உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Account Aggregator Framework: کیاہےاکاؤنٹ ایگریگیٹرفریم ورک؟ یہ کیسےکام کرے گا؟ جانیےتفصیلات

    یہ ہندوستان کی معاشی صورت حال کو بہتر بنانے میں مددگار ثابت ہوگا۔

    یہ ہندوستان کی معاشی صورت حال کو بہتر بنانے میں مددگار ثابت ہوگا۔

    سھامتی نے ایک ٹوئٹ میں کہا کہ بڑے سرکاری اور نجی بینکوں کے 1.1 بلین اکاؤنٹس اب ہندوستان کے اکاؤنٹ ایگریگیٹر پر لائیو ہیں۔ دنیا کے سب سے بڑے اوپن بینکنگ (Open Banking) ایکو سسٹم کے لیے ایک اہم لمحہ! ہے۔ یہ ہندوستان کی معاشی صورت حال فنٹیک اختراع کی اگلی لہر کو جنم دے گا!

    • Share this:
      اکاؤنٹ ایگریگیٹر ایکو سسٹم پر مبنی ادارہ سھامتی کے ٹوئٹ کے مطابق اکاؤنٹ ایگریگیٹر (AA) ایکو سسٹم کو فروغ دینے کے لیے ملک کے تمام بڑے پبلک سیکٹر بینک (PSBs) اور پرائیویٹ سیکٹر کے بینک اس پلیٹ فارم میں شامل ہو گئے ہیں، جس نے ایک بلین سے زیادہ اکاؤنٹس کو اکاؤنٹ ایگریگیٹر فریم ورک (Account Aggregator Framework) میں لایا ہے

      سھامتی نے ایک ٹوئٹ میں کہا کہ بڑے سرکاری اور نجی بینکوں کے 1.1 بلین اکاؤنٹس اب ہندوستان کے اکاؤنٹ ایگریگیٹر پر لائیو ہیں۔ دنیا کے سب سے بڑے اوپن بینکنگ ( Open Banking) ایکو سسٹم کے لیے یہ ایک اہم لمحہ! ہے۔ یہ ہندوستان کی معاشی صورت حال کو مزید بہتر بنانے میں مددگار ثابت ہوگا۔

      جولائی کے شروع میں وزیر خزانہ نرملا سیتا رمن نے بڑے پبلک سیکٹر بینک اور علاقائی دیہی بینکوں کے سربراہوں کے ساتھ میٹنگ کی تھی۔ علاقائی قرض دہندگان کے آپریشنل اور گورننس اصلاحات کا جائزہ لینے کے لیے میٹنگ کے دوران وزیر خزانہ نے پبلک سیکٹر کے بینکوں کو ہدایت دی تھی کہ وہ جولائی کے آخر تک اکاؤنٹ ایگریگیٹر پلیٹ فارم پر آ جائیں۔

      اکاؤنٹ ایگریگیٹر فریم ورک کیا ہے؟

      یہ بینکوں، پنشن فنڈز، انشورنس کمپنیوں اور اثاثہ جات کی انتظامی کمپنیوں جیسے مالیاتی اداروں کے درمیان ڈیٹا شیئرنگ کا ایک فریم ورک ہے۔ اس کے تحت اکاؤنٹ ایگریگیٹرز (AAs) اداروں کے درمیان ڈیٹا کے آسان اور محفوظ تبادلے کے لیے ٹیکنالوجی کا استعمال کرتے ہیں۔ اکاؤنٹ ایگریگیٹرز کے ساتھ آپ اپنی ذاتی یا کاروباری ضروریات کے لیے مالیاتی خدمات کی ایک وسیع صف تک رسائی کے لیے اپنے مالیاتی ڈیٹا کا استعمال کر سکتے ہیں۔

      یہ بھی پڑھیں: WhatsAppنے22لاکھ سے زیادہ اکاؤنٹس پر لگائی پابندی، جانیے کیا ہے وجہ

      فریم ورک کے تحت مالیاتی معلومات فراہم کرنے والوں (FIPs) اور مالیاتی معلومات استعمال کرنے والوں (FIUs) کے درمیان ڈیٹا کا اشتراک کیا جائے گا۔ ایف آئی پی وہ ادارے ہیں جو صارفین سے ڈیٹا اکٹھا کریں گے اور ایف آئی یو وہ ادارے ہیں جو اسے استعمال کریں گے۔ ایف آئی پی اور ایف آئی یو بھی ایک ہی ادارے ہو سکتے ہیں۔ مثال کے طور پر اگر آپ نے اسٹیٹ بینک آف انڈیا میں اکاؤنٹ کھولا ہے، تو آپ کا ڈیٹا جیسا کہ لین دین، کریڈٹ ڈسپلن ایس بی آئی جمع کرے گا۔ اس طرح یہ ایف آئی پی کے طور پر کام کر رہا ہے۔ تاہم اگر آپ ایس بی آئی سے قرض حاصل کرتے ہیں، تو یہ آپ کی ساکھ وغیرہ جاننے کے لیے ڈیٹا کا استعمال کرے گا۔ اس طرح یہ ایف آئی یو کے طور پر کام کر رہا ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      امیت شاہ نے کہا’احتیاطی خوراک‘کا کام پورا ہونے کے بعد بنیں گے شہریت قوانین کے Rules

       

      ریزرو بینک آف انڈیا (RBI) مالیاتی معلومات فراہم کرنے والوں (FIPs) اور مالی معلومات کے صارفین (FIUs) کے درمیان ڈیٹا کے بہاؤ کو فعال کرنے کے لیے اکاؤنٹ ایگریگیٹر کو لائسنس فراہم کرے گا۔ جن کمپنیوں کو پہلے ہی لائسنس مل چکا ہے ان میں یہ کمپنیاں شامل ہیں:

      NESL Asset Data,

      Perfios Account Aggregation Services,

      Finsec AA Solutions,

      CAMFinServ,

      Finvu and Yodlee Finsoft
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: