உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Russiaسے روپیے میں تجارت کرنے کو فروغ دینے پر غور،RBI کی منظوری کے بعد حکومت کا اگلا قدم

    وزیراعظم نریندر مودی اور روس کے صدر ولادیمیر پوتن۔ (فائل فوٹو)

    وزیراعظم نریندر مودی اور روس کے صدر ولادیمیر پوتن۔ (فائل فوٹو)

    روس نے یہ بھی کہا ہے کہ ہندوستان کا پیمنٹ سسٹم روپے اور روس کا پیمنٹ سسٹم میر بھی اس طرح کی مفاہمت کی کوشش کر رہے ہیں۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi | Mumbai | Bangalore [Bangalore] | Chennai [Madras] | Dhule
    • Share this:
      نئی دہلی: ہندوستان اور روس کے درمیان دوطرفہ تجارت کو زیادہ سے زیادہ ایک دوسرے کی کرنسی میں کرنے کو لے کر دونوں ملکوں کی متعلقہ ایجنسیوں کے درمیان بات چیت جاری ہے۔ اسی کے تحت اب مرکزی حکومت ان کاروباریوں کو راغب کرنے پر غور کررہی ہے، جو روس کو ہونے والے ایکسپورٹ کی ادائیگی ہندوستانی روپیے میں لیں گے۔

      کچھ دن پہلے ہی آر بی آئی نے ایک بڑا فیصلہ لیتے ہوئے گھریلو درآمد کنندگان اور برآمد کنندگان کو ہندوستانی روپے میں کاروبار کرنے کی اجازت دی تھی۔ لیکن تاجر برادری اس کے نفاذ کے بارے میں کھل کر سامنے نہیں آرہی ہے۔ ان کی ہچکچاہٹ کو دیکھ کر مرکزی حکومت اب یہ ترغیبی اسکیم لانے پر غور کر رہی ہے۔

      روپیے میں درآمدات-برآمدات کو ملی آر بی آئی کی منظوری
      ویسے ہندوستان کی اس ممکنہ اسکیم کے بارے میں امریکہ اور دیگر مغربی ممالک کی جانب سے اعتراض ظاہر کیا جاسکتا ہے لیکن روس کے لیے، جسے امریکی اور یورپی پابندیوں کا سامنا ہے، یہ ایک بہت بڑا فائدہ مند سودہ ہوگا۔ حالیہ دنوں میں روسی حکومت کی جانب سے کئی بیانات سامنے آئے ہیں کہ وہ ہندوستان کے ساتھ دو طرفہ تجارت بڑھانے کے لیے اقدامات کرنے پر غور کر رہی ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:

      26/11جیسے دہشت گردانہ حملوں کی دھمکی والے چار فون بند ہونے سے بڑھی تشویش

      یہ بھی پڑھیں:
      Ayushman Cards:آیوشمان کارڈ میں اب ریاست کی اسکیموں کے نام بھی ہوں گے شامل:وزارت صحت

      ممبرا میں اسکالر شپ فارم بھرنے کا ایم ایل اے رئیس شیخ کے ہاتھوں افتتاح

      روس نے یہ بھی کہا ہے کہ ہندوستان کا پیمنٹ سسٹم روپے اور روس کا پیمنٹ سسٹم میر بھی اس طرح کی مفاہمت کی کوشش کر رہے ہیں۔ یوکرین پر روس کے حملے کے بعد امریکا کی قیادت میں یورپی ممالک روس پر اقتصادی پابندیوں کو مزید مضبوط کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: