ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جموں وکشمیر: کورونا کے قہر کے پیش نظر کشمیر میں دوبارہ سخت لاک ڈاؤن نافذ

جموں وکشمیر یونین ٹریٹری انتظامیہ نے وادی کشمیر میں بدھ کی شام سے 27 جولائی کی شام تک ایک بار پھر سخت لاک ڈاؤن نافذ کرنے کا فیصلہ لیا ہے۔ انتظامیہ نے یہ فیصلہ یکم اگست کو منائی جانے والی عیدالضحیٰ کے تقریباً 10 روز قبل لیا ہے۔

  • UNI
  • Last Updated: Jul 22, 2020 04:32 PM IST
  • Share this:
جموں وکشمیر: کورونا کے قہر کے پیش نظر کشمیر میں دوبارہ سخت لاک ڈاؤن نافذ
جموں وکشمیر: کورونا کے قہر کے پیش نظر کشمیر میں دوبارہ سخت لاک ڈاؤن نافذ۔ فائل فوٹو

 سری نگر: کورونا وائرس کے متاثرین اور متوفین کی تعداد میں درج ہو رہے ہوشربا اضافے کے پیش نظر جموں وکشمیر یونین ٹریٹری انتظامیہ نے وادی کشمیر میں بدھ کی شام سے 27 جولائی کی شام تک ایک بار پھر سخت لاک ڈاؤن نافذ کرنے کا فیصلہ لیا ہے۔ واضح رہے کہ انتظامیہ نے یہ فیصلہ سالانہ شری امرناتھ جی یاترا کی منسوخی کے ایک روز بعد اور یکم اگست کو منائی جانے والی عیدالضحیٰ کے تقریباً 10 روز قبل لیا ہے۔


محکمہ اطلاعات و تعلقات عامہ کے آفیشل ٹیوٹر ہینڈل پر بدھ کے روز کہا گیا: 'کشمیر صوبے کے تمام ریڈ زون قرار دیئے جانے والے اضلاع (بجز بانڈی پورہ) میں بدھ کی شام سے27 جولائی کی شام تک مکمل لاک ڈاؤن نافذ رہے گا۔ تاہم زراعتی و باغبانی اور تعمیراتی کام ڈی ایم آر آرگائیڈ لائنز کے تحت جاری رہیں گے۔ نیز اشیائے ضروریہ سے لدی گاڑیوں اور گیس و تیل ٹینکروں کی نقل وحمل بھی بغیر کسی رکاوٹ کے جاری رہے گی'۔




جموں وکشمیر یونین ٹریٹری انتظامیہ نے وادی کشمیر میں بدھ کی شام سے 27 جولائی کی شام تک ایک بار پھر سخت لاک ڈاؤن نافذ کرنے کا فیصلہ لیا ہے۔ علامتی تصویر
جموں وکشمیر یونین ٹریٹری انتظامیہ نے وادی کشمیر میں بدھ کی شام سے 27 جولائی کی شام تک ایک بار پھر سخت لاک ڈاؤن نافذ کرنے کا فیصلہ لیا ہے۔ علامتی تصویر


دریں اثنا لوگوں کا کہنا ہے کہ ایک طرف وادی میں دوبارہ لاک ڈاؤن عائد کیا جارہا ہے جبکہ دوسری طرف ہزاروں کی تعداد میں غیر مقامی مزدوروں کو لایا جارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ان مزدوروں کا کہیں کوئی کورونا ٹیسٹ کیا جارہا ہے نہ کہیں کوارنٹائن میں رکھا جارہا ہے، جس سے مقامی لوگوں میں تشویش کی لہر بڑھ گئی ہے۔ وسطی ضلع بڈگام سے تعلق رکھنے والے ایک شہری نے یو این آئی اردو کو بتایا کہ ہمارے علاقے میں سینکڑوں مزدوروں کو اینٹ بٹھوں پر لایا گیا جہاں انہوں کام کرنا شروع کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ان مزدوروں کا کہیں بھی کوئی ٹیسٹ نہیں کیا گیا جبکہ اگر کسی طالب علم یا زائر کو کہیں سے واپس لایا جاتا ہے تو اس کو کورنٹائن میں رکھا جاتا ہے۔
قابل ذکر ہے کہ وادی میں سال رواں کے ماہ مارچ کے وسط سے لاک ڈاؤن جاری ہی ہے اگرچہ بیچ میں چند روز تک دکانداروں کو مرحلہ وار دکانیں کھولنے کی اجازت دی گئی تھی تاہم سڑکوں پر پبلک ٹرانسپورٹ کی نقل وحمل بند ہی رہی۔ کورونا کیسز میں تیزی سے ہو رہے اضافے کے پیش نظر حکام نے وادی میں مرحلہ وار لاک ڈاؤن عائد کرنا دوبارہ شروع کیا تھا جس کی وجہ سے سری نگر سیمت کئی اضلاع میں کئی دنوں سے لاک ڈاؤن جاری ہی تھا۔ جموں وکشمیر میں کورونا کے مثبت کیسز کی تعداد زائد از 15 ہزار پہنچ گئی ہے جبکہ اس وائرس سے فوت ہونے والوں کی تعداد بھی پونے تین سو کے قریب ہے۔ ان میں سے قریب 80 فیصد مثبت کیسز اور اموات وادی کشمیر میں رپورٹ ہوئی ہیں۔

Published by: Nisar Ahmad
First published: Jul 22, 2020 04:16 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading