உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جموں وکشمیر کے عوام کو چوبیس گھنٹے بجلی فراہم کرنے کے لئے سرکار کوشاں

    70 سالوں میں جموں و کشمیر صرف 3500 میگاواٹ پیدا کرنے کی صلاحیت رکھتا تھا اور اب پیداوار کی صلاحیت کو چار سالوں میں دوگنا اور سات سالوں میں تین گنا کرنے کا ارادہ ہے۔

    • Share this:
    جموں و کشمیرکے شہریوں کا چوبیس گھنٹے بجلی کی دستیابی کا خواب پورا ہو رہا ہے۔ 2019 سے اب تک 2451 ایم وی اے کی مزید بجلی پیدا کی گئی۔ انتظامیہ نے اس بات کو یقینی بنایا ہے کہ عام شہریوں کو معیاری سڑکوں، بجلی اور پانی کی بنیادی ضرورتوں تک ترجیحی بنیادوں پر رسائی حاصل ہو۔انتظامیہ کا مقصد تمام شہریوں اور کاروباری اداروں کو معیاری بجلی فراہم کرنا ہے اور یہ اضافی سہولیات بڑھتی ہوئی معیشت کی اہم ضرورت کو پورا کرے گی۔ بجلی کے موجودہ خسارے کو پورا کرنے کے لیےجموں و کشمیر سرکار نے بڑے پیمانے پر صلاحیت بڑھانے کا پروگرام شروع کیا ہے۔ 70 سالوں میں جموں و کشمیر صرف 3500 میگاواٹ پیدا کرنے کی صلاحیت رکھتا تھا اور اب پیداوار کی صلاحیت کو چار سالوں میں دوگنا اور سات سالوں میں تین گنا کرنے کا ارادہ ہے۔ فی الحال 2000 کروڑ روپے کے ٹرانسمیشن اور ڈسٹری بیوشن پروجیکٹ مکمل کیے جارہے ہیں اور مرکزی حکومت کی طرف سے یوٹی میں سب ٹرانسمیشن اور ڈسٹری بیوشن نیٹ ورک کو مضبوط کرنے کے لیے 6000 کروڑ روپے کی اضافی رقم مختص کی گئی ہے۔

    اس سے انتظامیہ کو شہروں اور دیہاتوں کے درمیان بنیادی ڈھانچے کے فرق کو ختم کرنے میں مدد ملے گی۔اگست 2019 سے سات دہائیوں میں حاصل کی گئی 8394 MVA صلاحیت کے مقابلے میں کل صلاحیت میں 2451 MVA کا اضافہ کیا گیا ہے۔ جموں و کشمیر حکومت نے یوٹی میں بجلی کے بنیادی ڈھانچے کو مضبوط اور بہتر بنانے کے لیے مختلف اقدامات شروع کیے جو گزشتہ کئی دہائیوں سے خستہ حال تھے۔ بجلی کے بنیادی ڈھانچے کی دہائیوں سے التوا میں پڑے اپ گریڈیشن کو گزشتہ حکومتوں نے نظرانداز کردیا تھا۔ تاہم اب طویل عرصے سے لٹکے ہوئے تمام منصوبوں کو ریکارڈ مدت میں مکمل کیا جا رہا ہے۔

    51 جوڑوں کی اجتماعی شادی، معاشی طور پر کمزور بہنوں کی مدد کیلئے آئے بھائی 


    تعلیم و تکنیک کے امتزاج سے طلباء کے مستقبل کو سنوارنے کی ضرورت


    جموں و کشمیر میں موجود آبی وسائل سے بڑی مقدار میں ہائیڈرو پاور کی صلاحیت موجود ہے جموں و کشمیر اگلے 3 سالوں میں ہائیڈرو پاور جنریشن کی صلاحیت کو موجودہ 3500 میگاواٹ سے دوگنا کرنے کے لیے تیار ہے۔اس میں 5 میگا ہائیڈرو پاور پراجیکٹس جیسے رتلے (824 میگاواٹ)، کیرتھائی-II (930 میگاواٹ) ساولا کوٹ (1856 میگاواٹ)، ڈل ہستی اسٹیج II (258 میگاواٹ) اور Uri-I اسٹیج-II (240 میگاواٹ)، NHPC کے تعاون سے 4134 میگاواٹ کی کُل صلاحیت کی تکمیل کی گئی ہے۔ ان پروجیکٹوں میں ممکنہ سرمایہ کاری 34,882 کروڑ روپے ہے اور اس کی تکمیل سے جموں و کشمیر میں مانگ سے زیادہ بجلی پیدا کی جائے گی۔

    قابل ذکر بات یہ ہے کہ جموں و کشمیر نے پردھان منتری اجولا یوجنا بجلی ہر گھر یوجنا ’سوبھاگیہ‘ کے تحت ایک اہم سنگ میل حاصل کیا اور بجلی کے 100 فیصد ہدف کو پورا کیا۔جموں و کشمیر انتظامیہ نے ہر گاؤں میں بجلی کی فراہمی کو یقینی بنانے کے لیے فعال طور پر کام کیا ہے جو اس حقیقت سے ظاہر ہوتا ہے کہ پوری یوٹی میں تقریباً 3,57,405 گھرانوں کو بجلی فراہم کی گئی ہے۔ وقت سے پہلے حدف کو پانے کے صلے میں مرکزی حکومت نے جموں وکشمیر سرکار کو بطور انعام 100 کروڑ روپیے کی رقم فراہم کی جے اینڈ کے پاور ڈیولپمنٹ ڈیپارٹمنٹ پروجیکٹ، منصوبہ بندی اور عملدرآمد میں نئے ریکارڈ قائم کر رہا ہے۔ اور اس کوشش سے یوٹی میں نئی ​​صنعتیں کھولنے کی بڑھتی ہوئی مانگ کو پورا کرتے ہوئے روزگار کے بہت سے مواقع بھی فراہم ہونگے۔
    Published by:Sana Naeem
    First published: