உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    شہید کسانوں کیلئے غازی پور میں ہون کیا گیا، کسان آندولن کے آگے جھکی حکومت

    Youtube Video

    زرعی قوانین کے خلاف کسانوں کا احتجاج نو اگست دوہزار بیس سے جاری ہے۔ کسان یونینوں نے پچیس ستمبر دوہزار بیس کوزرعی قوانین کے خلاف ہڑتال کا مطالبہ کیا تھا۔

    • Share this:
      زرعی قوانین کے خلاف کسانوں کا احتجاج نو اگست دوہزار بیس سے جاری ہے۔ کسان یونینوں نے پچیس ستمبر دوہزار بیس کوزرعی قوانین کے خلاف ہڑتال کا مطالبہ کیا تھا۔  ملک بھر میں پانچ سوسے زائدکسان تنظیموں نے احتجاج میں حصہ لیا تھا۔ سب سے زیادہ احتجاج پنجاب ہریانہ اور اترپردیش، دیگر ریاستوں میں ہوا۔  احتجاج کی وجہ سے پنجاب میں ریلوے خدمات دو ماہ سے زیادہ کے لیے معطل رہیں۔ پچیس نومبر کے بعد، کسانوں نے قانون کے خلاف مختلف ریاستوں سے دہلی تک مارچ کیا۔ مرکز کی جانب سےتبادلہ خیال کیلئے تین دسمبر دوہزار بیس کی تاریخ طے کی گئی۔ مگر مرکز ی حکومت کی جانب سے زرعی قوانین میں کوئی تبدیلی نہیں کی گئی۔ کسانوں نے اپنا احتجاج جاری رکھا۔ سات سو سے زائد کسانوں کی احتجاج کے دوران موت ہوئی۔ جون دوہزار بیس کے وسط میں زرعی مصنوعات فروخت، ذخیرہ اندوزی، زرعی مارکیٹنگ اور زرعی اصلاحات سے متعلق معاہدے سے متعلق تین فارم آرڈیننس نافذ کیے۔ ایک بل پندرہ ستمبر دوہزار بیس کو لوک سبھا میں جبکہ دوسرا بل اٹھارہ ستمبر دوہزار بیس کو منظور کیا گیا تھا۔ بیس ستمبر دوہزار بیس کو راجیہ سبھا نے دو بل اور تیسرا بائیس ستمبر کو بھی منظور کر لیا۔ صدر جمہوریہ نے بھی اٹھائیس ستمبر دوہزار بیس کو بلوں پر دستخط کیے اورمنظوری دی اس طرح انھیں قانون میں تبدیل کر دیا گیا۔

      وزیر اعظم نریندر مودی نے قوم کے نام خطاب کرتے ہوئے بڑا اعلان کیا ہے۔ انہوں نے تینوں زرعی قوانین کو واپس لے لیا ہے۔ وزیر اعظم مودی نے کہا کہ حکومت اس بار کے پارلیمنٹ سیشن میں تینوں زرعی قانون کو واپس لے لے گی اور آئندہ سیشن میں اس بارے میں ضروری عمل مکمل کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ ہماری حکومت لاکھ کوشش کے باوجود کچھ کسانوں کو سمجھا نہیں پائی۔ انہوں نے کہا کہ ،ملک کے باشندوں سے معافی مانگتا ہوں کہ ہماری ہی کوشش میں کوئی کمی رہی ہوگی۔

      وزیر اعظم نے مظاہرین کسانوں سے کہا کہ ۔گُرو پَرو ۔کے موقع پر آپ اپنے گھر اور کھیت پر لوٹیں۔اپنے خطاب میں پی ایم نے کہا کہ مرکز کے زرعی بجٹ کو پانچ گنا بڑھا دیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا، ہماری حکومت نے کسانوں کے کھاتے میں ایک کروڑ باسٹھ لاکھ روپئے ڈالے ہیں۔ اس کے ساتھ ہی بائیس کروڑ سوائل ہیلتھ کارڈ تقسیم کئے گئے ہیں۔ وزیر اعظم مودی نے کہا کہ ہماری حکومت کسانوں کے مفاد میں مسلسل کام کر رہی ہے۔

       
      Published by:Sana Naeem
      First published: