اپنا ضلع منتخب کریں۔

    جموں خطےمیں دہشت گردی کی سرگرمیوں میں دیکھاجارہاہےاضافہ، کیاجموں خطہ ہےاب دہشت گردوں کےنشانے پرجائیے کیاکہتے ہیں دفاعی ماہرین

    J&K News: کشمیر وادی میں اس سال اب تک 36 غیرملکی دہشت گردوں سمیت 140 ملی ٹینٹس ہلاک۔ علامتی تصویر ۔

    J&K News: کشمیر وادی میں اس سال اب تک 36 غیرملکی دہشت گردوں سمیت 140 ملی ٹینٹس ہلاک۔ علامتی تصویر ۔

    نیوز 18 سے بات کرتے ہوئے وید نے کہا، "دہشت گردوں پر سیکورٹی فورسز کے بڑھتے ہوئے دباؤ اور انکاؤنٹر میں دہشت گردوں کی ہلاکت نے دہشت گردوں کے آقاؤں کو جموں خطے پر زیادہ توجہ دینے پر مجبور کیا ہے۔ وہ چاہتے ہیں کہ حفاظتی عملے کو دوسرے علاقوں تک بھی پھیلایا جائے جس سے ان کے خیال میں وادی کشمیر میں سرگرم دہشت گرد گروپوں پر دباؤ کم ہوگا

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Jammu and Kashmir | Srinagar | Jammu
    • Share this:
    پولیس نے جمعرات کو ٹیکسی اسٹینڈ ریلوے اسٹیشن جموں کے قریب ایک نالے سے 18 ڈیٹونیٹر اور کچھ دیگر مواد سے بھرا ایک تھیلا برآمد کیا۔ پولیس کے مطابق دہشت گرد بارودی سرنگ کا دھماکہ کرنے کی فراق میں تھےتاہم پولیس کی بروقت کارروائی سے دہشت گردی کی اس سازش کو ناکام بنا دیا گیا۔یہ پہلی بار نہیں ہے کہ جموں میں پولیس نے اسلحہ اور گولہ بارود ضبط کیا ہو۔ پولیس نے ماضی قریب میں بھی جموں خطے کے پونچھ، کشتواڑ اور رامبن اضلاع میں اسلحہ اور گولہ بارود ضبط کیا ہے۔ اس طرح کی دہشت گردانہ سرگرمیوں میں اضافہ سیکورٹی اداروں کے لیے ایک چیلنج بن گیا ہے۔ یہ سوال بھی پیدا ہوگیاہےکہ کیا یہ دہشت گردانہ سرگرمیاں اس بات کی نشاندہی کرتی ہیں کہ دہشت گرد تنظیموں کا اگلا ہدف جموں ہے؟

    دفاعی تجزیہ کاروں کی رائے ہے کہ پاکستان اور آئی ایس آئی نسبتاً پرامن جموں ڈویژن میں افراتفری پھیلاناچاہتے ہیں۔ معروف دفاعی تجزیہ کار، لیفٹیننٹ جنرل (ریٹائرڈ) راکیش شرما کا کہنا ہے کہ دہشت گرد تنظیمیں جموں کے ان عام علاقوں میں اپنی موجودگی کا احساس دلانا چاہتے ہیں جو ماضی میں نسبتاً پرامن رہے ہیں۔ نیوز 18 سے بات کرتے ہوئے لیفٹیننٹ جنرل شرما نے کہا," جموں خطے میں دہشت گردی کی سرگرمیوں میں اضافہ دیکھا جارہاہے چاہے ادھم پور دھماکوں کی بات کریں یا پونچھ میں ایک خاتون کے قبضے سے حالیہ دنوں میں آئی ای ڈی کی برآمدگی کاواقع ہو، اس بات کی نشاندہی کرتی ہیں کہ پاکستان اور آئی ایس آئی اس خطے میں امن کو درہم برہم کرنے کی سازشوں میں مصروف ہیں۔

    کشمیر وادی میں دہشت گردوں پر حفاظتی عملے کے بڑھتے ہوئے دباؤ کے پیش نظر پاکستان جموں خطے میں دہشت گردانہ سرگرمیاں انجام دینے کے اپنے مذموم ارادے پر عمل کررہاہے "ریٹائرڈ لیفٹیننٹ جنرل شرما نے کہا کہ دہشت گرد جموں خطے اس لئے بھی نشانہ بنانا چاہتے ہیں تاکہ یہ تاثر دیاجا سکے کہ پورے جموں و کشمیر میں حالات پرسکون نہیں ہیں۔انہوں نے کہا، ''دہشت گرد اور کنٹرول لائن کے اس پار ان کے آقاءمایوسی کا شکار ہیں کیونکہ دہشت گرد وادی کشمیر میں سیکورٹی فورسز سے لڑنے میں ناکام رہے ہیں۔

    یہ بھی پڑھیں

    دہشت گردوں کی جان بچانے کے لیے حکمت عملی میں تبدیلی کی جارہی ہے۔ وہ وادی میں ٹارگٹ کلنگ کا سہارا لیتے ہیں اور جموں ڈیوژن کے چند علاقوں میں مقامی نوجوانوں کو لالچ دے کر خطے میں دھماکے کروانے اور تخریبی کارروائیاں انجام دینے کی کوشش کرتے ہیں۔"سابق ڈی جی پی جے اینڈ کے ایس پی وید کا کہنا ہے کہ کشمیر میں دہشت گردوں پر سیکورٹی فورسز کے بڑھتے ہوئے دباؤ اور انکاؤنٹر میں دہشت گردوں کی ہلاکتیں دہشت گردکمانڈروں کو مایوس کیاہے۔

    نیوز18 سے بات کرتے ہوئے وید نے کہا، "دہشت گردوں پر سیکورٹی فورسز کے بڑھتے ہوئے دباؤ اور انکاؤنٹر میں دہشت گردوں کی ہلاکت نے دہشت گردوں کے آقاؤں کو جموں خطے پر زیادہ توجہ دینے پر مجبور کیا ہے۔ وہ چاہتے ہیں کہ حفاظتی عملے کو دوسرے علاقوں تک بھی پھیلایا جائے جس سے ان کے خیال میں وادی کشمیر میں سرگرم دہشت گرد گروپوں پر دباؤ کم ہوگا"تاہم دفاعی تجزیہ کاروں کی رائے ہے کہ پاکستان کے نئے حربے کارگر نہیں ہوں گے کیونکہ حفاظتی عملہ چوکس ہےاور جموں و کشمیر کے عام لوگ مرکز کے زیر انتظام اس علاقے میں امن اور ترقی کے خواہاں ہیں۔
    Published by:Mirzaghani Baig
    First published: