உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جموں وکشمیر کے راجوری ضلع میں بارودی سرنگ دھماکہ میں فوج کے 2 جوان زخمی

    جموں وکشمیر کے راجوری ضلع میں بارودی سرنگ دھماکہ میں فوج کے 2 جوان زخمی

    جموں وکشمیر کے راجوری ضلع میں بارودی سرنگ دھماکہ میں فوج کے 2 جوان زخمی

    رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ دھماکہ (Blast) میں دو فوجی اس وقت زخمی ہوگئے، جب جس علاقے میں دونوں گشت (Patrolling) کر رہے تھے، وہاں ایک باردوی سرنگ (Landmine) پر ان کا پاوں پڑگیا۔

    • Share this:
      جموں: جموں وکشمیر (Jammu-Kashmir) کے راجوری ضلع (Rajouri District) میں منگل کو ایک بارودی سرنگ دھماکہ میں فوج کے دو جوان (Soldiers) زخمی ہوگئے۔ ذرائع نے بتایا کہ ایس کے منظور الرحمان کو اودھم پور بیس اسپتال (Udhampur Base Hospital) میں داخل کرایا گیا، جبکہ اپادھیائے پرساد راجندرا کو راجوری کے فوج اسپتال (Military Hospital) میں منتقل (Transfer) کردیا گیا۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ دھماکہ (Blast) میں دو فوجی اس وقت زخمی ہوگئے، جب جس علاقے میں دونوں  گشت کر رہے تھے، وہاں ایک باردوی سرنگ (Landmine) پر ان کا پاوں پڑگیا۔ پولیس ذرائع نے بتایا کہ فوج کے دونوں جوانوں (Soldiers) کی شناخت سپاہی ایس منظور الرحمان اور سپاہی اپادھیائے پرساد راجندرا کے طور پر ہوئی ہے۔ راجوری ضلع کے نوشہرہ سیکٹر میں کلال کے آگے کے علاقے میں ڈیوٹی پر رہتے ہوئے دھماکہ کے دوران انہیں یہ چوٹیں آئیں۔

      پاکستان کی گولہ باری میں بھی اس سال اب تک مارے گئے 21 شہری

      پاکستانی ہائی کمیشن کے انچارج کو دو دن پہلے طلب کیا گیا تھا۔ ایسا 17 جولائی کی رات میں پاکستانی مسلح اہلکاروں کی طرف سےبغیر کسی وجہ کئے گئے سیز فائر کی خلاف ورزی میں ایک بچے سمیت تین قصورواروں کی موت پر زبردست احتجاج درج کرانے کے لئے کیا گیا تھا۔ پاکستان کی اس کرتوت میں ایک دیگر بچے کو سنگین چوٹیں بھی آئی تھیں۔ پاکستان کے مسلح اہلکاروں کی طرف سے یہ جنگ بندی کی خلاف ورزی 17 جولائی 2020 میں جموں وکشمیر کے کرشنا وادی سیکٹر میں کیا گیا تھا۔ بتایا گیا ہے کہ اس گولہ باری میں جن تین لوگوں کی موت ہوئی ہے، وہ سبھی مہلوک ایک ہی فیملی کے تھے۔

      پاکستانی ہائی کمیشن کے انچارج کو بلاکر ان سے کہا گیا تھا کہ پاکستانی فوجیوں کی طرف سے مسلسل ہندوستان کے بے قصور شہریوں کو نشانہ بنانے کے لئے ہندوستان سب سے سخت الفاظ کے ساتھ (سیز فائر کی خلاف ورزی) اس کی مذمت کرتا ہے۔ پاکستان کی فوج کے ذریعہ بے قصور شہریوں کو جان بوجھ کر نشانہ بنایا جارہا ہے۔ اس سال اکیلے پاکستانی مسلح اہلکاروں کی طرف سے 2711 سے زیادہ سیز فائر کی خلاف ورزی ہوئی ہیں، جس میں 21 ہندوستانی مارے گئے ہیں اور 94 زخمی ہوئے ہیں۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: