உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    آکاش امبانی ٹائم کے 100 ابھرتے ہوئے لیڈروں کی فہرست میں شامل، جانیے مکمل تفصیلات

    آکاش امبانی

    آکاش امبانی

    تیس سالہ جونیئر امبانی کو جون میں ترقی دے کر ہندوستان کی سب سے بڑی ٹیلی کام کمپنی جیو کا چیئرمین بنا دیا گیا تھا، جس کے 426 ملین سے زیادہ صارفین ہیں، اس سے قبل صرف 22 سال کی عمر میں انہیں بورڈ کی نشست دی گئی۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi | Mumbai | Jammu | Hyderabad | Karnataka
    • Share this:
      ارب پتی مکیش امبانی کے بیٹے اور ہندوستان کی سب سے بڑی ٹیلی کام فرم جیو کے سربراہ آکاش امبانی (Akash Ambani) کا نام ٹائم میگزین کے 100 نیکسٹ لِسٹ میں دنیا کے ابھرتے ہوئے بزنس لیڈروں میں شامل کیا گیا ہے۔ فہرست میں وہ واحد ہندوستانی ہیں۔ تاہم ایک اور ہندوستانی نژاد امریکی کاروباری رہنما امرپالی گان بھی اس فہرست میں شامل ہیں۔

      ٹائم نے ان کے بارے میں کہا کہ ہندوستانی صنعت کار شاہی خاندان کے خاندان آکاش امبانی سے ہمیشہ کاروبار میں ترقی کی توقع کی جاتی تھی۔ وہ سخت محنت کر رہے ہیں۔ 30 سالہ جونیئر امبانی کو جون میں ترقی دے کر ہندوستان کی سب سے بڑی ٹیلی کام کمپنی جیو کا چیئرمین بنا دیا گیا تھا، جس کے 426 ملین سے زیادہ صارفین ہیں، اس سے قبل صرف 22 سال کی عمر میں انہیں بورڈ کی نشست دی گئی

      ٹائم نے کہا کہ اس فہرست میں 100 ابھرتے ہوئے رہنماؤں کو نمایاں کیا گیا ہے جو کاروبار، تفریح، کھیل، سیاست، صحت، سائنس اور سرگرمی کے مستقبل کو تشکیل دے رہے ہیں۔ اس فہرست میں امریکی گلوکارہ SZA، اداکارہ سڈنی سوینی، باسکٹ بال کھلاڑی جا مورانٹ، ہسپانوی ٹینس کھلاڑی کارلوس الکاراز، اداکار اور ٹیلی ویژن کی شخصیت کیکے پامر اور ماحولیات کی کارکن فرویزا فرحان کی پسند شامل ہیں۔

      یہ بھی پڑھیں:

      کرناٹک میں لاجسٹک پارک کی تعمیر کے لئے 37 ملین ڈالر کی ہوگی سرمایہ کاری، جانیے تفصیل



      امرپالی گان کو مواد تخلیق کرنے والوں کی ایک سائٹ اونلی فائنس کی سی ای او کے طور پر مقرر کیا گیا، جو بنیادی طور پر فحش مواد تیار کرنے والے جنسی ملازمین کے ذریعہ استعمال کیا جاتا ہے، جس میں وہ ستمبر 2020 میں چیف مارکیٹنگ اور کمیونیکیشن آفیسر کے طور پر شامل ہوئی تھیں۔ ٹائم نے کہا کہ ان کی قیادت میں اونلی فینس نے ایک حفاظتی اور شفافیت پر مبنی کام شروع کیا ہے اور پلیٹ فارم کی مقبولیت مسلسل بڑھ رہی ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: