உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Cyber Attacks: ہندوستان کے خلاف پاکستان بن رہا ہے چین کا ہمنوا، مذموم عزائم کیلئےسائبرحملوں میں اضافہ کا خدشہ

    چین تناو پیدا کرسکتا ہے۔ (تصویر: moneycontrol)

    چین تناو پیدا کرسکتا ہے۔ (تصویر: moneycontrol)

    چینی فریق نے ٹیکنالوجی اور مواد فراہم کر کے برتری حاصل کی ہے، جبکہ پاکستان عمل درآمد کرنے والے اور اسے پھیلانے والے کے طور پر کام کر رہا ہے۔ چین کو پاکستان کی ضرورت ہے کیونکہ مرکزی دھارے کے سوشل میڈیا پلیٹ فارمز جیسے ٹویٹر اور فیس بک پر چین میں پابندی ہے اور چین کی آبادی کے بیشتر حصوں میں انگریزی اور ہندی زبانوں پر کنٹرول بہت محدود ہے۔

    • Share this:
      روسی سائبر سیکیورٹی فرم کاسپرسکی (Kaspersky) کی تازہ ترین ’’2022 میں مالیاتی تنظیموں کے لیے سائبر تھریٹس‘‘ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ ایشیا پیسفک خطے میں سائبر حملوں کے لیے ہندوستان سرفہرست پانچ اہداف میں سے ایک ہے۔ اس میں خاص طور پر اے پی ٹی (ایڈوانسڈ پرسسٹنٹ تھریٹس) سائبر حملے شامل ہیں۔ جو خلا کا فائدہ اٹھاتے ہیں۔ اس کے علاوہ دفاع اور طویل مدتی خفیہ کاری کے عناصر بھی اس میں شامل ہیں۔

      کاسپرسکی کے مطابق آنے والے برسوں میں اے پی ٹی کے حملوں میں اضافہ متوقع ہے۔ کاسپرسکی کے نتائج ہندوستان کے سائبر خطرے کے کینوس کی بڑھتی ہوئی توسیع کی عکاسی کرتے ہیں۔ یہ بنیادی طور پر پاکستان اور چین کے گھسنے والے حملوں کا غلبہ ہے۔ سائبر اسپیس (cyberspace) میں پاک چین تعاون پر شبہ کرنے کی اچھی وجہ ہے۔

      حالیہ برسوں میں بیجنگ اور اسلام آباد نے انفارمیشن ٹیکنالوجی کے شعبے میں اپنے تعاون میں مزید اضافہ کیا ہے۔ ڈیجیٹل اور سائبر تعاون ’چین پاکستان اقتصادی راہداری‘ (2030-2017) کے طویل مدتی منصوبے کے اہم عناصر ہیں۔ یہ منصوبہ آئی سی ٹی سے چلنے والی ترقی اور پاکستان میں ای کامرس کے فروغ پر زور دیتا ہے لیکن اس بے نظیر تعاون سے آگے چین پاکستان ملی بھگت ایک حقیقت بن گئی ہے جہاں پاکستان چین کے مذموم عزائم کے لیے ایک پراکسی کے طور پر ابھرا ہے۔ یہ خاص طور پر سوشل میڈیا پلیٹ فارمز پر ہندوستان مخالف پروپیگنڈے کے حوالے سے پیش پیش ہے۔

      لائن آف ایکچوئل کنٹرول (Line of Actual Control) پر ہندوستان اور چین کے درمیان جاری سرحدی تعطل کے دوران پاکستان میں قائم ٹویٹر ہینڈل چینی شہریوں کے طور پر ظاہر کرتے ہوئے ہندوستان مخالف پروپیگنڈہ کر رہے ہیں۔ ان ٹویٹر ہینڈلز نے جون 2020 میں وادی گالوان (Galwan Valley) میں ہونے والے پرتشدد تصادم کے ساتھ ساتھ ہندوستان کی فوجی تیاریوں سے متعلق گمراہ کن رپورٹس کو باقاعدگی سے پیش کیا ہے۔

      چین اور پاکستان ممکنہ طور پر ایک بین الاقوامی نیوز میڈیا آؤٹ لیٹ کے قیام کی بھی تلاش کر رہے ہیں جو ان کی پروپیگنڈے کی کوششوں کو نمایاں طور پر آگے بڑھائے گا۔ اس کے علاوہ 2018 میں دونوں نے مبینہ طور پر چین اور پاکستان کی سرحدوں پر فوجیوں کی تعیناتی کے بارے میں معلومات افشا کرنے کے لیے ہندوستانی فوجی افسران کو ہنی ٹریپ کرنے کے لیے ہاتھ ملایا تھا۔

      اسے بند کریں!

      چینی فریق نے ٹیکنالوجی اور مواد فراہم کر کے برتری حاصل کی ہے، جبکہ پاکستان عمل درآمد کرنے والے اور اسے پھیلانے والے کے طور پر کام کر رہا ہے۔ چین کو پاکستان کی ضرورت ہے کیونکہ مرکزی دھارے کے سوشل میڈیا پلیٹ فارمز جیسے ٹویٹر اور فیس بک پر چین میں پابندی ہے اور چین کی آبادی کے بیشتر حصوں میں انگریزی اور ہندی زبانوں پر کنٹرول بہت محدود ہے۔

      مزید برآں براہ راست ملوث نہ ہونے اور پاکستان کو ہندوستان مخالف سرگرمیوں کا فرنٹ اینڈ بنا کر چین تناو پیدا کرسکتا ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: