ہوم » نیوز » معیشت

پٹرول۔ڈیزل بھروانے کے بعد اب نہیں چکانے ہوں گے پیسے! جانئے خاص تکنیک کے بارے میں

ایک اسٹارٹ اپ نے RFID تکنیک کو شروع کیا ہے۔ اس میں پٹرول پمپ (Petrol Pump) پر پہنچنے سے پہلے ہی اٹینڈنٹ کو کئی جانکاریاں مل جائیں گی۔ اسی کےبنیاد پر آپ کی گاڑی میں فیلو بھرا جائے گا اور ادائیگی بھی اپنے آپ ہو جائے گا۔

  • Share this:
پٹرول۔ڈیزل بھروانے کے بعد اب نہیں چکانے ہوں گے پیسے! جانئے خاص تکنیک کے بارے میں
ایک اسٹارٹ اپ نے RFID تکنیک کو شروع کیا ہے۔ اس میں پٹرول پمپ (Petrol Pump) پر پہنچنے سے پہلے ہی اٹینڈنٹ کو کئی جانکاریاں مل جائیں گی۔ اسی کےبنیاد پر آپ کی گاڑی میں فیلو بھرا جائے گا اور ادائیگی بھی اپنے آپ ہو جائے گا۔

نئی دلی: مان لیجئے اگلی مرتبہ جب اپنی گاڑی میں پٹرول بھروانے کیلئے پٹرول پمپ (Petrol Pump) پر جائیں تو یہ کام ایک ریڈیو فریکوئنسی تکنیک (RFID Technology) کی مدد سے ہی پورا ہوجائے۔ اٹینڈنٹ اس کی بنیاد پر پٹرول یا ڈیزل بھرے اور پھر آپ کو ادائیگی کیلئے انتظار نہیں کرنا پڑے گا۔ آپ پٹرول بھروانے کے بعد آسانی سے وہاں سے نکل سکیں۔

ممبئی، نوی ممبئی، تھانے اور پونے کے کئی ایچ پی سی ایل HPCL پٹرول پمپ پر ممکن بھی ہوچکا ہے۔ اس سہولیت کو ممبئی کی ایک اسٹارٹ اپ AGS ٹرانجیکٹ ٹکنالوجی لمیٹڈ نے شروع کیا ہے۔ یہ اپنے آپ میں ہندستان کا پہلا موبائل فلیولنگ سلیوشنس (Mobile Fueling Solutions) ہے جس میں پترول یا ڈیزل بھروانے کیلئے لمبی قطاروں سے نجات مل سکتا ہے۔


ہر فاسٹ لین یوزرس کو ایک RFID  اسٹیکر فراہم کرایا جائے گا جو کہ ان کے فاسٹ لین موبائل ایپ (Fastlane Mobile App)سے لنک ہوگا۔ اس ایپ کی مدد سے یوزر پہلے سے ہی یہ طے کرپاتا ہے کہ اسے اپنی گاڑی میں کتنا ایندھن بھروانا ہے۔ پٹرول پمپ پر پہنچنے کے بعد کار کے ونڈ شلڈ پر لگے فاسٹ لین RFID اسٹیکر کی مدد سے گاڑی کے بارے میں جانکاری، فیلو ٹائپ کے ساتھ۔ساتھ بلنگ اور پیمنٹ (ادائیگی) سے متعلق جانکاری پٹرول پمپ اٹینڈنٹ کو مل جائے گی۔ گاڑی میں ایندھن بھرے جانے کے بعد آپ کے موبائل پر ایک نوٹیفیکیشن آئے گا جس کے بعد آپ آسانی سے ادائگی کیلئے بغیر رکے ہی نکل سکتے ہیں۔

ایک اسٹارٹ اپ نے RFID تکنیک کو شروع کیا ہے۔ اس میں پٹرول پمپ (Petrol Pump) پر پہنچنے سے پہلے ہی اٹینڈنٹ کو کئی جانکاریاں مل جائیں گی۔ اسی کےبنیاد پر آپ کی گاڑی میں فیلو بھرا جائے گا اور ادائیگی بھی اپنے آپ ہو جائے گا۔

First published: Jan 25, 2020 03:01 PM IST