اپنا ضلع منتخب کریں۔

    زیادہ سود نہیں وصول پائیں گے ڈیجیٹل پلیٹ فارم، آر بی آئی کے ترمیمی گائیڈلائنس آج سے لاگو

    زیادہ سود نہیں وصول پائیں گے ڈیجیٹل پلیٹ فارم، آر بی آئی کے ترمیمی گائیڈلائنس آج سے لاگو

    زیادہ سود نہیں وصول پائیں گے ڈیجیٹل پلیٹ فارم، آر بی آئی کے ترمیمی گائیڈلائنس آج سے لاگو

    اینڈرومیڈا لونس کے ورکنگ چیئرمین وی سوامیناتھن نے کہا، کورونا کے بعد ڈیجیٹل قرض لینے کی شرح بڑھنے سے یہ انتظامات ضروری تھے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • New Delhi, India
    • Share this:
      ڈیجیٹل قرض دینے والے پلیٹ فارم صارفین سے اب زیادہ سود نہیں لے پائیں گے۔ نہ ہی غیر اخلاقی طریقے سے قرض وصولی کرپائیں گے۔ اس کے لیے ریزرو بینک آف انڈیا (آر بی آئی) کے ترمیم شدہ گائیڈلائنس آج جمعرات سے لاگو ہورہے ہیں۔ یہ انتظامات 2 ستمبر سے پہلے لیے گئے ڈیجیٹل قرض پر ہی لاگو ہوگی۔

      آر بی آئی نے مالیاتی اداروں کو انتظامات کرنے کے لیے 30 نومبر تک کا وقت دیا تھا۔ نئے اصولوں کے تحت، قرض کی تقسیم اور وصولی کا پورا عمل صرف قرض لینے والے کے بینک کھاتوں اور ریگولیٹڈ اداروں کے درمیان کیا جائے گا۔ لون سروس پرووائیڈرز (ایل ایس پی ایس) کا کوئی بھی پول اکاؤنٹ استعمال نہیں کیا جا سکتا۔ بینک اور این بی ایف سی قرض دینے کے عمل میں قابل ادائیگی فیس اور سرچارج براہ راست ادا کریں گے، یہ قرض لینے والے سے وصول نہیں کیا جائے گا۔

      خراب رویے کی شکایتیں
      آن لائن قرض دینے والے پلیٹ فارمس کے خلاف زیادہ سود اور قرض وصولی کے لیے صارفین کے ساتھ ناروا رویہ اختیار کرنے کی کئی شکایتیں ملنے پر آر بی آئی نے اگست میں پہلی مرتبہ گائیڈلائنس جاری کیے تھے۔ گائیڈلائنس نئے گاہکوں کے لیے بھی لاگو ہوں گے۔

      یہ بھی پڑھیں:

      ای روپے کی آج ہوگی شروعات، ہندوستان کے ڈیجیٹل سفر کا ہوگا اگلا قدم

      یہ بھی پڑھیں:

      پرنئے اور رادھیکارائے نےRRPRHکے ڈائریکٹر کے عہدے سے دیا استعفیٰ، بورڈ میں انہیں کیاگیاشامل

      ایئرانڈیا اور وستارا کا ہوگا انضمام، سنگاپور ایئرلائنس اور ٹاٹا سنس مرجر پر ہوئیں راضی

      رازداری میں ملے گی مدد
      اینڈرومیڈا لونس کے ورکنگ چیئرمین وی سوامیناتھن نے کہا، کورونا کے بعد ڈیجیٹل قرض لینے کی شرح بڑھنے سے یہ انتظامات ضروری تھے۔ نئے رولس سے صارفین اور مالی اداروں کے درمیان شراکت داری کا ڈیٹا اور نجی جانکاری راز میں رکھنے میں مدد ملے گی۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: