ہوم » نیوز » معیشت

بینک اور Amazon-Flipkart کے درمیان سانٹھ گانٹھ سے ملک کے تاجروں کو ہورہا بڑا نقصان ، وزیر خزانہ تک پہنچا معاملہ

بینک کمپٹیشن ایکٹ 2002 کی دفعہ 3 ( 1) کی براہ راست خلاف ورزی کرکے ملک میں چھوٹے کاروباریوں کیلئے بڑے پیمانے پر روکاوٹ پیدا کر رہے ہیں ۔ بھارتیہ اسٹیٹ بینک ، آئی سی آئی سی آئی بینک ۔ ایچ ڈی ایف سی بینک ، ایکسس بینک ، سٹی بینک ، کوٹک مہندرا بینک ، بینک آف بڑدہ ، ایچ ایس بی سی بینک ، آر بی ایل بینک ہندوستان کے کاروباریوں اور شہریوں کے درمیان امتیازی سلوک کررہے ہیں ۔

  • Share this:
بینک اور Amazon-Flipkart کے درمیان سانٹھ گانٹھ سے ملک کے تاجروں کو ہورہا بڑا نقصان ، وزیر خزانہ تک پہنچا معاملہ
بینک اور Amazon-Flipkart کے درمیان سانٹھ گانٹھ سے ملک کے تاجروں کو ہورہا بڑا نقصان ، وزیر خزانہ تک پہنچا معاملہ

ملک کے کئی بڑے بینکوں پر سنگین الزامات لگے ہیں اور یہ الزامات کنفیڈریشن آف انڈیا ٹریڈرس ( سی اے آئی ٹی) نے لگائے ہیں ۔ بینکوں پر الزام ہے کہ وہ ایمیزون ، فلپ کارٹ سمیت دیگر ای کامرس کمپنیوں سے خریداری کرنے پر 10 فیصد تک کیش بیک دے رہے ہیں ۔ بینکوں پر ریزرو بینک آف انڈیا کے فیئر پریکٹس کوڈ کی خلاف ورزی کا بھی الزام لگا ہے ۔ یہ ملک کے کاروباریوں کے خلاف ایک سازش ہے ۔ کیٹ نے یہ بھی الزام لگایا ہے کہ بینک اور ای کامرس کمپنیوں کا ناپاک گٹھ جوڑ کمپٹیشن ایکٹ 2002 کی بھی براہ راست طور پر خلاف ورزی کرتا ہے ۔ کیٹ نے اس کو لے کر وزیر خزانہ سے شکایت کی ہے ۔ ساتھ ہی پورے معاملہ کی جانچ کرائی جانے کی بھی مانگ کی ہے ۔


کیٹ نے وزیر خزانہ لکھا خط


کیٹ کے نیشنل جنرل سکریٹری پروین کھنڈیلوال نے الزام لگاتے ہوئے مرکزی وزیر خزانہ نرملا سیتارمن کو بھیجے اپنے خط میں کہا ہے کہ موجودہ حالات کے پیش نظر ہم آپ کے دروازے پر دستک دینے پر مجبور ہوگئے ہیں ۔ کیونکہ ملک کے کئی بینک اپنی من مرضی سے ای کامرس کمپنیوں کے ساتھ مل کر ملک کے کاروباریوں کو مقابلہ آرائی سے باہر رکھنے کی سازش میں شامل ہیں ۔ وزیر خزانہ کے طور پر آپ اس معاملہ کا فورا نوٹس لیں اور بینکوں کی اس منمانی کو فوری طور پر روکیں اور اس سنگین معاملہ کی جانچ کرائی جائے ۔ یہ بھی پتہ لگایا جائے کہ آخر کار بینک کس بنیاد پر 10 فیصد کا کیش بیک یا چھوٹ ای کامرس پورٹل سے خرید پر دے رہے ہیں ۔ کیٹ نے اس سلسلہ میں ایک خط کامرس کے مرکزی وزیر پیوش گوئل کو بھی بھیج کر اس معاملہ پر دخل دینے کا مطالبہ کیا ہے ۔


ملک کے ان بڑے بینکوں پر لگا ہے یہ سنگین الزام

پروین کھنڈیلوال نے مرکزی وزیر خزانہ اور کامرس کے وزیر سے شکایت کرتے ہوئے کہا ہے کہ بینک کمپٹیشن ایکٹ 2002 کی دفعہ 3 ( 1) کی براہ راست خلاف ورزی کرکے ملک میں چھوٹے کاروباریوں کیلئے بڑے پیمانے پر روکاوٹ پیدا کر رہے ہیں ۔ بھارتیہ اسٹیٹ بینک ، آئی سی آئی سی آئی بینک ۔ ایچ ڈی ایف سی بینک ، ایکسس بینک ، سٹی بینک ، کوٹک مہندرا بینک ، بینک آف بڑدہ ، ایچ ایس بی سی بینک ، آر بی ایل بینک ہندوستان کے کاروباریوں اور شہریوں کے درمیان امتیازی سلوک کررہے ہیں ۔

یہ بینک ایمیزون اور فلپ کارٹ سمیت دیگر ای کامرس پورٹل سے مال خریدنے پر اپنے بینک کے کارڈ سے اس کی ادائیگی کرنے پر 10 فیصد کا کیش بیک اور دیگر مراعات دے رہے ہیں ۔ حیرانی کی بات یہ ہے کہ اگر اسی بینک کے کارڈ کا استعمال کرکے وہی پروڈکٹ آف لائن بازار سے خریدا جاتا ہے تو متعلقہ بینک کوئی کیش بیک یا مراعات نہیں دے رہا ہے ۔

آر بی آئی کی طرف سے فیئر کوڈ آف کنڈکٹ بنایا گیا ہے ، جس میں کہا گیا ہے کہ ہر ایک بینک کے پاس کریڈٹ کارڈ آپریشن کیلئے ایک اچھی طرح سے ڈاکیومنٹیڈ پالیسی اور فیئر کوڈ آف کنڈکٹ ہونا چاہئے ۔

بینکنگ کوڈس اینڈ اسٹینڈرڈس آف انڈیا نے جولائی 2006 میں صارفین کیلئے بینک کے کمنٹمنٹس کا کوڈ جاری کیا تھا ، جس کو دسمبر 2006 میں ایک گائیڈلائن نوٹ کے طور پر زیادہ تر بینکوں نے اپنی منظوری کے ساتھ اپنایا تھا ۔ کیٹ نے مطالبہ کیا ہے کہ اس پورے معاملہ کی سی بی آئی جانچ کرے ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Nov 30, 2020 01:19 PM IST