உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Jammu and Kashmir: جموں خطے میں دہشت گردوں کے تین ماڈیولز کا پردہ فاش، سات دہشت گرد گرفتار

    جموں وکشمیر پولیس نے جموں خطے میں دہشت گردوں کے تین ماڈیول کا پردہ فاش کیا ہے اور اس سلسلے میں 7 گرفتاریاں عمل میں لائی جاچکی ہیں۔ جبکہ مزید گرفتاریاں متوقع ہیں۔

    جموں وکشمیر پولیس نے جموں خطے میں دہشت گردوں کے تین ماڈیول کا پردہ فاش کیا ہے اور اس سلسلے میں 7 گرفتاریاں عمل میں لائی جاچکی ہیں۔ جبکہ مزید گرفتاریاں متوقع ہیں۔

    جموں وکشمیر پولیس نے جموں خطے میں دہشت گردوں کے تین ماڈیول کا پردہ فاش کیا ہے اور اس سلسلے میں 7 گرفتاریاں عمل میں لائی جاچکی ہیں۔ جبکہ مزید گرفتاریاں متوقع ہیں۔

    • Share this:
    جموں وکشمیر: جموں وکشمیر پولیس نے جموں خطے میں دہشت گردوں کے تین ماڈیول کا پردہ فاش کیا ہے اور اس سلسلے میں 7 گرفتاریاں عمل میں لائی جاچکی ہیں۔ جبکہ مزید گرفتاریاں متوقع ہیں۔ تفصیلات دیتے ہوئے اے ڈی جی پی مکیش سنگھ نے بتایا کہ ان میں سے دو ماڈیول راجوری علاقے میں سرگرم تھے جبکہ ایک ماڈیول جموں کے میدانی علاقے میں سرگرم تھا۔ انہوں نے کہا کہ لشکر طیبہ کا بشیر شیزان نامی دہشت گرد جس کا تعلق بنیادی طور پر ڈوڈہ سے ہے اور ابھی پاکستان میں مقیم ہیں اپنے ایک اور ساتھی جس کا کوڈ نام ایلبیٹ بتایا جاتا ہے کے ساتھ مل کر جموں شہر اور اس کے مضافات میں دہشت گردوں کا ایک ماڈیول چلاتا تھا تاکہ خطے میں دہشت گردی کی کاروائیاں انجام دی جاسکیں۔

    انہوں نے کہا کہ اس ماڈیول کا سرغنہ فیصل منیر ہے، جو جموں کے تالاب کھٹی علاقے کا باشندہ ہے۔ انہوں نے کہا،"فیصل منیر گزشتہ تقریباً دو برس سے ان دہشت گردوں کے ساتھ رابطے میں ہیں، فیصل منیر دوہزار میں جموں کے ہری سنگھ ہائی اسکول میں یاتری کیمپ پر فدائین حملہ کرنے کی کوشش کرنے والے گروپ میں شامل تھا اور اسے دیگر ملوثین کے سات گرفتار کیا گیا تھا، جس میں وہ قصوروار بھی پایا گیا۔ اس کے بعد وہ ضمانت پر رہا کیا گیا اور گزشتہ دو برسوں سے وہ دوبارہ لشکر نامی دہشت گرد تنظیم کے ساتھ جڑا ہوا ہے۔"

    مکیش سنگھ نے بتایا کہ فیصل منیر کے ساتھ چار سے پانچ مزید افراد بھی جڑے ہوئے ہیں، جن میں دو گرفتار ہوئے ہیں جبکہ مزید گرفتاریاں ابھی باقی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ان تمام افراد کا تعلق سانبہ اور کھٹوعہ اضلاع سے ہے۔ اے ڈی جی پی نے کہا،"آج سے تقریباً ڈیڑھ ماہ قبل کھٹوعہ ضلع میں ڈرون کے ذریعے گرائے جانے والے ہتھیار اسی ماڈیول کو حاصل کرنے تھے تاکہ یہ ہتھیار دہشت گردوں تک پہنچائے جاسکیں۔"

    مکیش سنگھ نے کہا کہ ابتدائی پوچھ گچھ سے یہ معلوم ہوا ہےکہ یہ ماڈیول گزشتہ تقریباً ڈیڑھ برس سے پاکستان کی جانب سے ڈرون کے ذریعے سرحد کے اس پار بھیجے گئے ہتھیار حاصل کئے جانے میں ملوث رہا ہے اور حاصل کئے گئے ہتھیاروں میں سے کچھ ہتھیار کشمیر وادی بھیجے گئے جبکہ کچھ ہتھیار اورگولہ بارود انہوں نے اپنے پاس ہی رکھا تھا۔ مکیش سنگھ نے کہا کہ فیصل منیر نامی دہشت گرد کے انکشافات کے بعد کافی تعداد میں ہتھیار اورگولہ بارود برآمدکیا گیا ہے۔ مکیش سنگھ نے کہا کہ سری نگر میں چند ماہ قبل پولیس نے پندرہ پستولوں کا جوکھیپ برآمد کیا تھا، وہ بھی اسی ماڈیول نے ڈرون کے ذریعے حاصل کرکے جموں سے سری نگر پہنچائی تھی۔ انہوں نے کہا کہ راجوری میں فاش کئے گئے دو ماڈیول طالب حسین اور الطاف حسین چلاتے تھے اور ان دونوں کو پولیس گرفتارکرچکی ہیں۔

    اے ڈی جی پی نے کہا کہ تحقیقات سے یہ معلوم ہوا ہے کہ پاکستان ان ماڈیول کے ذریعہ کشمیر خطے میں ہتھیار پہنچانے کے علاوہ جموں خطے میں سیکورٹی فورسز پر حملے انجام دینے سیاسی لیڈروں کو نشانہ بنانے اور اقلیتوں پر حملہ کروانے کی فراق میں تھا۔ تاہم پولیس نے بروقت کارروائی کرکے پاکستان کے ان منصوبوں پر پانی پھیر دیا۔ انہوں نےکہا کہ ان ماڈیول کا پردہ فاش کئے جانے سے جموں وکشمیر پولیس نے جموں خطے میں گزشتہ دو برسوں کے دوران پیش آئے دہشت گردی کے تمام واقعات کو حل کیا۔ انہوں نے کہا کہ دہشت گردوں اور ان کے معاونین پرپولیس کی سخت نگاہ مسلسل جاری ہے۔
    Published by:Nisar Ahmad
    First published: