உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    KYC: ایئرٹیل ایگزیکٹو ہونے کا جھوٹا دعوی کرکے ایئرٹیل صارف کو دھوکہ، ایئرٹیل نے کیا تمام صارفین کو خبردار

    ایئرٹیل ایگزیکٹو ہونے کا دعویٰ کرنے والے دھوکہ باز کے ذریعے گاہک کو دھوکہ دینے کے بعد ایئرٹیل نے KYC دھوکہ دہی کے بارے میں خبردار کیا ہے۔

    ایئرٹیل ایگزیکٹو ہونے کا دعویٰ کرنے والے دھوکہ باز کے ذریعے گاہک کو دھوکہ دینے کے بعد ایئرٹیل نے KYC دھوکہ دہی کے بارے میں خبردار کیا ہے۔

    اگرچہ ایرٹیل اور دیگر ٹیلی کام کمپنیاں پہلے ہی صارفین کو اس طرح کے دھوکہ دہی کے بارے میں خبردار کر چکی ہیں، اس کے باوجود بھی کچھ صارفین ایسے دھوکے کا شکار ہو جاتے ہیں۔

    • Share this:
      ایئرٹیل Airtel نے اپنے صارفین کو کے وائی سی KYC اور او ٹی پی OTP فراڈ کے بارے میں دوبارہ خبردار کیا ہے جس میں دھوکہ دہی کرنے والے خود کو ایگزیکٹو ظاہر کرتے ہیں اور اپنے بینک اکاؤنٹس تک رسائی حاصل کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔ ایرٹیل نے نوٹ کیا کہ حال ہی میں ایک سائبر فراڈ کرنے والے نے ایرٹیل ایگزیکٹیو کے طور پر اپنے آپ کو پیش کیا اور کے وائی سی فارم کو اپ ڈیٹ کرنے کے بہانے ایک ایرٹیل کسٹمر کو فون کیا۔ اس شخص نے اسے دھوکہ دیتے ہوئے بینک کی تفصیلات ظاہر کرنے کے لیے کہا اور اس کے بعد اس نے بینک اکاؤنٹ سے بڑی رقم منتقل کر دی۔ اگرچہ ایرٹیل اور دیگر ٹیلی کام کمپنیاں پہلے ہی صارفین کو اس طرح کے دھوکہ دہی کے بارے میں خبردار کر چکی ہیں، اس کے باوجود بھی کچھ صارفین ایسے دھوکے کا شکار ہو جاتے ہیں۔

      ایرٹیل کے سی ای او گوپال وٹل Gopal Vittal نے اپنے صارفین کو ایک آؤٹ ریچ ای میل میں کہا کہ ’’صارفین کسی بینک یا مالیاتی ادارے سے ہونے کا دعویٰ کرنے والے دھوکہ باز سے کالز یا پیغامات حاصل کرسکتے ہیں اور موجودہ بینک اکاؤنٹ کو غیر مسدود یا تجدید کرنے کے لیے اکاؤنٹ کی تفصیلات یا OTP مانگ سکتے ہیں۔ اس کے بعد تفصیلات کو صارف کے بینک اکاؤنٹ سے رقم نکالنے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔ اس لیے میں آپ سے گزارش کرتا ہوں کہ ایسے کسی بھی دھوکہ کا شکار نہ ہوں، احتیاط سے رہیں اور فون پر کسٹمر آئی ڈی، MPIN اور OTP وغیرہ جیسی مالی یا ذاتی معلومات کو شیئر نہ کریں۔

      ایرٹیل نے پہلے اپنے صارفین کو خبردار کرتے ہوئے ایک فراڈ الرٹ میسج بھیجا
      ایرٹیل نے پہلے اپنے صارفین کو خبردار کرتے ہوئے ایک فراڈ الرٹ میسج بھیجا


      وٹل نے صارفین پر زور دیا کہ وہ سائبر فراڈ کرنے والوں کی طرف سے کی جانے والی کالوں کے بارے میں ہوشیار رہیں جو ایئرٹیل کے ایگزیکٹوز کا روپ دھار رہے ہیں۔ انہوں نے جعلی یو پی آئی ہینڈلز یا ویب سائٹس اور جعلی او ٹی پی جیسے دھوکہ دہی کی عام مثالوں کی بھی وضاحت کی ہے اور احتیاطی تدابیر کو درج کیا ہے۔ انھوں نے کہا کہ ہر صارف کو دھوکہ دہی کرنے والوں سے اپنے آپ کو محفوظ رہنا چاہیے۔

       

      انہوں نے کہا کہ اگر کوئی صارف ان میں سے کسی ایک کو ڈاؤن لوڈ کرتا ہے، تو اس سے کہا جائے گا کہ وہ اپنے تمام بینک کی تفصیلات کے ساتھ ساتھ اس کا MPIN بھی درج کرے اور اس طرح اس دھوکہ باز کو آپ کے بینک کی تفصیلات تک مکمل رسائی حاصل ہو جائے گی۔ براہ کرم ایسی مشکوک ویب سائٹس اور ایپس سے گریز کریں اور ای میل کے ذریعے یا ای میل میں کسی بھی مشکوک لنک پر کلک کے ذریعے کسی بھی خفیہ معلومات کو شیئر کرنے سے گریز کریں، چاہے درخواست انکم ٹیکس ڈیپارٹمنٹ، ویزا، یا ماسٹر کارڈ وغیرہ جیسے حکام کی طرف سے ہی کیوں نہ ہو۔

      ٹیلی کام صارفین کو اکثر پیغامات موصول ہوتے ہیں جس میں KYC کی توثیق کا مطالبہ کیا جاتا ہے جس میں یہ کہا جاتا ہے کہ صارفین 24 گھنٹوں میں اپنے نمبر تک رسائی سے محروم ہو جائیں گے۔ یہ پیغامات ایک نمبر بھی بھیجتے ہیں کہ یہ کسٹمر کیئر کا ہے اور صارفین انہیں کال کریں۔ صارفین اسکام کے پیغامات کو آسانی سے دیکھ سکتے ہیں کیونکہ ان میں املا کی غلطیاں اور گرامر کی غلطیاں ہوں گی، یہاں تک کہ کمپنی کا نام بھی درست نہیں لکھا جائے گا۔

      ایرٹیل نے پہلے اپنے صارفین کو خبردار کرتے ہوئے ایک فراڈ الرٹ میسج بھیجا، جس میں کہا گیا کہ ’’ایئرٹیل کبھی بھی آپ سے اپنے ای کے وائی سی کی تفصیلات/ آدھار نمبر شیئر کرنے، کوئی ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے، اپنے ایرٹیل نمبر کی تصدیق کے لیے کسی بھی موبائل نمبر سے کال کرنے یا آپ کی سم کی میعاد ختم ہونے والے کسی بھی ایس ایم ایس کے لیے نہیں کہتا ہے۔ براہ کرم ایسے کالز/ایس ایم ایس سے چوکنا رہیں کیونکہ ان کے نتیجے میں مالی فراڈ ہو سکتا ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: