உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جموں کشمیر: پلوامہ میں تھانے سے تین ملزم فرار ہوگئے، پولیس نے اٹھایا یہ بڑا قدم

    جموں وکشمیر کے پلوامہ ضلع میں پولیس کی حراست سے تین ملزم فرار ہوگئے ہیں۔ تفصیلات کے مطابق 12-11 دسمبر کی درمیانی شب کے دوران پولیس تھانہ پلوامہ سے تین ملزمین جوکہ این ڈی پی ایس منشیات دھندے میں ملوث تھے، نے پولیس تھانے کے سنتری کو چکمہ دے کر فرار ہوگئے۔

    جموں وکشمیر کے پلوامہ ضلع میں پولیس کی حراست سے تین ملزم فرار ہوگئے ہیں۔ تفصیلات کے مطابق 12-11 دسمبر کی درمیانی شب کے دوران پولیس تھانہ پلوامہ سے تین ملزمین جوکہ این ڈی پی ایس منشیات دھندے میں ملوث تھے، نے پولیس تھانے کے سنتری کو چکمہ دے کر فرار ہوگئے۔

    جموں وکشمیر کے پلوامہ ضلع میں پولیس کی حراست سے تین ملزم فرار ہوگئے ہیں۔ تفصیلات کے مطابق 12-11 دسمبر کی درمیانی شب کے دوران پولیس تھانہ پلوامہ سے تین ملزمین جوکہ این ڈی پی ایس منشیات دھندے میں ملوث تھے، نے پولیس تھانے کے سنتری کو چکمہ دے کر فرار ہوگئے۔

    • Share this:
    پلوامہ: جموں وکشمیر کے پلوامہ ضلع میں پولیس کی حراست سے تین ملزم فرار ہوگئے ہیں۔ تفصیلات کے مطابق 12-11 دسمبر کی درمیانی شب کے دوران پولیس تھانہ پلوامہ سے تین ملزمین جوکہ این ڈی پی ایس منشیات دھندے میں ملوث تھے، نے پولیس تھانے کے سنتری کو چکمہ دے کر فرار ہوگئے۔ حال ہی میں پلوامہ پولیس نے عمران رشید ساکنہ سونہ شامل پلوامہ اور جُنید احمد غنائی ساکنہ چاٹہ پورہ پلوامہ کے علاوہ قیصر نظیر ساکنہ مغل پورہ پلوامہ منشیات کے دھندے کے سلسلے میں گرفتارکیا گیا تھا۔ تینوں ملزمین پر این ڈی پی ایس کے تحت کیس چل رہا تھا اور تینوں اس وقت پلوامہ پولیس تھانے میں پولیس حراست میں تھے۔

    ذرائع کے مطابق تینوں افراد نے تھانے کے سنتری کو پیشاب کرانے کے غرض سے لاک اپ سے باہر نکالنے کو کہا اور جوں ہی تینوں نے کو پیشاب کرانے کے بعد سنتری نے انہیں واپس لاک آپ میں ڈالنے کی کوشش کی تو تینوں نے سنتری پر حملہ کیا اور اس کی سروس رائفل چھینے کی کوشش کی۔ تاہم اگرچہ سنتری اپنی سروس رائفل بچانے میں کامیاب ہوا، لیکن تینوں ملزمین تھانے سے فرار ہوگئے۔ پولیس نے اس واقعہ کے بعد تینوں کی تلاش بڑے پیمانے پر شروع کردی ہے۔ مختلف مقامات پرپولیس کی جانب سے چھاپہ ماری بھی کی گئی ہے۔

    واضح رہے کہ گزشتہ کچھ ماہ کے دوران پلوامہ پولیس نے منشیات دھندے کا قلع قمع کرنے کے سلسلے میں کافی کامیابیاں حاصل کی ہیں، جس میں ایک زچگی ڈاکٹر سمیت تین میڈیکل دُکانوں کو بھی دھندے میں ملوث پانے کے بعد گرفتاری عمل میں لائی گئی۔ جبکہ کئی افراد جوکہ نشے میں ملوث تھے کی باز آباد کاری بھی شروع کردی گئی ہے۔
    Published by:Nisar Ahmad
    First published: