اپنا ضلع منتخب کریں۔

    مرکز کا بڑا فیصلہ، خام تیل پر ونڈ فال ٹیکس میں کمی؛ ڈیزل اور ایوی ایشن فیول کی برآمد میں اضافہ

    مرکز کا بڑا فیصلہ، خام تیل پر ونڈ فال ٹیکس میں کمی؛ ڈیزل اور ایوی ایشن فیول کی برآمد میں اضافہ

    مرکز کا بڑا فیصلہ، خام تیل پر ونڈ فال ٹیکس میں کمی؛ ڈیزل اور ایوی ایشن فیول کی برآمد میں اضافہ

    مرکزی حکومت نے یکم جولائی 2022 کو پٹرولیم مصنوعات پر ونڈ فال منافع ٹیکس لگانے کا اعلان کیا تھا۔ اس دوران مرکزی حوکمت نے پٹرول کے ساتھ ڈیزل اور اے ٹی ایف پر بھی ٹیکس لگایا تھا۔ حالانکہ، مرکزی حکومت نے بعد میں اس کو لے کر جائزہ لیا تھا۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi, India
    • Share this:
      مرکزی حکومت نےمنگل کو ڈیزل پر برآمداتی ٹیکس بڑھا دیا ہے۔ وزارت مالیات کے مطابق، مرکزی حکومت نے ڈیزل پر برآمداتی ڈیوٹی 12 روپے فی لیٹر سے بڑھا کر 13 روپے فی لیٹر کردیا ہے۔

      وزارت مالیات نے دی جانکاری
      وزارت مالیات کے مطابق، حکومت نے 2 نومبر سے ونڈفال ٹیکس میں ترمیم کی ہے۔ اس کے ساتھ ہی خام پٹرولیم پر ایکسپورٹ ٹیکس 11000 روپے فی ٹن سے گھٹاکر 9500 روپے فی ٹن کردیا گیا ہے۔ اس کے علاوہ اے ٹی ایف پر برآمدی ڈیوٹی 3.50 روپے فی لیٹر سے بڑھا کر 5 روپے فی لیٹر کیا گیا ہے۔

      2 نومبر 2022 سے لاگو ہوگی کٹوتی
      مرکزی حکومت کی جانب سے جاری نوٹیفکیشن کے مطابق، یہ کٹوتی دو نومبر 2022 سے لاگو ہوگی۔ اس سے پہلے مرکزی حکومت نے ستمبر مہینے کے دوران بین الاقوامی بازار میں خام تیل کی قیمت میں کمی آنے کے بعد گھریلو خام تیل کے پیداوار پر ونڈفال ٹیکس 13300 سے گھٹا کر 10500 روپے فی ٹن کردیا تھا۔

      یہ بھی پڑھیں:
      ڈیجیٹل روپیہ کے ضمن میں RBI کی پہل، آج ہول سیل سیگمنٹ میں شروع کرے گا پہلاپائلٹ پروگرام

      نیتی آیوگ کے نائب صدر سمن بیری نے ملک کی جی ڈی پی شرح ترقی کے اندازوں پر کیااظہاراطمینان

      یہ بھی پڑھیں:
      میٹا کمپنی کی تیسری سہ ماہی کی آمدنی میں گراوٹ ہوئی درج،سرمایہ کاروں کے لیے خطرے کی گھنٹی

      ہندوستان میں 2023 تنخواہوں میں ہوگاسب سے زیادہ اضافہ، پاکستان اورسری لنکاکانمبرہوگاآخری

      مرکزی حکومت نے جولائی 2022 میں کیا تھا اعلان
      واضح رہے کہ مرکزی حکومت نے یکم جولائی 2022 کو پٹرولیم مصنوعات پر ونڈ فال منافع ٹیکس لگانے کا اعلان کیا تھا۔ اس دوران مرکزی حوکمت نے پٹرول کے ساتھ ڈیزل اور اے ٹی ایف پر بھی ٹیکس لگایا تھا۔ حالانکہ، مرکزی حکومت نے بعد میں اس کو لے کر جائزہ لیا تھا۔ جس کے بعد اسے پٹرول کو باہر کردیا گیا تھا۔ اس سے پہلے 31 اگست کو جائزہ میٹنگ میں گھریلو خام تیل پر ونڈفال ٹیکس 13000 سے بڑھا کر 13300 کردیا گیا تھا۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: