உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    فوج کی چنار کور نے سیاحتی مقام گلمرگ کے سرحدی علاقے بوٹا پتھری میں ہیلی بورن مشق کی

    فوج کی چنار کور نے سیاحتی مقام گلمرگ کے سرحدی علاقے بوٹا پتھری میں ہیلی بورن مشق کی۔یہ ہندوستانی فضائیہ، بحریہ اور فوج کے ساتھ کشمیر میں شروع کی جانے والی سہ فریقی مشق تھی کشمیر میں پہلی بار ایسی مشق ہوئی ہے

    فوج کی چنار کور نے سیاحتی مقام گلمرگ کے سرحدی علاقے بوٹا پتھری میں ہیلی بورن مشق کی۔یہ ہندوستانی فضائیہ، بحریہ اور فوج کے ساتھ کشمیر میں شروع کی جانے والی سہ فریقی مشق تھی کشمیر میں پہلی بار ایسی مشق ہوئی ہے

    فوج کی چنار کور نے سیاحتی مقام گلمرگ کے سرحدی علاقے بوٹا پتھری میں ہیلی بورن مشق کی۔یہ ہندوستانی فضائیہ، بحریہ اور فوج کے ساتھ کشمیر میں شروع کی جانے والی سہ فریقی مشق تھی کشمیر میں پہلی بار ایسی مشق ہوئی ہے

    • Share this:
    فوج کی چنار کور نے دنیا بھر میں مشہور شہرہ آفاق سیاحتی مقام گلمرگ کے سرحدی علاقے بوٹا پتھری میں ہیلی بورن مشق کی ۔ فوجی جوانوں نے یہاں اپنے کرتب دکھائے اوراپنی طاقت کا مظاہرہ کیا۔ یہ ہندوستانی فضائیہ، بحریہ اور فوج کے ساتھ کشمیر میں شروع کی جانے والی سہ فریقی مشق تھی۔ اس مشق میں فضائیہ، بحریہ اور فوج کے جوان شامل تھے۔ کشمیر میں پہلی بار ایسی مشق ہوئی ہے وہ بھی سرحدی علاقے میں جہاں سرحد پاکستان کے ساتھ ملتی ہے ۔مشق کا منصوبہ ایک فضائی دفاع اور الیکٹرانک وارفیئر آپریٹنگ ماحول میں دشمن کی صفوں کے پیچھے حکمت عملی کے ساتھ فورسز کو داخل کرنے کی مشترکہ صلاحیت کو درست کرنا تھا۔

    اس مشق کی نگرانی پندرہ کور کے جی او سی ڈی پی پانڈے کررہے تھے۔ پانڈے از خود ہیلی کاپٹر میں نگرانی کررہے تھے اور بعد بوٹا پتھری میں بھی انہوں نے باریک بینی سے جائزہ لیا۔مشق میں  ہیلی بورن ٹاسک فورس میں انفنٹری، سپیشل فورسز اور انڈین نیوی کے مارکوز کے دستے شامل تھے۔ ہیلی ڈراپ مشق میں ہندوستانی فوج اور ہندوستانی فضائیہ کے مکمل نقل و حمل اور مسلح ہیلی کاپٹر بشمول اپاچس اٹیک ہیلی کاپٹر شامل تھے۔

    اس مشق نے چنار کور اور ہندوستانی فوج کی اونچائی والے علاقوں میں کامیاب آپریشن کرنے کی صلاحیت کو ظاہر کیا جس میں ہندوستانی فضائیہ اور ہندوستانی بحریہ کے ساتھ ہم آہنگی میں عصری اور جدید ٹیکنالوجی سے میدان جنگ کے تمام پہلوؤں کو شامل کیا گیا۔اس مشق کا مقصد یہ بھی تھا کہ سردی کے موسم میں کس طرح جوانوں کو چوکس کیاجاتاہے۔ تاکہ سرحدوں کی حفاظت ہوسکے ۔اہم بات یہ بھی ہے کہ کشمیر میں جوں ہی برف پڑتی ہے تو سرحدوں سے دراندازی کے واقعات بھی پیش آتے ہیں ان واقعات کو روکنے کے لیے ایسی مشق کی ضرورت ہوتی ہے۔ اس مشق میں کافی تعداد میں فوجی جوانوں نے اپنے کرتب دکھائے۔
    قومی، بین الااقوامی، جموں و کشمیر کی تازہ ترین خبروں کے علاوہ تعلیم و روزگار اور بزنس کی خبروں کے لیے نیوز18 اردو کو ٹویٹر اور فیس بک پر فالو کریں۔
    Published by:Sana Naeem
    First published: