اپنا ضلع منتخب کریں۔

     ڈیجیٹل روپئے کے آغاز سمیت آج سے ہوں  گی یہ اہم تبدیلیاں، جانیں آپ پر کیا پڑے گا اثر؟

    سرکار نے دیا دیوالی کا بڑا تحفہ، اسمال سیونگ اسکیم پر شرح سود میں اضافہ ۔ فائل فوٹو

    سرکار نے دیا دیوالی کا بڑا تحفہ، اسمال سیونگ اسکیم پر شرح سود میں اضافہ ۔ فائل فوٹو

    آئیے جانتے ہیں کہ یکم دسمبر سے کون سی اہم تبدیلیاں ہونے والی ہیں اور ان سے ہماری زندگیاں کتنی متاثر ہوگی۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi, India
    • Share this:
      دسمبر کا مہینہ شروع ہو گیا ہے۔ ہم جانتے ہیں کہ ہر مہینہ اپنے ساتھ کچھ نئی تبدیلیاں لاتا ہے۔ ایسے میں آج سے یعنی یکم دسمبر سے کچھ اہم تبدیلیاں ہونے والی ہیں۔ یہ تبدیلیاں ہماری روزمرہ کی زندگی پر اثر ڈالیں گی، اس لیے ان کے بارے میں جاننا ضروری ہے۔

      آئیے جانتے ہیں کہ یکم دسمبر سے کون سی اہم تبدیلیاں ہونے والی ہیں اور ان سے ہماری زندگیاں کتنی متاثر ہوگی۔
      پٹرول-ڈیزل کی قیمتیں مستحکم رہیں گی، نہیں کم ہوئیں قیمتیں ۔
      عالمی منڈی میں خام تیل کی قیمتوں میں نرمی کے باوجود ملک میں پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کوئی خاص تبدیلی نہیں ہوئی۔ عالمی منڈی میں خام تیل کی قیمتیں 10 ماہ کی کم ترین سطح پر ہیں تاہم قومی سطح پر پٹرول اور ڈیزل کی قیمتیں مستحکم ہیں۔ یکم دسمبر کو سرکاری تیل کمپنیوں کی جانب سے جاری کردہ قیمتوں کے مطابق پٹرول اور ڈیزل کے دام میں کوئی تبدیلی نہیں کی گئی ہے۔ 21 مئی سے قومی مارکیٹ میں پٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں کوئی تبدیلی نہیں ہوئی ہے۔
      ملک کی راجدھانی دہلی میں آج (جمعرات) بھی ایک لیٹر پٹرول کی قیمت 96.72 روپے اور ایک لیٹر ڈیزل کی قیمت 89.62 روپے پر برقرار ہے۔ اس کے ساتھ ہی ملک کی مالیاتی راجدھانی ممبئی میں پٹرول 106.31 روپے فی لیٹر جبکہ ڈیزل 94.27 روپے فی لیٹر فروخت ہو رہا ہے۔ سی این جی، پی این جی اور ایل پی جی کی قیمتوں میں کمی کی قیاس آرائیاں کی جارہی تھیں لیکن فی الحال ان میں کوئی تبدیلی نہیں ہوئی ہے۔ ممکن ہے آنے والے دنوں میں ان کی قیمتوں میں راحت آجائے۔

      فحش فلمیں دیکھنے کی تھی لت، 5 کلاس میٹ نے دوست لڑکی کا کیا ریپ، ویڈیو بھی بنایا اور۔۔۔۔

      واٹس ایپ ڈیسک ٹاپ یوزرس کے لیے آیا یہ شاندار فیچر، جانیے اس بارے میں مکمل تفصیل

      RBI خوردہ ڈیجیٹل روپیہ کی کرے گا شروعات
      ریزرو بینک آف انڈیا 1 دسمبر 2022 سے ریٹیل ڈیجیٹل روپے کا پہلا پائلٹ پروجیکٹ شروع کرے گا۔ فی الحال یہ ڈیجیٹل کرنسی یکم دسمبر کو ممبئی، دہلی، بنگلور اور بھونیشور میں شروع کی جائے گی۔ اس کے بعد اسے نو دیگر شہروں میں بھی خریدا اور فروخت کیا جا سکتا ہے۔ RBI نے پہلے 1 نومبر 2022 کو ہول سیل سیگمنٹ میں ڈیجیٹل روپے کا ایک پائلٹ پروجیکٹ شروع کیا تھا۔ ریٹیل ڈیجیٹل روپے کے پہلے پائلٹ پروجیکٹ میں چار سرکاری اور نجی شعبے کے بینک ایس بی آئی، آئی سی آئی سی آئی، یس بینک اور آئی ڈی ایف سی فرسٹ شامل ہوں گے۔ سنٹرل بینک ڈیجیٹل کرنسی (سی بی ڈی سی) کو ڈیجیٹل ٹوکن کی شکل میں جاری کیا جائے گا اور یہ ایک قانونی ٹینڈر ہوگا یعنی اسے قانونی کرنسی کے طور پر سمجھا جائے گا۔ ای روپیہ اسی قیمت پر جاری کیا جائے گا جس پر اس وقت کرنسی نوٹ اور سکے جاری کیے جاتے ہیں۔

      اے ٹی ایم سے کیش نکالنے کا طریقہ بدل جائے گا۔
      دسمبر کے مہینے سے اے ٹی ایم سے رقم نکالنے کا طریقہ بھی بدل جائے گا۔ فی الحال ہم اے ٹی ایم سے کیش نکالنے کے لیے جو طریقہ استعمال کرتے ہیں، اس میں کئی بار دھوکہ دہی کا امکان ہوتا ہے۔ معلومات کے مطابق پنجاب نیشنل بینک دسمبر کے مہینے میں اے ٹی ایم سے کیش نکالنے کے طریقہ کار میں تبدیلیاں کر رہا ہے۔ آج سے جیسے ہی آپ اے ٹی ایم میں کارڈ ڈالیں گے، آپ کے موبائل نمبر پر ایک OTP تیار ہو جائے گا۔ اے ٹی ایم اسکرین پر فراہم کردہ کالم میں یہ OTP داخل کرنے کے بعد ہی نقد رقم کی باہر نکلے گی۔

      بینکوں میں 13 دن نہیں ہوگا کام 

      دسمبر کے مہینے میں بینک کل 13 دن بند رہیں گے۔ ان تعطیلات میں دوسرا اور چوتھا ہفتہ اور اتوار شامل ہیں۔ یہ مہینہ کرسمس، سال کا آخری دن (31 دسمبر) اور گرو گوبند سنگھ جی کا یوم پیدائش بھی ہے۔ اس موقع پر بینکوں میں بھی چھٹی ہوگی۔ کئی ریاستوں میں مقامی تہواروں کی بنیاد پر چھٹیاں بھی ہوتی ہیں۔ تعطیلات کے موقع پر بینک بند رہیں گے۔ تاہم اس دوران صارفین آن لائن بینکنگ کے ذریعے اپنا کام کر سکیں گے۔

      کون ہے جینتی چوہان جنہوں نے 7 ہزار کروڑ کا بزنس چلانے سے کردیا انکار، جانئے یہاں

      جرمانے  کے ساتھ بھرے  سکیں گے مالی سال 2021-22 کے لیے انکم ٹیکس ریٹرن
      اگر آپ نے ابھی تک 2021-22 کا انکم ٹیکس ریٹرن فائل نہیں کیا ہے، تو آپ اسے جرمانے کے ساتھ 31 دسمبر تک فائل کر سکتے ہیں۔ اگر آپ کی کل آمدنی 5 لاکھ روپے سے کم ہے تو آپ کو 1000 روپے جرمانہ ادا کرنا پڑے گا۔ جرمانے کی رقم بڑھ کر 5000 روپے ہو جائے گی اگر کل آمدنی 5 لاکھ روپے سے زیادہ ہے۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: