ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

ٹیسٹنگ اور ویکسینیشن کووڈ وبا پر قابو پانے کا اہم تر ذریعہ: لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا

کووڈ مریضوں کے لیے قائم کۓ گئے خصوصی اسپتالوں میں درکار آکسیجن سپلائی ضروری ادویات کی فراہمی اور دیگر سہولیات کا برسر موقع جائزہ لینے کے لیے ایل جی ان اسپتالوں کے دورے بھی کر رہے ہیں۔

  • Share this:
ٹیسٹنگ اور ویکسینیشن کووڈ وبا پر قابو پانے کا اہم تر ذریعہ: لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا
کووڈ مریضوں کے لیے قائم کۓ گئے خصوصی اسپتالوں میں درکار آکسیجن سپلائی ضروری ادویات کی فراہمی اور دیگر سہولیات کا برسر موقع جائزہ لینے کے لیے ایل جی ان اسپتالوں کے دورے بھی کر رہے ہیں۔

جموں کشمیر:- جموں کشمیر میں کورونا وبا پر قابو پانے کے لیے کئے جانے والے اقدامات پر لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا قریبی نگاہ بنائے ہوۓ ہیں۔ منوج سنہا اس وبا پر قابو پانے کے لئے کوششوں میں مزید سرعت لانے کی غرض سے حکام کے ساتھ لگاتار میٹنگوں کا انعقاد کر کے بنیادی ڈھانچے سے متعلق اطلاعت حاصل کر کے انہیں مزید پختہ کرنے کے احکامات صادر کرتے رہتے ہیں۔ کووڈ مریضوں کے لیے قائم کۓ گئے خصوصی اسپتالوں میں درکار آکسیجن سپلائی ضروری ادویات کی فراہمی اور دیگر سہولیات کا برسر موقع جائزہ لینے کے لیے ایل جی ان اسپتالوں کے دورے بھی کر رہے ہیں۔ چونکہ اس وبا پر قابو پانے کے لیے عام لوگوں کا تعاون بھی نہایت ضروری ہے اسلۓ لیفٹیننٹ گورنر عام لوگوں سے اپیل کر رہے ہیں کہ وہ اس مشکل وقت میں انتظامیہ کا ساتھ دیں۔

23 مئ کو عوام کے نام اپنے ایک ٹیلی پیغام میں منوج سنہا نے آشا ورکروں ، آنگن واڑی ورکرز اور رضاکار تنظیموں کے نمائندوں سے تاقید کی کہ وہ دیہی علاقوں میں اس وبا پر قابو پانے کے لیے اپنا کلیدی رول نبھایئں ۔ انہوں نے پنچایتی راج اداروں سے ہر پنچایت حلقے میں 5 بیڈ والے کووڈ کیئر سینٹر قائم کرنے میں تعاون طلب کیا۔ عوام کے نام اپنے خطاب میں لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے کہا کہ جموں کشمیر میں ملک کی دیگر ریاستوں اور یو ٹیز کے مقابلے میں زیادہ تعداد میں لوگوں کو کووڈ سے محفوظ رکھنے کے لیے ٹیکہ لگایا گیا ہے۔ انہوں نے کہا ، " ابھی تک ملک کے دیگر حصوں کے مقابلے میں ہم نے زیادہ لوگوں تک ویکسین پہنچانے میں کامیابی پائ ہے۔ لگ بھگ 63٪ فی صدی لوگوں کو کووڈ سے محفوظ رکھنے کے لیے ٹیکہ لگایا گیا ہے۔


انہوں نے لوگوں سے اپیل کی کہ وہ ٹیسٹنگ اور ویکسینیشن میں اپنا بھرپور تعاون فراہم کریں کیونکہ اسی سے کووڈ کی وبا پر قابو پایا جا سکتا ہے۔ ایل جی نے کہا کہ مختلف پنچایتوں میں صحت سے متعلق جو کمیٹیاں تشکیل پائی ان سے تاقید ہے کہ وہ کووڈ کیئر سینٹرز کو بہتر طور پر چلانے میں مدد کریں تاکہ لوگوں کی ٹھیک سے دیکھ بال ہو سکے۔ منوج سنہا نے کہا کہ ان کووڈ کیئر مراکز پر ادویات کی دستیابی کے ساتھ ساتھ علاج و معالجہ کی تمام سہولیات بھی میسر رہینگی۔ انہوں نے کہا کہ ہر کووڈ مرکز کسی نہ کسی پی ایچ سی یا سی ایچ سی سے جڑا ہوگا تاکہ ڈاکٹر کی صلاح فوری طور پر مل سکے۔

ایل جی نے مزید کہا کہ ضلع میں ٹیلی میڈیسن کی سہولت بھی رکھی گئ ہے، تاکہ ضرورت پڑنے پر کوئ بھی شخص ڈاکٹر سے مشورہ لے سکے۔ اپنے ٹیلی پیغام کے آخر میں ایل جی نے ایک بار پھر عوامی تعاون طلب کیا تاکہ کووڈ کے خلاف اس جنگ میں مل کر جیت حاصل کی جا سکے۔

Published by: Sana Naeem
First published: May 23, 2021 10:33 PM IST