جا رہے تھے، راستے میں پنتھا چوک کے پاس شام 6:30 بجے دو تین دہشت گردوں نے اندھیرے کا فائدہ اٹھاتے ہوئے گاڑی پر اندھا دھند فائرنگ کی۔ اس میں ہمارے 14 پولیس اہلکار زخمی ہوگئے۔


      جیش محمد کے کشمیر ٹائیگر نے لی حملے کی ذمہ داری


      انہوں نے مزید کہا، ’ہمارے لوگوں نے جوابی کارروائی کی، جس میں ایک دہشت گرد کو گولی لگی ہے، لیکن وہ بھاگنے میں کامیاب ہوگیا ہے۔ دو جوان شہید ہوگئے اور 12 لوگ خطرے سے باہر ہیں، جن کا نزدیکی اسپتال میں علاج چل رہا ہے۔ جیش محمد کے کشمیر ٹائیگر نے حملے کا دعویٰ کیا ہے، ہم جلد ہی اس گروپ کو مار گرائیں گے۔


      وزیر اعظم مودی نے طلب کی حادثے کی تفصیل


      اس درمیان، وزیر اعظم نریندر مودی حادثہ کی جانکاری مانگتے ہوئے شہید ہوئے سیکورٹی اہلکاروں کی فیملی کے تئیں بھی تعزیت کا اظہار کیا ہے۔ وزیر اعظم دفتر (پی ایم او) کی طرف سے جاری بیان میں کہا گیا، ’وزیر اعظم نریندر مودی نے جموں وکشمیر میں ہوئے دہشت گردانہ حملے کی جانکاری مانگی ہے۔ انہوں نے حملے میں شہید ہوئے سیکورٹی اہلکاروں کی فیملی کے تئیں بھی تعزیت کا اظہار کیا ہے۔


      دوسری طرف، پولیس نے اس سے متعلق قانون کی متعلقہ دفعات کے تحت معاملہ درج کیا ہے اور افسران ان حالات کو سمجھنے کی کوشش میں مصروف ہیں، جو اس طرح کے دہشت گردانہ حملے کی وجہ بنتی ہے۔


      قومی، بین الااقوامی، جموں و کشمیر کی تازہ ترین خبروں کے علاوہ  تعلیم و روزگار اور بزنس  کی خبروں کے لیے نیوز18 اردو کو ٹویٹر اور فیس بک پر فالو کریں۔

      Published by:Nisar Ahmad
      First published: