உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جموں ٹیکنیکل ایئر پورٹ سے دو مشتبہ شخص گرفتار، نالے کے ذریعہ اندر گھسنے کا الزام، پوچھ گچھ جاری

    جموں ٹیکنیکل ایئر پورٹ سے دو مشتبہ شخص گرفتار، نالے کے ذریعہ اندر گھسنے کا الزام

    جموں ٹیکنیکل ایئر پورٹ سے دو مشتبہ شخص گرفتار، نالے کے ذریعہ اندر گھسنے کا الزام

    آج صبح تقریباً 5 بجے جموں ٹیکنیکل ایئر پورٹ کے سیکورٹی اہلاکروں نے دو مشتبہ افراد کو گرفتار کیا ہے۔ ایک مشکوک شخص نالے کے ذریعہ ایئر پورٹ کے اندر گھسنے کی کوشش کر رہا تھا۔ دونوں مشتبہ راجستھان کے رہنے والے ہیں۔ پولیس اور دیگر سیکورٹی ایجنسیاں ان سے پوچھ گچھ کر رہی ہیں۔

    • Share this:
      نئی دہلی: آج صبح تقریباً 5 بجے جموں ٹیکنیکل ایئر پورٹ کے سیکورٹی اہلاکروں نے دو مشتبہ افراد کو گرفتار کیا ہے۔ ایک مشکوک شخص نالے کے ذریعہ ایئر پورٹ کے اندر گھسنے کی کوشش کر رہا تھا۔ دونوں مشتبہ راجستھان کے رہنے والے ہیں۔ پولیس اور دیگر سیکورٹی ایجنسیاں ان سے پوچھ گچھ کر رہی ہیں۔

      سیکورٹی سے متعلق ذرائع کے مطابق صبح تقریباً 5 بجے دو مشتبہ افراد جموں ٹینیکل ایئر پورٹ کے باہر ایک نالے کے ذریعہ اندر گھسنے کی کوشش کر رہے تھے، لیکن سیکورٹی اہلکاروں نے جھاڑیوں میں ہلچل دیکھ کر ان دونوں کو گرفتار کرلیا۔ واضح رہے کہ جموں ٹینیکل ایئر پورٹ پر 27 جون 2021 کو ڈرون حملہ بھی ہوا تھا، اس کے بعد ٹینیکل ایئر پورٹ کے آس پاس کے علاقوں میں سیکورٹی سخت کردی گئی تھی۔

      سیکورٹی ایجنسیوں کی پوچھ گچھ میں پتہ چلا ہے کہ ایک مشتبہ شخص راجستھان کے الور کا رہنے والا ہے جبکہ دوسرا مغربی بنگال کا۔ الور راجستھان کے رہنے والے کا نام رویندر پال ہے جبکہ مغربی بنگگال کے علی پور کے رہنے والا کا نام کیول چھیتری ہے۔ دونوں ہی کل شام کو جموں پہنچے تھے اور اس کے بعد جموں وکشمیر ایئر پورٹ کے آس پاس کے علاقوں میں چھپے رہے۔ آج صبح تقریباً 5 بجے دونوں ٹینیکل ایئر پورٹ کے درمیان گھسنے کے لئے ایک شخص نالے کے ذریعہ نکلا اور دوسرا دیوار چھلانگ کرکے اندر جانے لگا، پھر دونوں کو پکڑ لیا گیا۔ دونوں سے پوچھ گچھ جاری ہے۔

      انتہائی حساس علاقہ

      جموں ٹیکنیکل علاقہ سیکورٹی کے لحاظ سے انتہائی حساس ہے۔ اسی جگہ پر ہندوستانی فضائیہ کا اسٹیشن ہیڈ کوارٹر ہے اور اس کے ساتھ ہی جموں کا اہل ایئر پورٹ بھی اسی احاطے میں آتا ہے۔ ایئر فورس کے ٹیکنیکل علاقے میں سیکورٹی نظام بے حد چاق وچوبند رہتی ہے۔ کسی بھی غیر مجاز شخص کو داخلے کی اجازت نہیں ہے۔ اس کے ساتھ ہی جن لوگوں کو اندر جانے کی اجازت ہے، انہیں بھی سخت تفتیش کے بعد ہی جانے دیا جاتا ہے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: