உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کشمیر میں فٹ بال کی جانب نوجوانوں کا رجحان، نوجوانوں کو منشیات و دوسرے جرائم سے دور رکھنے کیلئے کی جارہی ہے پہل

    وادی بھر میں مختلف مقامات پر فٹ بال ٹورنامنٹ منعقد کئے جاتے ہیں یہاں کے نوجوان کرکٹ اور دوسری کھیلوں کے ساتھ ساتھ اب فٹ بال کو ترجیح دیتے ہیں۔ بہت ساری اکیڈمیاں ہیں جو نوجوانوں کو فٹ بال کی تربیت دے رہے ہیں ۔

    وادی بھر میں مختلف مقامات پر فٹ بال ٹورنامنٹ منعقد کئے جاتے ہیں یہاں کے نوجوان کرکٹ اور دوسری کھیلوں کے ساتھ ساتھ اب فٹ بال کو ترجیح دیتے ہیں۔ بہت ساری اکیڈمیاں ہیں جو نوجوانوں کو فٹ بال کی تربیت دے رہے ہیں ۔

    وادی بھر میں مختلف مقامات پر فٹ بال ٹورنامنٹ منعقد کئے جاتے ہیں یہاں کے نوجوان کرکٹ اور دوسری کھیلوں کے ساتھ ساتھ اب فٹ بال کو ترجیح دیتے ہیں۔ بہت ساری اکیڈمیاں ہیں جو نوجوانوں کو فٹ بال کی تربیت دے رہے ہیں ۔

    • Share this:
    کشمیر میں فٹ بال کی جانب نوجوانوں کا رجحان بڑھ رہاہے۔کافی تعداد میں نوجوان فٹ بال کھیل رہے ہیں مختلف ٹورنامنٹس میں حصہ لے رہے ہیں۔ کچھ ایسے بھی نوجوان ہیں جو اب قومی سطح پر بھی مقابلوں میں اپنی صلاحیتوں کا مظاہرہ کررہے ہیں۔ شمالی کشمیر کے ضلع بارہمولہ کے مالموہ پٹن میں فٹ بال ٹورنامنٹ کا انعقاد کیا گیا اس ٹورنامنٹ میں وادی بھر کے چالیس ٹیموں نے حصہ لیا اس کا فائنل میچ جمعہ کے روز کھیلا گیا جس کو دیکھنے کے لئے بڑی تعداد میں شائقین بھی آئے ہوئے تھے۔ وادی بھر میں مختلف مقامات پر فٹ بال ٹورنامنٹ منعقد کئے جاتے ہیں یہاں کے نوجوان کرکٹ اور دوسری کھیلوں کے ساتھ ساتھ اب فٹ بال کو ترجیح دیتے ہیں۔ بہت ساری اکیڈمیاں ہیں جو نوجوانوں کو فٹ بال کی تربیت دے رہے ہیں ۔ سری نگر میں بھی سپورٹس اکیڈمی اور دوسرے ادارے قائم ہیں اور وہ نوجوانوں کو کھیل کی جانب راغب کرنے کی کوشش کررہے ہیں۔کشمیر میں آج کل نوجوان ذہنی تناؤ کا شکار بھی ہیں جس سے یہاں خوشی کے مواقع کم ہی دیکھنے کو ملتے ہی لیکن اس فضا میں کچھ لوگ اپنے دکھ اوربرہمی کو فٹبال کے کھیل کے ذریعے ختم تو نہیں کرسکتے ، تاہم کم کرنے کی تک و دو میں ہیں۔ یہ سب کچھ ان سپورٹس اکیڈمیوں اور کھیل سے جڑے شخصیات کی بدولت ہے ۔

    فٹ بال کو کشمیر میں عام کرنے کے لیے فٹ بال کوچ وان مارکوس ٹرویا ہیں۔ جن کا خاندان سن 2007 میں ارجنٹائن سے سری نگر آکر آباد ہوا۔ انہوں نے کافی اچھی پہل کی کہ کشمیر میں فٹبال کو عام ہو۔اس پہل سے یہاں کے نوجوانوں اور کھلاڑیوں کی زندگیوں میں بہت مثبت تبدیلیاں دیکھنے کو ملی ۔نوجوانوں میں اب بے حد شوق ہورہاہے۔ مالموہ پٹن میں قومی سطح کے فٹ بال کھلاڑی سید مجتبیٰ رضوی نے نیوز18اردو کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ ہمارے پروگرام کا مقصد یہ ہے کہ نوجوانوں میں امید کی کرن پیدا کی جائے ،اور انہیں یہ احساس دلایا جائے کہ کھیل کود کے ذریعے سے زندگی کے خواب پورے ہوسکتے ہیں۔

    انہوں نے کہاکہ بہت سے نوجوان کھلاڑی اسی امید پر دل لگا کر کھیل رہے ہیں۔ علی محمد حرہ نامی ایک کھلاڑی نے نیوز18اردو کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ مالموہ میں لگاتار کھیل کود کے مقابلے منعقد کئے جاتے ہیں خاص کر فٹ بال کی جانب خصوصی توجہ دی جاتی ہے تاکہ نوجوان نسل منشیات سے دور رہ سکے اور کھیل کود میں اپنی صلاحیتوں کو بروئے کار لاسکے تاکہ ملک اور کشمیر کا نام روشن کرسکیں۔

    کھلاڑیوں نے بھی نیوز18اردو کو بتایاکہ یہ ان کے لئے خوشی کا مقام ہے کہ کشمیر میں فٹ بال کے ٹورنامنٹ منعقد کروائے جاتے ہیں۔تاہم انہوں نے کہاکہ مقامی سطح پر ہی زیادہ تر ایسے ٹورنامنٹ منعقد کئے جاتے ہیں سرکاری سطح پر بہت ہی کم ایسا دیکھنے کو ملتا ہے۔ اب ضرورت اس بات کی ہے کہ کشمیر میں منشیات اور دیگر جرائم کے خاتمے اور نوجوانوں کو بچانے اور انہیں تعلیم کے ساتھ ساتھ کھیل کود کی جانب راغب کرنے کے اقدامات اٹھانے چاہیے۔
    Published by:Sana Naeem
    First published: